Tuesday - 2018 Dec 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187571
Published : 30/5/2017 16:15

رمضان المبارک قرآن مجید کی بہار اور دعاؤں کا موسم ہے:رہبر انقلاب

دعا کا رابطہ،خدا کے ساتھ ہے دعا یعنی طلب کرنا اور خدا سے مانگنا اور درخواست کرنا،جب تک آپ کسی چیز کی امید نہیں رکھیں گے، خدا سے کچھ مانگ نہیں سکتے،ایک ناامید آدمی کوئی چیز طلب نہیں کرسکتا ،لہٰذا دعا کا مطلب ہے امید جوکہ قبول و اجابت کے ہمراہ ہے۔

ولایت پورٹل:ماہ رمضان کو غنیمت جانیں، اس مہینہ کے دنوں میں روزے رکھیں اور راتوں کو ذکر و دعا میں سرگرم رہیں، دعائوں کا موسم بھی اسی مبارک مہینہ میں ہے،حالانکہ انسان کو ہمیشہ ہی دعا کے توسل سے خدا سے متصل رہنا  چاہیئے لیکن:«وَ أِذَا سَأَلَکَ عِبَادِی عَنِّی فَأِنِّی قَرِیْبٌ أُجِیْبُ دَعْوَۃَ الدَّاعِ أِذَا دَعَانِ»
اس مبارک آیت کے ذیل میں جو کہ روزہ اور رمضان المبارک کے سلسلہ میں ہے اس کے وسط میں روزہ اور ماہ رمضان کا ذکر آیا ہے:وَأِذَا سَأَلَکَ عِبَادِی عَنِّی فَأِنِّی قَرِیْبٌ» جس کے ذریعہ سبھی انسانوں اور بندگان خدا کو دعا اور توجہ کی طرف بلایا جارہا ہے،دعا کا رابطہ،خدا  کے ساتھ ہے دعا یعنی طلب کرنا اور خدا سے مانگنا اور درخواست کرنا، مانگنا، چاہنایعنی امید رکھنا، جب تک آپ کسی چیز کی امید نہیں رکھیں گے، خدا سے کچھ مانگ نہیں سکتے،ایک ناامید آدمی کوئی چیز طلب نہیں کرسکتا ،لہٰذا دعا کا مطلب ہے امید جوکہ قبول و اجابت کے ہمراہ ہے، قبولیتِ دعا کی یہ امید دلوں کو روشن کرتی ہے اور اس کی نورانیت کو قائم رکھتی ہے اس دعا کی برکت سے معاشرہ شاداب اور متحرک ہوتا ہے۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Dec 18