Wed - 2018 Nov 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 189959
Published : 12/10/2017 15:36

عقیدہ مہدویت:

غیبت اور اس کافلسفہ(2)

شیخ طوسی فرماتے ہیں کہ:غیبت امام زمانہ (عجل)کے ذریعہ شیعوں کی ابتلاء اور امتحان سے متعلق جو روایات وارد ہوئی ہیں اور جن میں شیعوں کے امتحان کو آنحضرت(ع) کی غیبت کا ایک سبب بیان کیا گیا ہے ان کامقصد یہ ہے کہ یہ مسئلہ امام(ع) کی غیبت کا نتیجہ ہے یعنی امام(ع) کی غیبت پر جو نتائج مترتب ہوں گے ان میں سے ایک یہ بھی ہے نہ یہ کہ غیبت کا اصل مقصود ہی یہ ہے،غیبت کا اصل سبب قتل کا خوف ہے جیسا کہ بیان کیا گیا اور آزمائش امتحان تو اس کا ایک نتیجہ ہے۔


ولایت پورٹل:قارئین کرام! جیسا کہ ہم نے گذشتہ کالم میں امام زمانہ عجل اللہ تعالیٰ فرجہ الشریف کی غیبت کے متعلق گفتگو کی تھی جس میں بیان ہوا تھا کہ غیبت تاریخ انبیاء میں کوئی نیا کام نہیں ہے بلکہ بہت سی امتوں کے لئے مسئلہ غیبت پیش آچکا ہے جیسا کہ جناب یونس کا ایک عرصہ تک اپنی قوم سے دور رہنا اور اسی طرح حضرت موسیٰ علیہ السلام کا بھی اپنی امت سے کنارہ اختیار کرکے کچھ دن کے لئے کوہ طور پر چلے جانا غیبت کے مصادیق میں سے ایک ہے،نیز ہم نے سابق کالم میں امام زمانہ(عج) کی غیبت کے متعلق دو وجوہات و اسباب کا تذکرہ کیا تھا آج اس کا ایک اور سبب قارئین کی خدمت میں پیش کرنے کی سعادت حاصل کررہے ہیں،لہذا اس بحث کو ابتداء سے پڑھنے کے لئے اس لنک پر کلک کیجئے!
غیبت اور اس کافلسفہ(1)
گذشتہ سے پیوستہ:۳۔مؤمنین کی آزمائش
مؤمنین کے سلسلہ میں خدا کی ایک سنت یہ ہے کہ خداوندعالم انہیں مختلف طریقوں سے آزماتا ہے۔شدائد ومصائب ،مشکلات اور ناخوشگوار چیزیں آزمائش کا ایک ذریعہ ہیں چنانچہ ارشاد ہو تاہے:أَحَسِبَ النَّاسُ أَنْ یُتْرَکُوا أَنْ یَقُولُوا آمَنَّا وَہُمْ لاَیُفْتَنُونَ وَلَقَدْ فَتَنَّا الَّذِینَ مِنْ قَبْلِہِمْ فَلَیَعْلَمَنَّ اﷲُ الَّذِینَ صَدَقُوا وَلَیَعْلَمَنَّ الْکَاذِبِینَ۔(۱)
امام منتظر (عجل)کی غیبت کے فلسفہ اور اسباب میں سے جس سبب کا تذکرہ بہت سی روایات میں پایا جاتا ہے وہ «امتحان اورمؤمنین کی آزمائش»ہے۔    
منتخب الاثر میں اس سلسلہ میں ۲۴ ؍حدیثیں نقل ہوئی ہیں،ان میں سے ایک روایت کا مضمون یہ ہے کہ امام جعفر صادق(ع)کے کچھ اصحاب اہل بیت(ع) کی دولت حقہ کے بارے میں گفتگو کر رہے تھے امام(ع) نے ان سے فرمایا:جس چیز کی تم لوگ تمنا کر رہے ہو وہ چیز اس وقت تک محقق نہیں ہوگی جب تک کہ تمہیں امتحان کی چھلنی میں چھان نہ لیا جائے اس وقت ناامیدی تم پر غالب آجائے گی اور شقی لوگ سعید افراد سے جدا ہو جائیں گے۔(۲)
شیخ طوسی اس سلسلہ میں فرماتے ہیں کہ:غیبت امام زمانہ (عجل)کے ذریعہ شیعوں کی ابتلاء اور امتحان سے متعلق جو روایات وارد ہوئی ہیں اور جن میں شیعوں کے امتحان کو آنحضرت(ع) کی غیبت کا ایک سبب بیان کیا گیا ہے ان کامقصد یہ ہے کہ یہ مسئلہ امام(ع) کی غیبت کا نتیجہ ہے یعنی امام(ع) کی غیبت پر جو نتائج مترتب ہوں گے ان میں سے ایک یہ بھی ہے نہ یہ کہ غیبت کا اصل مقصود ہی یہ ہے،غیبت کا اصل سبب قتل کا خوف ہے جیسا کہ بیان کیا گیا اور آزمائش امتحان تو اس کا ایک نتیجہ ہے۔(۳)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔عنکبوت:۲۔۳۔
۲۔کتاب الغیبۃ ،ص۲۰۳۔۲۰۴۔
۳۔کتاب الغیبۃ ،ص۲۱۳۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Nov 21