Friday - 2018 july 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 185935
Published : 26/2/2017 18:49

جنت کی حوریں حضرت فاطمہ (س)کے دیدار کی مشتاق

شہزادی کونین(س) کی حیات کے آخری دنوں میں کچھ خواتین شہزادی کے پاس آئیں ،آپ نے ان سے پوچھا: کیا تم مکہ کی رہنے والی ہو یا پھر مدینہ کی؟ انہوں نے عرض کیا:بنت پیغمبر(ص)! ہم نہ تومکہ کی عورتوں میں سے ہیں اور نہ ہی مدینہ کی بلکہ اس زمین کے باشندوں میں سے نہیں ہیں،ہم تو جنت کی حوریں ہیں، آپ کے دیدار کی مشتاق ہیں، ہمیں خدا نے آپ کے پاس بھیجا ہے

ولایت پورٹل:
حضرت سلمان فارسی کہتے ہیں:میں حضرت علی(ع) کی دعوت پر فاطمہ زہرا(س)کے گھر گیا،فاطمہ (س) کی نظر مجھ پر پڑی تو فرمایا:«قَالَتْ:یَاسَلْمَانُ جَفَوْتَنِیْ بَعْدَ وَفَاۃِ اَبِیْ»
اے سلمان! میرے بابا کے انتقال کے بعد تم نے مجھ پر جفاکی ہے۔ پھر بیٹھنے کی اجازت دیتے ہوئے فرمایا:بیٹھ جاؤ اور جو میں کہتی ہوں اس کے بارے میں غور کرو۔
کل میں یہاں بیٹھی ، سوچ رہی تھی کہ رسول(ص) کی وفات کی وجہ سے ہم سے وحی الہٰی کا سلسلہ منقطع ہو گیا اب ملائکہ کی آمد و رفت نہیں ہوتی کہ اچانک گھر کا دروازہ کھلا،نہایت ہی حسین و جمیل اور خوبرو تین لڑکیاں داخل ہوئیں کہ کسی نے اتنی خوبصورت لڑکیاں نہیں دیکھی ہوں گی،میں اپنی جگہ سے اٹھی ان کے پاس گئی حالانکہ یہ منظر میرے لئے مسرور کن نہیں تھا،میں نے دریافت کیا:تم مکہ کی عورتوں میں سے ہو یا مدینہ کی؟!انہوں نے کہا:اے بنت ِرسول(ص) ! ہم نہ تومکہ کی عورتوں میں سے ہیں اور نہ ہی مدینہ کی بلکہ اس زمین کے باشندوں میں سے نہیں ہیں،ہم تو جنت کی حوریں ہیں، آپ کے دیدار کی مشتاق ہیں، ہمیں خدا نے آپ کے پاس بھیجا ہے،ان میں سے ایک کچھ بڑی معلوم ہوتی تھی،میں نے اس سے معلوم کیا کہ تمہارا کیا نام ہے؟
اس نے جواب دیا : مقْدُودہ
میں نے کہا: مقدودہ ہی کیوں؟
اس نے کہا: میں مقداد بن اسود کے لئے پیدا کی گئی ہوں۔
میں نے دوسری سے معلوم کیا کہ تمہارا کیا نام ہے؟
اس نے کہا: میرا نام ذَرّہ ہے۔
میں نے کہا: تم مجھے شریف و نجیب معلوم ہوتی ہو ، تمہارا نام ذَرّہ کیوں ہے؟
اس نے کہا: میں ابوذر کی زوجیت کے لئے پیدا ہوئی ہوں۔
میں نے تیسری سے معلوم کیا: تمہارا کیا نام ہے؟
اس نے کہا: سلمیٰ۔
میں نے کہا تمہارا نام سلمیٰ کیوں ہے؟
اس نے کہا: مجھے خدا نے آپ کے والد کے غلام سلمان فارسی کے لئے خلق کیا ہے۔
اس کے بعد جنت کی حوروں نے مجھے مشک سے زیادہ معطر خرمہ دیا۔
سلمان فارسی کہتے ہیں:فاطمہ زہرا(س) نے ان خرموں میں سے کچھ مجھے بھی عطا کئے،خرمہ لے کر میں مدینہ کی گلیوں  سے ہوتاہوا اپنے گھر کی طرف روانہ ہوا، راستہ میں اصحاب رسول(ص) میں سے جس سے بھی ملاقات ہوتی وہ یہی معلوم کرتا تھاکہ کیا تم بہترین عطریا مشک لئے ہوئے ہو؟


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 july 20