Sunday - 2018 Nov 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 186133
Published : 11/3/2017 16:18

نیکی کرنےکی اہمیت

قرآن کریم نےنیکی کرنےکو نیکی کرنےکا ثواب قراردیا ہے،اس کا دقیق معنی یہ ہے کہ اگرکسی نے آپ کےساتھ نیکی کی اورتم نے بھی اس کے ساتھ نیکی کی تو تمہارا یہ کام عدل ہے نیکی اور احسان نہیں ہے،لیکن اگراس کے نیک کام کےعلاوہ تم نے دو مرتبہ اس سے نیکی کی تو اس وقت تمہارے کام کا نام ہوگا احسان کہ جو اس کےاحسان کا بدلہ ہوسکتا ہے اوراس احسان کے کچھ آداب ہیں کہ جن میں سے بعض کی طرف اشارہ کیا جاتا ہے۔


ولایت پورٹل:
رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:اللہ تعالیٰ نے داوود نبی کو اس طرح وحی کی: قیامت کے دن میرے بندوں میں سے ایک بندہ ایک نیک کام لےکرآئے گا تو میں اسے جنت میں داخل کردوں گا۔ حضرت داوود علیہ السلام نے پوچھا:وہ نیک کام کیا ہوگا؟ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:اس نے کسی مؤمن کی پریشانی کو دورکیا ہوگا اگرچہ کھجورکے ایک دانے یا اس کے نصف دانے سے ہی اس نے کسی کے ساتھ نیکی کی ہو، حضرت داوود نے عرض کیا:بہترین شخص وہ ہےکہ جو تمہیں پہچان لےاورتم اس سے نا امید نہ ہو۔
نیکی کرنےکےآداب

نیکی کے ساتھ نیکی کاقرآن کریم نےنیکی کرنےکو نیکی کرنےکا ثواب قراردیا ہے،اس کا دقیق معنی یہ ہے کہ اگرکسی نے آپ کےساتھ نیکی کی اورتم نے بھی اس کے ساتھ نیکی کی تو تمہارا یہ کام عدل ہے نیکی اور احسان نہیں ہے،لیکن اگراس کے نیک کام کےعلاوہ تم نے دو مرتبہ اس سے نیکی کی تو اس وقت تمہارے کام کا نام ہوگا احسان کہ جو اس کےاحسان کا بدلہ ہوسکتا ہے اوراس احسان کے کچھ آداب ہیں کہ جن میں سے بعض کی طرف اشارہ کیا جاتا ہے۔ جواب دینا:رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: جب کسی نے تمہارے ساتھ نیکی کی تو تم بھی نیکی کے ساتھ اس کا جواب دو،اگرتمہارے پاس کچھ نہ ہوتو اس کا شکریہ ادا کرو کیونکہ شکریہ ادا کرنا بھی ایک قسم کی نیکی ہے۔
رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:کیا میں تمہیں دنیا اورآخرت کے بہترین اخلاق سے آگاہ نہ کروں؟ جس نے تم پرظلم کیا ہےاس سے درگزرکرو، جس نےے تم سے برائی کی ہے اس پراحسان کرواورجس نے تمہیں دینے سےاجتناب کیا ہےاسےعطا کرو؟
نیکی کرنے کا ثواب
امیرالمومنین علی علیہ السلام فرماتے ہیں اس دنیا میں دو قسم کے افراد کے کاموں کے علاوہ کوئی بھلائی نہیں ہے: ایسا شخص کہ جو ہرروز اپنی نیکی میں اضافہ کرتا ہے اوروہ شخص کہ جو توبہ کے ذریعے اپنے گناہوں کا ازالہ کرتا ہے۔
امام علی علیہ السلام فرماتے ہیں کہ جو بھی احسان اورنیکی کرے تو لوگوں کے دل اس کی جانب مائل ہوجاتے ہیں۔
پیغمبراکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: نیکی کرنا اورہمسائیوں سے اچھا سلوک، نعمتوں میں اضافہ کا باعث بنتا ہے اور شہروں کو آباد کرتا ہے۔
حضرت موسی علیہ السلام نے اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں عرض کیا: پروردگارا جو شخص لوگوں کو آزار واذیت نہیں دیتا اوران کے ساتھ نیکی سے پیش آتا ہے،اس کا ثواب کیا ہے؟ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:اے موسیٰ قیامت کے دن آگ اس سے مخاطب ہوکر کہےگی:میرا تم پر کوئی تسلط نہیں ہے۔




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Nov 18