Tuesday - 2018 August 14
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 184631
Published : 18/12/2016 15:40

امریکہ میں بڑھتے ہی جارہے ہیں جرائم:ٹرمپ کا اعتراف

امریکہ کے نومنتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ملک بھر میں جرائم کی شرح میں غیر معمولی اضافے کا اعتراف کیا ہے۔


ولایت پورٹل:امریکہ کے نومنتخب صدر نے ملک میں جرائم کی شرح میں ہونے والے اضافے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ پچھلے پینتالیس برس کے مقابلے میں قتل کے واقعات میں غیر معمولی حد تک اضافہ ہوا ہے،ٹرمپ نے یہ بھی اعتراف کیا کہ ملک بھر میں جرائم کی شرح اس سے کہیں زیادہ ہے کہ جتنا ذرائع ابلاغ کے ذریعے بیان کی جارہی ہے،امریکہ کے نومنتخب صدر نے بدامنی کو اقتصادی ترقی کی راہ میں حائل سب سے بڑی رکاوٹ قرار دیا اور کہا کہ ملک کو بدامنی سے بچانے، دہشت گردی کے خطرات کو کم کرنے اور منشیات کی لعنت سے نجات پانے کے لیے، تارکین وطن کی آمد کا سلسلسہ بند کرنا ہو گا،امریکہ میں بدامنی اور خاص طور سے مسلح تشدد کے واقعات میں اس حد تک اضافہ ہوا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنی انتخابی مہم کے دوران اس معاملے کو اٹھا کر اپنی حریف ہلیری کلنٹن کو مات دے دی ہے،اخبار ڈیلی نیویارک کے مطابق امریکہ بھر میں دو سو ستر ملین سے تین سو ملین تک آتشیں ہتھیار موجود ہیں اور تقریبا ہر آدمی کے بدلے ایک اسلحہ موجود ہے،اس سے قبل شکاگو یونیورسٹی نے اپنی تحقیقاتی رپورٹ میں بتایا تھا کہ ملک میں رونما ہونے والے فائرنگ کے واقعات میں روزانہ اوسطا ستاسی افراد ہلاک اور ایک سو تراسی زخمی ہوجاتے ہیں،سن دو ہزار سولہ کے آغاز سے اب تک امریکہ میں فائرنگ کے پـچاس ہزار سے زیادہ واقعات پیش آچکے ہیں جن کے نتیجے میں تقریبا تیرہ ہزار لوگ ہلاک اور ستائیس ہزار زخمی ہوئے ہیں،امریکہ کی سول سوسائٹی اور انسانی حقوق کی تنظیموں کے مطالبات کے باوجود، اسلحہ لابی کے بے پناہ اثرورسوخ کی وجہ سے، اسلحے کی فروخت کو قانون کے دائرے میں لانے کی تمام کوششیں ناکام ہو چکی ہیں،اسلحہ کی آزادانہ خرید و فروخت اور نمائش یہاں تک خودکار ہتھیاروں کے خلاف عوامی احتجاج کا معاملہ امریکی کانگریس تک پہنچ گیا ہے اور مظاہرین نے کانگریس اور ریاستی قانوں سازوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اسلحہ کی فروخت کے لیے سخت قوانین وضع کریں،ماؤں کی انجمن اور سیاہ فاموں کی زندگی بھی اہم ہے،نامی تحریک سمیت مختلف سماجی اور شہری تنظیموں کے رہنماؤں نے ملک بھر میں آٹومیٹک ہتھیاروں کی کھلے عام فروخت پر پابندی لگانے کا مطالبہ کیا ہے،مبصرین کے مطابق امریکہ بھر میں اسلحے کے ذریعے تشدد کے واقعات اسلحہ ساز فیکٹریوں کے مالکان،اسلحہ لابی اور ایسے دلالوں کی سود جوئی کا نتیجہ ہیں جو عوامی نمائندوں کے بھیس میں عوام سے خیانت کر رہے ہیں اور ان کے ہاتھ تشدد کی بھینٹ چڑھنے والوں کے خون سے رنگیں ہیں۔

سحر


 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 August 14