Wed - 2018 Nov 14
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 185708
Published : 15/2/2017 19:15

کیا کسی شریعت کا منسوخ ہونا حکمت خدا کے منافی ہے؟

جو احکام منسوخ ہوتے ہیں ان میں حکمت پائی جاتی تھی لیکن ان کی حکمت محدود اور وقتی تھی اور خدا کو بھی شروع سے ہی اس حکمت کے وقتی اور محدود ہونے کا علم تھا اور خدا نے درحقیقت حکم کو بھی وقتی ہی بنایا لیکن ابلاغ و ترسیل کے موقع پر اس کے وقتی ہونے کا اعلان نہیں کیا تھا دوسری جانب ابدی ہونے کی بھی صراحت نہیں کی تھی بلکہ زمانہ کے لحاظ سے حکم کومطلق رکھا تھا اوربعد میں«ناسخ حکم»کے ذریعہ منسوخ حکم کے محدود اور وقتی ہونے کا اعلان واظہار کیا۔


ولایت پورٹل:
پیغمبر اکرم(ص) نے جب دعوائے نبوت کیا، معجزات کے ذریعہ اپنی نبوت کوثابت کیا توکچھ یہودی آپ پر ایمان لے آئے لیکن کچھ یہودیوں نے عناد و انکار کا راستہ اختیار کیا۔
آنحضرت (ص)کی نبوت کے سلسلہ میں یہودیوں نے جو شبہات ظاہر کئے ان میں ایک شبہہ نسخ کا محال ہونابھی ہے۔
ان کے خیال میں شریعت میں کسی حکم کے منسوخ ہونے کا لازمہ یا تو «بداء»یعنی علم الٰہی میں تغیر وتبدیلی ہے یا خلاف حکمت کام انجام دینا، اس لئے کہ شروع میں جو حکم دیا گیا تھا اگراس کی کوئی حکیمانہ بنیادنہ ہوتی تو ایسا حکم دینا ہی غیر معقول ہوگا اور اگر اس حکم کی حکیمانہ بنیاد تھی اور وہ حکمت اب بھی ایسے ہی باقی ہے تو سابقہ حکم کو منسوخ نہیں ہونا چاہئے اور اگر حکمت وقتی تھی اور خدا نہیں جانتا تھا کہ حکمت وقتی ہے اس لئے خدا نے وقت کی قید لگائے بغیر غیر معینہ مدت کے لئے حکم جاری کردیا بعد میں اسے حکمت کے محدود اور وقتی ہونے کا علم ہوا لہٰذ ا اس نے حکم منسوخ کر دیا تو اس کا لازمہ یہ ہے کہ علم خدا تبدیل ہو گیا اور خدا کی ذات میں جہل پایا گیا جس کے محال ہونے میں ادنٰی تردید روا نہیں ہے۔
اس شبہہ کا جواب یہ ہے کہ جو احکام منسوخ ہوتے ہیں ان میں حکمت پائی جاتی تھی لیکن ان کی حکمت محدود اور وقتی تھی اور خدا کو بھی شروع سے ہی اس حکمت کے وقتی اور محدود ہونے کا علم تھا اور خدا نے درحقیقت حکم کو بھی وقتی ہی بنایا لیکن ابلاغ و ترسیل کے موقع پر اس کے وقتی ہونے کا اعلان نہیں کیا تھا دوسری جانب ابدی ہونے کی بھی صراحت نہیں کی تھی بلکہ زمانہ کے لحاظ سے حکم کومطلق رکھا تھا اوربعد میں«ناسخ حکم»کے ذریعہ منسوخ حکم کے محدود اور وقتی ہونے کا اعلان واظہار کیا،شرعی احکام میں ناسخ ومنسوخ ،عام وخاص،مطلق ومقید ،محکم ومتشابہ جیسی تعبیرات کی اپنی حکمتیں ہیں جس میں مکلفین کا امتحان اہم ترین حکمت ہے۔
محقق طوسی کی کتاب«تجرید الاعتقاد»کی عبارت«والنسخ تابع للمصالح»اسی شبہہ اور اس کے جواب کی طرف اشارہ ہے۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Nov 14