Friday - 2018 Oct. 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187380
Published : 22/5/2017 15:38

شوہر کے فرائض:

بیوی سے بے فائدہ شکایتیں کیوں؟(۲)

دین اسلام نے بھی صبر اور رونے پیٹنے اورشکایت سے پرہیز کرنے کو اخلاق حسنہ میں شمار کیا ہے اور اس کے لئے عظیم انعام و ثواب کا وعدہ بھی کیا ہے چنانچہ امیر المؤمنین علی علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں:جب کسی مسلمان پر کوئی مشکل آن پڑے تو اسے لوگوں کے سامنے اس کی شکایت نہیں کرنی چاہیئے بلکہ اس خدا کے سامنے اپنی مشکلات بیان کرنی چاہیئے کہ جس کے دست قدرت میں تمام مشکلات کا حل ہے۔

ولایت پورٹل:قارئین کرام! ہم نے گذشتہ کالم میں ازدواجی زندگی سے متعلق شوہر پر عائد جس فرض اور ذمہ داری کا تذکرہ کیا تھا اس کا عنوان ہے«گھر میں شوہر کی بے فائدہ اور لاحاصل شکایات»اس مضمون میں یہ گذارش کی تھی کہ باہر کی مشکلات کو بیوی اور بےچارے بچوں سے بیان کرکے کوئی چیز حاصل نہیں ہوسکتی،صرف مشکلات میں مزید اضافہ ہی ہوسکتا ہے،لہذا صبر ضبط سے کام لیجئے،قارئین!اس تحریر کو شروع سے پرھنے کے لئے اس لنک پر کلک کیجئے!
بیوی سے بے فائدہ شکایتیں کیوں؟(۱)
گذشتہ سے پیوستہ:میرے عزیز!آپ اپنی اس نقصان دہ عادت کے سبب کہ جو آپ کی  کوئی بھی مشکل حل نہیں کرسکتی اپنے بچوں اور بیوی کو گھر، زندگی اور اپنے دیدار سے متنفر مت کریں، چونکہ جو کھانا اس کشمکش میں کھایا جائے گا  زہر سے بھی برا ہے  اور اس کا نتیجہ واضح و روشن ہے۔
چونکہ آپ کے بچے اور بیوی ہر آن یہ چاہیں گے کہ اس گھر اور اس کے پڑوس سے بھی کہیں دور چلیں جائیں تاکہ آپ کے روز روز کے  رونے پیٹنے سے نجات نصیب ہوجائے  اور بسا اوقات یہ بھی ممکن ہے کہ وہ  مختلف طریقہ سے فساد کے جالوں میں گرفتار ہوجائیں  اور اس  کے علاوہ  نفسیاتی مرض میں بھی مبتلاء ہوسکتے ہیں۔
لہذا  کیا یہ بہتر نہیں ہے کہ آپ صبر، متانت اور عقلمندی سے کام لیں؟ جب آنا گھر آنا چاہیں تو تمام مشکلات کو کچھ دیر کے لئے  فراموش کردیجئے اور جب تک آپ گھر کی فضا میں ہیں اپنے لبوں پر کوئی شکایت نہ لائیں، اور اپنے گھر والوں کے دل کو غم میں مبتلاء نہ کریں ، پس ان کے ساتھ بیٹھیں، بات چیت کریں، کھائیں پئیں  اور اس محبت اور آرام کے آشیانہ (گھر) میں آرام کریں اور تھکاوٹ کو دور کریں تاکہ کام پرشاداب اور پرنشاط ہوکر لوٹ سکیں۔
دین اسلام نے بھی صبر اور رونے پیٹنے اورشکایت سے پرہیز  کرنے کو  اخلاق حسنہ میں شمار کیا ہے اور اس کے لئے عظیم انعام و ثواب کا وعدہ بھی کیا ہے چنانچہ امیر المؤمنین علی علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں:جب کسی مسلمان پر کوئی مشکل آن پڑے تو اسے لوگوں کے سامنے اس کی شکایت نہیں کرنی چاہیئے بلکہ اس خدا کے سامنے اپنی مشکلات بیان کرنی چاہیئے کہ جس کے  دست قدرت میں تمام مشکلات کا حل ہے۔(۱)
نیز ایک دوسرے مقام پر ارشاد فرماتے ہیں:توریت میں اس طرح مرقوم ہے، جو بھی اس مصیبت پر کہ جو اس پر آئے شکایت کرے گویا وہ اللہ  سے شاکی ہے۔(۲)
اور حضرت ختمی مرتبت ﷺ نے ارشاد فرمایا:جس نے بھی اپنی جان یا مال پر آنے والی مصیبت کو چھپایا اور لوگوں کے سامنے اس کا اظہار نہ کیا تو خدا پر لازم ہے کہ اس کے تمام گناہوں کو بخش دے۔(۳)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۱۔بحار الانوار،ج 72 ، ص 326 ۔
۲۔ بحار الانور ، ج 72 ، ص 196 ۔
۳۔  مجمع الزوائد ج 3، ص 331 ۔

 
 
 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 Oct. 19