Sunday - 2018 Oct. 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187625
Published : 1/6/2017 14:42

احترام کے ساتھ بچوں کوکیسے چڑھائیں پروان (۲)

رسول اللہ ہمیشہ اور ہر جگہ بچوں سے محبت اور شفقت سے پیش آتے تھے،جب آپ سفر سے واپس آتے تو بچے آپ کے استقبال کے لیے دوڑ پڑتے،رسول اللہ(ص) ان سے پیار کرتے، محبت کرتے اور ان میں سے بعض کو اپنے ساتھ اپنے مرکب پر سوار کرلیتے اور پھر اپنے اصحاب سے فرماتے کہ باقی بچوں کو وہ لوگ اپنی اپنی سواریوں پر سوار کرلیں،لہذا اس حال میں شہر کے اندر لوٹتے۔


ولایت پورٹل:قارئین کرام!ہم نے اس مضمون کی گذشتہ کڑی میں یہ عرض کیا تھا کہ جس طرح اولاد پر والدین کا احترام اور عزت فرض ہے اسی طرح والدین کے لئے بھی ضروری ہے کہ وہ اپنے بچوں کا احترام کریں اور دوسروں کے سامنے انہیں عزت دیں،اگر والدین اپنی اولاد کو عزت نہ دیں تو پھر ممکن ہی نہیں کے گھر سے باہر وہ لائق احترام قرار پائیں،اس کالم کو ابتداء سے پڑھنے کے لئے اس لنک پر کلک کیجئے!
 احترام کے ساتھ بچوں کوکیسے چڑھائیں پروان (۱)
گذشتہ سے پیوستہ:دین مقدس اسلام نے بچوں کى طرف پورى توجہ دى ہے  نیز اس نے بچوں کا احترام کرنے کا بھی حکم دیا ہے۔
چنانچہ رسول اسلام صلى اللہ علیہ و آلہ و سلم نے  ارشاد  ہے:اپنى اولاد کى عزّت کرو اور ان کى اچھى تربیت کرو تا کہ اللہ تمہیں بخش دے۔
حضرت على علیہ السلام نے فرمایا:سب سے گھٹیا انسان وہ ہے جو دوسروں کى توہین کرے۔(1)
رسول اللہ ہمیشہ اور ہر جگہ بچوں سے محبت اور شفقت سے پیش آتے تھے،جب آپ سفر سے واپس آتے تو بچے آپ کے استقبال کے لیے دوڑ پڑتے،رسول اللہ(ص) ان سے پیار کرتے، محبت کرتے اور ان میں سے بعض کو اپنے ساتھ اپنے مرکب پر سوار کرلیتے اور پھر اپنے اصحاب سے فرماتے کہ باقی بچوں کو وہ لوگ اپنی اپنی سواریوں پر سوار کرلیں،لہذا  اس حال میں شہر کے اندر لوٹتے۔
بچوں سے یہاں تک شیرخوار بچوں کى توہین سے بھى سختى سے پرہیز کرنا چاہیئے،ام الفضل کہتى ہیں، رسول خدا صلى اللہ علیہ و آلہ و سلم نے حسین علیہ السلام کو جب کہ وہ شیرخوار تھے مجھ سے لے لیا،اور سینہ سے لگایا، حسین علیہ السلام نے رسول (ع) کے کپڑوں پر پیشاب کردیا میں نے امام حسین (ع) کو رسول اللہ (ص) سے زبردستى لے لیا، اس طرح سے کہ وہ رونے لگے رسول اللہ (ص) نے مجھ سے فرمایا، ام الفضل ذرا آرام سے! اس پیشاب کو  تو پانى پاک کردے گا لیکن حسین علیہ السلام کے دل سے ناراضى اور ناراحتى کون دور کرے گا؟۔(3)
ایک صاحب لکھتے ہیں :
ماں باپ کى نظر میں میرى کوئی اہمیت نہ تھى، نہ صرف وہ میرا احترام نہیں کرتے تھے بلکہ اکثر میرى توہین اور سرزنش کرتے رہتے،گھر کے  کاموں میں مجھے شریک نہ کرتے اور اگر میں کوئی کام انجام دیتا تو اس میں سے کمی نکالنا شروع کردیتے تھے، یہاں تک کہ میرے دوستوں کے سامنے میرى بے عزتى کر دیتے، مجھے دوسروں کے سامنے بولنے کى اجازت نہ دیتے،اس وجہ سے ہمیشہ میرے دل میں اپنے بارے میں احساس ذلت و حقارت رہتا تھا، میں اپنے تئیں اپنے وجود کو  ایک فضول اور اضافى چیز سمجھتا، اب جب کہ میں بڑا ہوگیا ہوں اب بھى میرى وہى کیفیت باقى ہے،بڑے کام سامنے آجائیں تو میں اپنے آپ کو کمزور سمجھنے لگتا ہوں، کاموں کى انجام وہى میں فیصلہ نہیں کرپاتا،میں اپنے تئیں کہتا ہوں میرى رائے چونکہ درست نہیں ہے اس لیے دوسروں کو میرے بارے میں اظہار رائے کرنا چاہیئے،اپنے تئیں حقیر و ناچیز سمجھتا ہوں،مجھے اپنے آپ پر اعتماد نہیں ہے یہاں تک کہ دوستوں کى موجودگى میں میرے اندر بات کرنے کى ہمت نہیں ہوتى اور اگر کچھ کہہ بیٹھوں تو کئی گھنٹے سوچتا رہتا ہوں کہ کیا میرى بات درست تھى اور صحیح موقع پر تھى۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات
1۔بحار، ج 104،ص 25
2۔غرر الحکم، ص 189
3۔ہدیة الاحباب، ص 176

 ماخوذ از کتاب:آئین تربیت



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Oct. 21