Friday - 2018 Nov 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 187830
Published : 13/6/2017 16:37

قرآنی سبق:

اصحاب كہف؟

امام(ع) نے فرمايا: كيا تجھے نہيں پتہ كہ اصحاب كہف پكى عمر كے آدمى تھے ليكن اللہ نے انہيں«فتية»كہا ہے اس لئے كہ وہ اللہ پر ايمان ركھتے تھے،اس كے بعد مزيد فرمايا: جو اللہ پرايمان ركھتا ہو اور تقوى اختيار كيے ہو وہ«فتى»(جوانمرد) ہے۔

ولایت پورٹل:چند بيدار فكر اور باايمان نوجوان تھے ،وہ ناز و نعمت كى زندگى بسر كر رہے تھے ،انھوں نے اپنے عقيدے كى حفاظت اور اپنے زمانے كے طاغوت سے مقابلے كے لئے ان سب نعمتوں كو ٹھوكر ماردى پہاڑ كے ایک غارميں جاکر پناہ لى ،کہ جس ميں كچھ بھى نہ تھا ،يہ اقدام كر كے انھوں نے راہ ايمان ميں اپنى استقامت اور پا مردى ثابت كردی ۔
يہ بات لائق توجہ ہے كہ اس مقام پر قران فن فصاحت و بلاغت كے ایک اصول سے كام ليتے ہوئے پہلے ان افراد كى داستان كو اجمالى طورپر بيان كرتا ہے تاكہ سننے والوں كا ذہن مائل ہو جائے ،اس سلسلے ميں چار آيات ميں واقعہ بيان كيا گيا ہے اور اس كے بعد ميں تفصيل بيان كى گئي ہے۔
اصحاب كہف كى زندگى كا اجمالى جائزہ
پہلے فرمايا گيا ہے :كيا تم سمجھتے ہو كہ اصحاب كہف و رقيم ہمارى عجيب آيات ميں سے تھے ۔(1)
زمين و اسمان ميں ہمارى بہت سى عجيب آيات ہيں كہ جن ميں سے ہر ایک عظمت تخليق كا ایک نمونہ ہے ،خود تمہارى زندگى ميں عجيب اسرار موجود ہيں كہ جن ميں سے ہر ایک تمہارى دعوت كى حقانيت كى نشانى ہے اور اصحاب كہف كى داستان مسلماً ان سے عجيب تر نہيں ہے ۔
اصحاب كہف كو يہ نام اس لئے ديا گيا ہے كيونكہ انھوں نے اپنی جان بچانے كے لئے  غار ميں پناہ لى تھى جس كى تفصيل انكى زندگى كے حالات بيان كرتے ہوئے آئے گى۔
ليكن «رقيم»دراصل«رقم»كے مادہ سے لكھنے كے معنى ميں ہے اور زيادہ تر مفسرين كا نظريہ ہے كہ يہ اصحاب كہف كا دوسرا نام ہے كيونكہ اخر كار اس كا نام ایک تختى پر لكھا گيا اور اسے غار كے دروزاے پر نصب كيا گيا تھا۔
بعض اسے اس پہاڑ كا نام سمجھتے ہيں كہ جس ميں يہ غار واقع تھى اور بعض اس زمين كا نام سمجھتے ہيں كہ جس ميں وہ پہاڑ تھا بعض كا خيال ہے كہ يہ اس شہر كانام ہے جس سے اصحاب كہف نكلے تھے ليكن پہلا معنى زيادہ صحيح معلوم ہوتا ہے۔(2)
اس كے بعد فرمايا گيا ہے:تم اس وقت كے متعلق سوچو جب چند جوانوں نے ایک غار ميں جاپناہ لي۔(3)۔(4)
جب وہ ہر طرف سے مايوس تھے،انہوں نے بارگاہ خدا كا رخ كيا اور عرض كي:پروردگارا! ہميں اپنى رحمت سے بہرمند فرما۔(5) اور ہمارے لئے راہ نجات پيدا كردے،ايسى راہ كہ جس سے ہميں اس تاريک مقام سے چھٹكارا مل جائے اور ہم تيرى رضا كے قريب ہوجائیں،،ايسى راہ كہ جس ميں خير و سعادت ہو اور ذمہ دارى ادا ہوجائے۔
ہم نے ان كى دعا قبو ل كی،ان كے كانوں پر خواب كے پردے ڈال ديئے اور وہ سالہا سال تک غار ميں سوئے رہے_
پھر ہم نے انہيں اٹھايا اور بيدار كيا تا كہ ہم ديكھيں كا ان ميں سے كون لوگ اپنى نيند كى مدت كا بہتر حساب لگاتے ہيں۔(۶)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
1۔سورہ كہف آيت 9
2۔رہا بعض كا يہ احتمال كہ اصحاب كہف اور تھے اور اصحاب رقيم اور تھے بعض روايت ميں ان كے بارے ميں ایک داستان بھى نقل كى گئي ہے ،يہ ظاہری ايت سے ہم اہنگ نہيں ہے كيونكہ قران كا ظاہرى مفہوم يہ ہے كہ اصحاب كہف و رقيم ایک ہى گروہ كا نام ہے يہى وجہ ہے كہ ان دو الفاظ كے استعمال كے بعد صرف «اصحاب كہف»كہہ كر داستان شروع كى گئي ہے اور انكے علاوہ ہر گز كسى دوسرے گروہ كا ذكر نہيں كيا گيا ،يہ صورت حال خود ایک ہى گروہ ہونے كى دليل ہے۔
3۔سورہ كہف:10 ۔
4۔جيسا كہ قرآن ميں موجود ہے:«اذا وى الفتية الى الكھف»فتيۃ، فتى كى جمع ہے،در اصل يہ نوخيز و سرشار جوان كے معنى ميں ہے البتہ كبھى كبھار بڑى عمر والے ان افراد كے لئے بھى بولاجاتا ہے كہ جن كے جذبے جوان اور سرشار ہوں،اس لفظ ميں عام طور پر جوانمردى حق كے لئے ڈٹ جانے اور حق كے حضور سر تسليم خم كرنے كا مفہوم بھى ہوتا ہے۔
اس امر كى شاہد وہ حديث ہے جو امام صادق عليہ السلام سے نقل ہوئي ہےکہ جس میں امام(ع) نے اپنے ایک صحابى سے پوچھا:«فتى»كس شخص كو كہتے ہيں؟
اس نے جواباً عرض كيا:«فتى» نوجوان كو كہتے ہيں۔
امام(ع) نے فرمايا: كيا تجھے نہيں پتہ كہ اصحاب كہف پكى عمر كے آدمى تھے ليكن اللہ نے انہيں«فتية»كہا ہے اس لئے كہ وہ اللہ پر ايمان ركھتے تھے،اس كے بعد مزيد فرمايا: جو اللہ پرايمان ركھتا ہو اور تقوى اختيار كيے ہو وہ«فتى»(جوانمرد) ہے۔
5۔سورہ كہف : 10 ۔
6۔سورہ كہف :11تا12۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 Nov 16