Sunday - 2018 Oct. 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187237
Published : 14/5/2017 16:22

حدیث غدیر اور علی(ع) کی امامت(۱)

غدیر میں خطبہ کے اختتام اور آیۂ:«الْیَوْمَ أَکْمَلْتُ لَکُمْ دِینَکُمْ ۔۔۔۔۔۔۔۔» کی تلاوت کے بعد آنحضرت(ص) نے «اللّٰه اکبر» کہہ کر اپنی خوشی کا اظہار کیا کہ دین کامل ہوگیا مسلمانوں پر نعمتیں تمام ہوگئیں اور خدا، پیغمبر(ص) کی رسالت اور علی(ع)کی ولایت سے راضی ہو گیا،ظاہر سی بات ہے کہ رسالت کے ساتھ ولایت کے تذکرہ کامطلب یہی ہے کہ ولایت کے معنی امت مسلمہ کی قیادت و رہبری کے علاوہ کچھ اور نہیں ہوں گے۔


ولایت پورٹل:قارئین کرام! ہم نے گذشتہ کئی کالمس میں امامت کو قرآنی آیات کے تناظر میں ثابت کیا اور عرض کیا کہ قرآن مجید کی کثیر آیات اہل بیت علیہم السلام کی ولایت و امامت پر محکم دلیل ہیں غرض ہم نے کچھ مشہور آیات کے پس منظر میں اپنے مدعا کو ثابت کیا اور آج سے ہم احادیث نبوی کے ذریعہ امامت و ولایت اہل بیت علیہم السلام پر روشنی ڈالیں گے۔
آغاز:حدیث غدیر کا شمار اسلام کی متواتر احادیث میں ہوتا ہے ایک سو سے زیادہ صحابہ نے اسے نقل کیا ہے اور تعداد میں تعجب کی کوئی گنجائش نہیں ہے کہ اس لئے کہ غدیر خم میں موجود مسلمانوں کی تعداد ایک لاکھ سے زیادہ تھی۔(۱)
غدیر خم کا واقعہ تاریخ اسلام کا اہم ترین واقعہ ہے،پیغمبر اکرم (ص) مناسک حج کی تکمیل کے بعد مکہ سے مدینہ کی جانب روانہ ہوئے ،غدیر خم پہونچے تو آنحضرت(ص) نے تمام مسلمانوں کو جمع ہونے کا حکم دیا جو آگے بڑھ گئے تھے انہیں واپس بلایا گیا جو پیچھے رہ گئے تھے ان کا انتظار کیا گیا،جب سب جمع ہوگئے تو نماز ظہر جماعت کے ساتھ ادا کی اور پالان شتر کا منبر بنانے کا حکم دیا پھر آپ(ص) منبر پر تشریف لے گئے اور حضرت علی(ع) کو اپنے نزدیک بلایا اور حمد و ثنائے الٰہی اور دیگر اہم مطالب کے بعد حضرت علی(ع) کو ہاتھوں پر بلند کیا تاکہ سب انہیں دیکھ لیں اور فرمایا:«من کنت مولاہ فھٰذا علی مولاہ»
اب دیکھنا یہ ہے کہ اس حدیث میں«مولیٰ»سے مراد کیا ہے ؟اہل سنت نے اس   کے معنی «محبت اور دوستی»بیان کئے ہیں لیکن شیعوں کے نزدیک اس کے معنی اسلامی معاشرہ کی قیادت ورہبری ہیں اس لئے کہ لفظ «مولیٰ»کے ایک معنی «دوسروں کے امور میں حق تصرف»بھی ہیں،اس طرح اس حدیث کے معنی یہ ہوں گے کہ«جو شخص مجھے اپنا مولیٰ یعنی اپنے امور کا خود اپنے سے بھی زیادہ مجھے حقدار سمجھتا ہے علی(ع) اس کے مولیٰ ہوں گے اور انہیں  بھی اس پر ایسی ہی ولایت حاصل ہوگی»۔
متعدد عقلی ولفظی قرآئن اس نظریہ کی تائید کرتے ہیں۔
۱۔پیغمبر اکرم (ص)نے اپنے خطبہ کے دوران بطور مقدمہ مؤمنین پر اپنی ولایت کا ذکر کرتے ہوئےفرمایا:«النَّبِیُّ أَوْلَی بِالْمُؤْمِنِینَ مِنْ أَنْفُسِهِمْ»۔(۲)یہ تذکرہ واضح قرینہ ہے کہ«من کنت مولاہ فعلی مولاہ»میں ولایت سے مراد کیا ہے؟اگرچہ اس مقدمہ کا حدیث غدیر کے تمام راویوں نے تذکرہ نہیں کیا ہے لیکن جن روایوں نے تذکرہ کیا ہے ان کی تعداد بھی بہت زیادہ ہے۔(۳)
۲۔پیغمبر اکرم(ص)نے «من کنت مولاہ ۔۔۔۔۔»ارشاد فرمانے سے پہلے مسلمانوں سے شہادتین (توحید ونبوت کی گواہی)کا اقرار لیا پھر فرمایا:تمہارا مولیٰ کون ہے؟ مسلمانوں نے جواب دیا :خدا اور اس کا رسول ہمارے مولا ہیں اس وقت آپ(ص) نے حضرت علی(ص) کا ہاتھ بلند کیا اور فرمایا «خدا اور اس کا رسول جس کے مولیٰ ہیں یہ شخص(علی علیہ السلام)بھی اس کے مولیٰ ہوں گے» توحید ونبوت کی شہادت کے اقراد کے ساتھ ولایت کا تذکرہ واضح کرتا ہے کہ ولایت سے مراد امت مسلمہ کی قیادت ورہبری ہے اور آپ(ع) کی ولایت پیغمبر اکرم (ص) کی ولایت کی منزل میں ہے۔
۳۔«من کنت مولاہ ۔۔۔۔۔۔۔»سے پہلے پیغمبر اکرم (ص) نے اپنی قریب الوقوع رحلت کی اطلاع دی جس سے صاف ظاہر ہے کہ آنحضرت(ص)اپنے بعد امت مسلمہ کی قیادت کے بارے میں فکر مند تھے اور چاہتے تھے کہ اس سلسلہ میں مناسب فیصلہ فرمادیں۔
۴۔خطبہ کے اختتام اور آیۂ:«الْیَوْمَ أَکْمَلْتُ لَکُمْ دِینَکُمْ ۔۔۔۔۔۔۔۔» کی تلاوت کے بعد آنحضرت(ص) نے «اللّٰه اکبر» کہہ کر اپنی خوشی کا اظہار کیا کہ دین کامل ہوگیا مسلمانوں پر نعمتیں تمام  ہوگئیں اور خدا، پیغمبر(ص) کی رسالت اور علی(ع)کی ولایت سے راضی ہو گیا،ظاہر سی بات ہے کہ رسالت کے ساتھ ولایت کے تذکرہ کامطلب یہی ہے کہ ولایت کے معنی امت مسلمہ کی قیادت و رہبری کے علاوہ کچھ اور نہیں ہوں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔السیرۃ الجلیۃ، ج/۳،ص/۲۸۳،تذکرۃ الخواص الامۃ ،ص/۱۸ ،دائرۃ المعارف فرید وجدی ،ج/۳،ص/۵۴۳۔
۲۔احزاب :۶۔
۳۔المراجعات کے مراجعہ /۵۴اور الغدیر ج/۱،ص /۳۷۱ کی طرف رجوع فرمائیں۔
جاری ہے ۔۔۔۔۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Oct. 21