Saturday - 2018 Oct. 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 189792
Published : 2/10/2017 15:48

نیتن یاہو نئی جنگ چھیڑ تا ہے تو مقبوضہ فلسطین کا کوئی بھی علاقہ محفوظ نہیں رہے گا:سید حسن نصراللہ

ہماری جنگ یہودیوں سے نہیں ہے بلکہ غاصب صہیونیوں سے ہے اور یہودی امریکی سیاست کی بھینٹ چڑھ رہے ہیں۔


ولایت پورٹل:عاشور کی مناسبت سے سید حسن نصر اللہ  نے تقریر کرتے ہوئے کہا: داعش نے اسلام کے چہرہ کو مسخ کر کے امریکہ اور اسرائیل کی بہت بڑی خدمت کی ہے، یہ دہشتگرد تنظیم علاقہ پر بدنما داغ ہے، انھوں نے مزید کہاکہ مزاحمتی تحریک تک اسلحہ نہ پہنچے کے بہانہ صہیونی  شام میں جارحانہ کاروائیاں کر رہے ہیں ،سید حسن نصر اللہ نے کہا کہ ہماری جنگ یہودیوں سے نہیں ہے بلکہ غاصب صہیونیوں سے ہے اور یہودی  امریکی سیاست کی بھینٹ چڑھ رہے ہیں جس نے خطہ کو نشانہ بنا رکھا ہے، حزب اللہ کے سیکریٹری جنرل نے یہودی دانشوروں کو انتباہ دیتے ہوئے کہا: جو لوگ یہودیوں کو مقبوضہ فلسطین میں لا رہے ہیں وہ دراصل ان کی نسل کا خاتمہ کررہے ہیں لہذا آپ لوگوں کو صہیونیوں سے الگ ہوجانا چاہیے،اس وقت نیتن یاہو اور ٹرمپ مل کر ایک نئی جنگ کا پروگرام بنارہے ہیں  جس میں ان دونوں کی گندی سیاست کو خمیازہ آپ لوگوں کو بھگتنا پڑے گا، لہذا میں مقبوضہ فلسطین میں رہنے والے یہودیوں سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ جہاں سے آئے ہیں وہیں واپس چلے جائیں اس لیے کہ اگر نیتن یاہو نئی جنگ چھیڑ تا ہے تو مقبوضہ فلسطین کا کوئی بھی علاقہ محفوظ نہیں رہے گا نیز صہیونی جنگ کو شروع تو کریں گے لیکن ختم کرنا ان کے بس میں نہیں ہوگا۔
افکار



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 Oct. 20