Wed - 2018 Dec 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187705
Published : 6/6/2017 14:49

وفات ام المؤمنین خدیجہ(س) پر خصوصی پیش کش:

پیغمبر اکرم(ص) کی نظر میں جناب خدیجہ(س) کا مرتبہ

پیغمبر اسلام(ص) اپنی زندگی کے آخری لمحات تک جناب خدیجہ کو یاد کیا کرتے تھے اور اسلام کے سلسلے میں ان کی پیش قدمی،زحمات اور رنج والم کو فراموش نہیں کرتے تھے، آپ(ص) نے ایک دن عائشہ سے فرمایا:خداوند عالم نے خدیجہ سے بہتر مجھے زوجہ نہیں دی جس وقت سب کافر تھے وہ ہم پر ایمان لائیں۔

ولایت پورٹل:بعثت کے دسویں سال شعب سے بنی ہاشم کے نکلنے کے کچھ ہی دن بعد پہلے جناب خدیجہ(س) اور اس کے بعد حضرت ابو طالب(ع) کی وفات ہوگئی۔(۱)
ان دو بڑی شخصیتوں کا اس دنیا سے اٹھ جانا جناب رسول خدا(ص) کے لئے بہت بڑی اور  جانگداز مصیبت تھی۔(۲) ان دوگہرے دوست اور وفادار ناصروں کے رحلت کر جانے کے بعد آنحضرت(ص) کے لئے مسلسل سخت اور ناگوار واقعات پیش آئے۔(۳)  اور زندگی آپ(ص) پر دشوار ہوگئی۔
جناب خدیجہ(س) کا کارنامہ
ان دوبڑی شخصیتوں کے غیر متوقع فقدان کا اثر ،فطری تھا اس لئے کہ اگرچہ جناب خدیجہ(س) سطح شہر میں جناب ابو طالب(ع) جیسا دفاعی کردار  تو نہیں ادا کرسکتی تھیں لیکن گھر کے اندر نہ تنہا پیغمبر(ص) کے لئے مہربان جانثار اور دل سوز شریک حیات تھیں بلکہ اسلام کی سچی اور واقعی مددگار  بھی تھیں بلکہ مشکلات اور پریشانیوں میں رسول خدا(ص) کی تسکین قلب اور سکون کا باعث تھیں۔(۴)
پیغمبر اسلام(ص) اپنی زندگی کے آخری لمحات تک جناب خدیجہ کو یاد کیا کرتے تھے۔(۵)اور اسلام کے سلسلے میں ان کی پیش قدمی،زحمات اور رنج والم کو فراموش نہیں کرتے تھے، آپ(ص) نے ایک دن عائشہ سے فرمایا:خداوند عالم نے خدیجہ سے بہتر مجھے زوجہ نہیں دی جس وقت سب کافر تھے وہ ہم پر ایمان لائیں،جب سب نے مجھے جھٹلایا تو انھوں نے میری تصدیق کی اور جب دوسروں نے مجھے محروم کیا تو انہوں نے اپنی ساری دولت میرے لئے خرچ کردی اور خداوند عالم نے مجھے ان سے فرزند عطا کیا ہے۔(۶)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔بلاذری ،ایضاً ،ج۱،ص ۲۳۶،ابن اثیر ،ایضاً،ج۲،ص۹۔
۲۔ابن واضح،تاریخ یعقوبی،ج۲،ص۲۹،پیغمبراسلام(ص)نے اس سال کا نام«عام الحزن»رکھا،(مجلسی ، بحارالانوار، ج۱۹،ص۲۵)۔
۳۔ابن اسحاق،ایضاً،ص۲۴۳،ابن ہشام،ایضاً،ج۲،ص۵۷،طبرسی،اعلام الوریٰ، ص۵۳۔
۴۔وکانت وزیرۃ صدق علی الاسلام و کان یسکن الیھا۔(ابن اسحاق ،ایضاً، ص۲۴۳،ابن ہشام ایضاً۔
۵۔امیرمھنا الخیامی ،زوجات النبی واولادہ(بیروت موسسہ عزالدین،ط۱،  ۱۴۱۱  ھ)ص۶۳۔۶۲۔
۶۔ابن عبدالبر،الاستیعاب(درحاشیہ الاصابہ)ج۴،ص۲۸۷،دولابی،ایضاً،ص۵۱۔





آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Dec 19