Thursday - 2018 july 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 185984
Published : 1/3/2017 17:7

حضرت فاطمہ زہرا(س) کی شخصیت رہبر انقلاب کے کلام میں:

پوری بشریت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا کی مرہون منت ہے:رہبر انقلاب

جب آپ تاریخ انبیاء پہ نظر ڈالیں گے تو ہر طرف سے وہی افراد نظر آئیں گے جیسے اولوالعزم انبیاء یا انکے ہمدرجہ افراد،لیکن انہیں عظیم المرتبت شخصیات کے مجموعہ میں کچھ نایاب نمونے موجود ہیں کہ جو توصیف اور بیان کی حد سے بلند و بالا ہیں اور انہیں میں سے ایک حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا ہیں کہ جن کا موازنہ صرف پیغمبر اسلام (ص)اور امیر المؤمنین(ع) سے کیا جا سکتا ہے۔

ولایت پورٹل:
حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کے فیوض کا دائرہ انسانوں کے عظیم مجموعہ کے مقابل میں محدود نہیں ہے،اگر عقلی اور منصفانہ نظر سے دیکھیں  تو  پوری بشریت حضرت فاطمہ زہرا(س) کی مرہون منت ہے، (اور یہ بات محض ایک خیال نہیں ہے بلکہ  یہ ایک حقیقت ہے)جس طرح بشریت، اسلام، قرآن اور انبیاء و پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تعلیمات کی مرہون منت ہے،تاریخ میں ہمیشہ اس طرح تھا اور آج بھی اسی طرح ہے اور روز بروز نور اسلام اور حضرت زہرا(س)کی معنویت بہتر انداز میں آشکار ہوتی رہےگی اور بشریت اسے محسوس کریگی۔
برادران عزیز! ہمارا وظیفہ اور ذمہ داری یہ ہے کہ  اپنے کو اس خاندان سے  منسوب کرنے کے لائق بنائیں،البتہ خاندان رسالت سے منسوب ہونا  اور ان کے متعلقوں میں سے ہونا یا انکے محب کے طور پر معروف ہونا بہت سخت اور مشکل امر ہے،ہم زیارت میں پڑھتے ہیں کہ: ہم آپ سے دوستی اور محبت کے عنوان سے معروف ہیں؛ یہ جملہ ہماری ذمہ داریوں کو  کئی گنا بڑھا دیتا ہے۔(۱)
انسانی ذہن کے لئے  غیر حل شدہ معنی
گفتگو حضرت فاطمہ زہرا (س) کے سلسلہ میں ہے،میرے جیسے چھوٹے لوگوں کے لئے  اس عظیم ذات کے بارے میں گفتگو کرنا(اگر چہ ایک فاصلہ سے ) بہت مشکل امر ہے،ہم ایک چیز اور ایک خیال اور ایک تصویر اور ایک کردار کو اپنے ذہنوں میں بناتے ہیں، یہ سب کہاں؟ اور واقعیت اور حقیقتیں ( جو ہمارے ذہنوں سےکہیں زیادہ  بلند ہیں) کہاں؟!حقیقت یہ ہے کہ  پیغمبر اسلام(ص) کی دختر نیک اختر، انسانی ذہنوں اور بشری علوم کے لئے غیر حل شدہ  حقیقت ہیں،تمام انسانوں کو ایک طرف رکھا جائے اور اولیاء الہی کو ایک طرف، اولیاء کی تعداد کم ہونے کے باوجود ان کا وزن، تمام  انسانوں سے زیادہ ہے،اگر  اس وزن و عظمت کا معیار، عالم کے حقایق کی آگاہی و معرفت اور خدا سے قربت کو قرار دیں تو ایک ولی خدا دیگر اولیاء کے علاوہ سب سے زیادہ عظیم اور بلند ہوگا،جب آپ اولیاء اور خدا کے صالح بندوں  کی صفوں پر نگاہ ڈالیں گے تو  معلوم ہوگا کہ ایسی عظیم ہستیاں ہیں جو دیگر اہل معنی افراد کی بنسبت غیر قابل تصور  مرتبہ رکھتے ہیں،ان کے مابین فرق بہت واضح فرق ہے،وہ عظیم ہستیاں وہی ہیں کہ جب آپ تاریخ انبیاء پہ نظر ڈالیں گے تو ہر طرف سے وہی افراد نظر آئیں گے جیسے اولوالعزم انبیاء یا انکے ہمدرجہ افراد،لیکن انہیں عظیم المرتبت شخصیات کے مجموعہ میں (کہ جن کا ذکر کرنا ہمارے لئے صرف لقلقۂ زبان ہے یا ہمارے جیسے افراد کہ جن کا قلب، روح اور جان ان کی حقایق اور معنویات کے ادراک سے قاصر ہے اور صرف دور سے انکی ایک تصویر ذہنوں میں بنائے ہیں اور اسی کو زبان پر لے آتے ہیں اور یہ تصویر بھی انہیں کے کچھ فرامین کے توسط سے ہے)کچھ نایاب نمونے موجود ہیں کہ جو  توصیف اور بیان کی حد سے بلند و بالا ہیں اور انہیں میں سے ایک حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا ہیں کہ جن کا موازنہ صرف پیغمبر اسلام اور امیر المؤمنین سے کیا جا سکتا ہے۔(۲)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔ جناب صدیقہ طاہرہ(س) کی ولادت کے موقع پر اہلبیت(ع) کے مداحوں سے خطاب۔ 5/10/1370  شمسی ہجری۔
۲۔ جناب صدیقہ طاہرہ (س) کی ولادت کے موقع پر اہلبیت(ع) کے مداحوں سے خطاب۔17/10/1369  شمسی ہجری۔

welayatnet


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 july 19