Monday - 2018 Sep 24
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187104
Published : 4/5/2017 17:44

حضرت علی(ع)میں انبیاء کرام(ع) کی شباہتیں

نبی اکرم(ع) نے اپنے اصحاب کے جھرمٹ میں فرمایا:اگر تم آدم کو ان کے علم ،نوح کو ان کے ہم و غم ،ابراہیم کو اُن کے خُلق ،موسیٰ کو اُن کی مناجات ،عیسیٰ کو ان کی سنت اور محمد(ص) کو ان کے اعتدال اور حلم میں دیکھنا چا ہوتو ان (علی)کو دیکھو،جب لوگوں نے غورسے دیکھا تو وہ امیر المؤمنین(ع) تھے۔

ولایت پورٹل:نبی اکرم(ع) نے اپنے اصحاب کے جھرمٹ میں فرمایا:اگر تم آدم کو ان کے علم ،نوح کو ان کے ہم و غم ،ابراہیم کو اُن کے خُلق ،موسیٰ کو اُن کی مناجات ،عیسیٰ کو ان کی سنت اور محمد(ص) کو ان کے اعتدال اور حلم میں دیکھنا چا ہوتو ان (علی)کو دیکھو،جب لوگوں نے غورسے دیکھا تو وہ امیر المؤمنین(ع) تھے۔
شاعر کبیر ابو عبد اللہ مفجع نے اپنے قصیدہ میں امام (ع) کے ماثورہ مناقب کو یوں نظم کیا ہے :
اَیُّھَا اللَّا ئِمِی لِحُبِّی عَلِیّاَ
قُمْ ذَمِیْماً اِلیٰ الجَحِیْمِ خَزِیّاَ
أَ بِخَیْرِ الْاَنَام عَرَّضْتَ لَازِلْتَ
مَذُوداً عَنِ الھُدیٰ وَ غَوِیّاَ
أشبِہ الْاَنْبِیَاءِ طِفْلاً وَزُوْلاَ
وَ فَطِیْماً و رَاضِعاً وَ غَذِیّاَ
کَانَ فِیْ عِلْمِہٖ کَآدَمَ اِذْ عُلِّمَ
شَرَّ حَ الْاَسْمَاءِ وَالْمَکْنِیّاَ
وَکَنُوحٍ نَجَامِنَ الھُلْکِ یَوماَ
فِیْ مَسِیْرٍاِذِ اعتَلَا الجودِیّاَ
ترجمہ:حُبِّ علی(ع) کی خاطر میری ملامت کرنے والے جا ذلت و خواری کے ساتھ دوزخ میں جل جا۔
کیا تونے اپنے عمل کے ذریعہ بہترین انسان یعنی علی(ع) پر طعن تشنیع کرنا چاہی ہے ،خدا کرے کہ تو ہمیشہ ہدایت سے دور رہے ۔
علی(ع) اپنے بچپن ،اپنی جوانی اور شیر خوارگی،غرض کہ ہر حال میں انبیاء سے مشابہ تھے ۔
علی (ع)علم میں آدم(ع) کے مانند تھے چنانچہ آپ(ع) نے اسماء نیزمخفی امور کی تعلیم دی ۔
آپ(ع) نوح(ع)کی طرح تھے جو کوہ جودی پر پہنچنےکی وجہ سے غرق ہونے سے محفوظ رہے ۔
 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Sep 24