Saturday - 2018 Nov 17
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187045
Published : 2/5/2017 17:54

تربیت اولاد کے دینی اصول:

اپنے بچوں کو کیسے بنائیں دین کا پابند(1)

پیغمبر اسلام (ص) کا ارشاد گرامی ہے:جب آپ کے بچے چھ سال کے ہوجائیں تو انہیں نماز پڑھنے کاحکم دیں اور سات سال کے ہوجائیں تو انہیں زیادہ تاکید کریں اور اگر ضرورت ہو تو مارپیٹ سے بھى انہیں نماز پڑھوائیں۔


ولایت پورٹل:
یہ درست ہے کہ لڑکا پندرہ سال کى عمر میں اور لڑکى نو سال کى عمر میں مکلّف ہوتے ہیں اور شرعى احکام ان پر لاگو ہو جاتے ہیں، لیکن دینى فرائض کى انجام دہى کو بلوغت تک ٹالا نہیں جا سکتا،انسان کو بچپن ہى سے عبادت اور دینى فرائض کى انجام دہى کى عادت ڈالنى چاہیے تاکہ بالغ ہوں تو انہیں شوق سے بجالائیں خوش قسمتى سے ایک مذہبى گھرانے میں پرورش پانے والا بچہ تین سال کى عمر ہى سے اپنے ماں باپ کى تقلید میں بعض مذہبى کام بجالاتا ہے،کبھى ان کے لیے جائے نماز بچھاتا ہے، کبھى ان کے ساتھ سجدے میں جاتا ہے ، اللہ اکبر اور لا الہ اللہ کہتا ہے چھوٹے چھوٹے مذہبى اشعار مزے مزے سے پڑھتا ہے، فرض شناس اور سمجھ دار ماں باپ بچے کى ان فطرى حرکات سے استفادہ کرتے ہیں، ان پر مسکرا کر اور اظہار مسرت کرکے اسے تقویت کرتے ہیں، اگر زبردستى یہ چیزیں بچے پر تھونپی نہ جائیں تو بہت مفید ہوتى ہیں، اس عمر میں ماں باپ کو نہیں چاہیے کہ بچے کو سکھانے اور نماز پڑھانے و غیرہ کے امور میں جلدى کریں یا ان پر دباؤ ڈالیں، پانچ سال کى عمر کے قریب بچہ سورہ فاتحہ و غیرہ یاد کرسکتا ہے آہستہ آہستہ یاد کروانا شروع کریں اور پھر سات سال کى عمر میں اسے حکم دیں کہ وہ باقاعدہ نماز پڑھا کرے، اول وقت میں خود بھى نماز پڑھا کریں اور بچوں کو بھى اس کى نصیحت کریں، نو سال کى عمر میں انہیں حتمى طور پر نماز پڑھنے کى تلقین کریں، انہیں سمجھائیں کہ سفر حضر میں نماز پڑھا کریں، عمل نہ کرے تو سختى بھى کریں اور اس سلسلے میں کوئی سستى نہ کریں، اگر ماں باپ خود نمازى ہوں تو آہستہ آہستہ بچوں کو بھى اس کا عادى بناسکتے ہیں اور پھر وہ سنّ بلوغ تک پہنچ کر خود بخود شوق و ذوق سے نماز پڑھنے لگیں گے، اگر ماں باپ نے یہ عذر سمجھا کہ بچہ ابھى چھوٹا ہے  بالغ نہیں ہوا اور اس پر نماز ابھى فرض نہیں ہوئی لہذا اسے کچھ نہ کہیں تو پھر بالغ ہوکر بچے کے لیے نماز پڑھنا مشکل ہوگا،کیوں کہ جس عمل کا انسان بچپن میں عادى نہ ہو، بڑے ہو کر اسے اپنانا مشکل ہوتا ہے یہى وجہ ہے کہ پیغمبر اسلام صلى اللہ علیہ و آلہ وسلم اور ائمہ اطہار(ع) نے چھ یا سات سال کى عمر میں بچے کو نماز پڑھنے کا عادى بنانے کا حکم دیا ہے۔
امام محمد باقر علیہ السلام نے  ارشاد فرمایا:
ہم اپنے بچوں کو پانچ سال کى عمر میں نماز پڑھنے پر آمادہ کرتے ہیں اور سات سال کى عمر میں انہیں نماز پڑھنے کا حکم دیتے ہیں۔(1)
پیغمبر اسلام (ص) کا ارشاد گرامی ہے:
جب آپ کے بچے چھ سال کے ہوجائیں تو انہیں نماز پڑھنے کاحکم دیں اور سات سال کے ہوجائیں تو انہیں زیادہ تاکید کریں اور اگر ضرورت ہو تو مارپیٹ سے بھى انہیں نماز پڑھوائیں۔(2)
امام باقر علیہ السلام یا امام صادق علیہ السلام  کا ارشاد ہے:
جب بچہ سات سال کا ہوجائے تو اسے کہیں کہ منھ ہاتھ دھوئے اور نمازپڑھے لیکن جب 9 سال کا ہوجائے تو اسے صحیح اور مکمل وضو سکھائیں اور سختى سے نماز پڑھنے کا حکم دیں، ضرورت پڑے تو اسے مارپیٹ کے ذریعے بھى نماز پڑھنے پر مائل کیا جا سکتا ہے۔(3)
امام صادق علیہ السلام نے فرمایا:
جب بچہ چھ برس کا ہوجائے تو ضرورى ہے کہ وہ نماز پڑھے اور جب وہ روزہ رکھ سکتا ہو تو ضرورى ہے کہ روزہ  بھی رکھے۔(4)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
1_ وسائل ، ج 3، ص 12
2_ مستدرک ، ج 1 ، ص 171
3_ وسائل، ج 3، ص 13
4_ وسائل، ص 19، باب استحباب أمر الصبیان بالصلاة، ح 4

جاری ہے ۔۔۔۔۔۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 Nov 17