Tuesday - 2018 Oct. 23
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 185748
Published : 18/2/2017 14:19

ایران پر حملہ ہوا تو اسرائیل پر میزائلوں کی برسات ہوگی:اسرائیلی اخبار کا انتباہ

یدیعوت آحارنوت نے لکھا: نیتن یاہو کو ٹرمپ سے بہت امیدیں نہیں باندھنی چاہئے کیونکہ اگر انہوں نے ٹرمپ کو ایران پر بمباری اور حملے کے لیے راضی کرلیا تو پھر ایران کے ردعمل کا سامنا امریکہ کو نہین اسرائیل کو کرنا پڑےگا۔


ولایت پورٹل:
صہیونی روزنامہ یدیعوت آحارنوت نے بدھ کے روز صہیونی وزیر اعظم نیتن یاہو اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان ہونے والی ملاقات پر تبصرہ کرتے ہوئے لکھا کہ اگر امریکہ نے ایران پر حملہ کیا تو اسرائیل پر لبنان اور شام سے ہزاروں میزائلوں کی بارش ہوگی،مذکورہ روزنامہ کی رپورٹ کے مطابق، ٹرمپ کی کابینہ میں بھی ایران کے دو دشمن ہیں جو ایران کے خلاف جنگ کرنے کی خواہش رکھتے ہیں۔
امریکی وزیر دفاع جان میٹز اور قومی سلامتی کے مشیر مائیکل فلین،میٹز اور فلین ایک دہائی پہلے عراق کی جنگ مین شریک تھے اور انہوں نے اپنی آنکھوں سے امریکی فوجیوں کو ایرانیوں کے ہاتھوں قتل ہوتے ہوئے دیکھا ہے،ان دونوں افراد نے ایران کو معاف نہیں کیا ہے،اسرائیلی حکّام ان دونوں کے شکرگزار ہیں،یہ دونوں حکام بھی نیتن یاہو کی طرح ایران پر حملے کا انتظار کررہے ہیں۔
رپورٹ میں بتایا گیا کہ نیتن یاہو ٹرمپ سے ملاقات میں ایران پر مزید پابندیاں عائد کئے جانے کے حوالے سے گفتگو کریں گے، یہ نیتن یاہو کے لیے سنہرا موقع ہے۔
یدیعوت آحارنوت نے لکھا: نیتن یاہو کو ٹرمپ سے بہت امیدیں نہیں باندھنی چاہئے کیونکہ اگر انہوں نے ٹرمپ کو ایران پر بمباری اور حملے کے لیے راضی کرلیا تو پھر ایران کے ردعمل کا سامنا امریکہ کو نہین اسرائیل کو کرنا پڑےگا،اور لبنان و شام سے اسرائیل پر اتنے میزائل برسیں گے کہ اسرائیل کو ان حالات میں ان سے بچنے کا کوئی راستہ نہیں ملےگا،اور جب حالات بہت خراب ہوجائیں گے تو جنگ کے مخالفین اسرائیل ہی پر اعتراض کریں گے، امریکی حکومت پر نہیں۔
ابلاغ


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Oct. 23