Saturday - 2018 Oct. 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 185766
Published : 18/2/2017 18:18

نماز کے قضا ہونے کا نقصان

اگر ایک وقت کی نماز صرف قضا ہوجائے تو اتنا بڑا نقصان ہوتا ہے کہ ساری دنیا کی دولت کو بھی اس نقصان کا بدل قرار نہیں دیا جاسکتا ، تو اس شخص کا کس قدر نقصان ہے جو سرے سے نماز ہی اد انہیں کرتا۔


ولایت پورٹل:
ہم اگر نماز کی اہمیت سمجھ جاتے تو نہ کبھی نماز قضا کرتے اور نہ ہی کبھی نماز ترک کرتے ،نماز کی اہمیت کا اندازہ لگانا ایک مشکل امر ہے،ایک مؤمن امام جعفر صادق(ع) کی خدمت میں حاضر ہوا اور کہا مولا! ہم کاروبار کرنا چاہتے ہیں لہٰذا ایک استخارہ کردیجئے ،مولا نے استخارہ دیکھا تو منع آیا آپ(ع) نے کہا تیرے لیے یہ استخارہ منع آیا ہے اب وہ شخص امام کے پاس سے چلا لیکن وہ بھی ہم ہی لوگوں کی طرح مؤمن تھا سوچنے لگا کہ کاروبار میں بہت زیادہ فائدہ ہوتا ہے چنانچہ جب یہ بات اس کے ذہن میں آئی تو اس نے امام(ع) کے حکم کے برخلاف یعنی استخارہ کے برخلاف کاروبار شروع کردیا اور کچھ ہی عرصے میں بہت مالدار بن گیا تو اس شخص کی آقا سے ملاقات ہوئی تو اس نے کہا مولا!دل میں ہمارے ایک شک ہے ، میں نے آپ سے ایک استخارہ کروایا تھا تجارت کے سلسلہ میں، تو استخارہ منع آیا تھا لیکن میں نے تجارت شروع کردی تو مجھے بہت فائدہ ہوا تو امام(ع) نے فرمایا مجھے بھی یہ معلوم تھا کہ تم بہت منافع کماؤ گے لیکن جو تمہارا نقصان ہوا اس کی تمہیں خبر نہیں ہے تم اس کاروبار کے سلسلہ میں فلاں فلاں دن فلاں شہر گئے تھے اور تم نے لوگوں سے ملاقات کی تھی اور پھر تم اس کاروبار کے لالچ میں اس قدر مشغول ہوگئے کہ تمہاری نماز قضا ہوتی رہی تو اس شخص نے کہا ہاں مولا ایسا ہوا تھا،امام(ع)نے فرمایا کہ اگر خدا تم کو دنیا کی ساری دولت بھی عطاکردے تب بھی اس ایک قضا نماز کا نقصان ادا نہیں ہوسکتا،اب آپ ذرا غور کریں جب ایک وقت کی نماز صرف قضا ہوجائے تو اتنا بڑا نقصان ہوتا ہے کہ ساری دنیا کی دولت کو بھی اس نقصان کا بدل قرار نہیں دیا جاسکتا ہے تو اس شخص کا کس قدر نقصان ہے جو سرے سے نماز ہی اد انہیں کرتا،لیکن ایک ہم ہیں کہ جن کے نزدیک نماز کی کوئی اہمیت ہی نہیں ہے یہ ہے ہمارا ایمان۔
چنانچہ امام محمد باقرعلیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں کہ:جو شخص دو رکعت نماز ادا کرے تو اسے چاہیئے کہ وہ جانے کہ اس دو رکعت نماز میں کیا پڑھ رہا ہے تاکہ جب وہ نماز تمام کرے تو اس کے اور خدا کے درمیان کوئی گناہ حائل نہ ہو مگر یہ کہ خدا اس کو معاف کردے۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 Oct. 20