Sunday - 2018 july 22
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 190008
Published : 15/10/2017 18:46

وہابیوں میں اموی تفکر کا انعکاس

ابن تیمیہ حرانی حنبلی نے پیغمبر اکرم(ص)کی قبر مبارک کی زیارت کے حرام ہونے اور انبیاء و اولیاء کی قبور سے توسل کرنے والوں کے قتل کا فتویٰ دے کر ساتویں صدی ہجری میں اموی تفکر کی ترویج کی۔

ولایت پورٹل:افسوس کہ اسلام سے پیکار اور پیغمبر اکرم(ص) سے دشمنی کا اموی تفکر ابن تیمیہ اور محمد بن عبدالوہاب کے کردار اور ان کے آثار میں جلوہ گر ہوا ہے۔
ابن تیمیہ حرانی حنبلی نے پیغمبر اکرم(ص)کی قبر مبارک کی زیارت کے حرام ہونے اور انبیاء و اولیاء کی قبور سے توسل کرنے والوں کے قتل کا فتویٰ۔(1)دے کر ساتویں صدی ہجری میں اموی تفکر کی ترویج کی۔
محمد بن عبدالوہاب کے پیروکاروں کا اس کے سامنے یہ کہنا:میرا یہ عصا محمد(ص)سے بہتر ہے اس لئے کہ میں اپنے اس عصا سے سانپ اور بچھو وغیرہ کو مار سکتا ہوں جب کہ محمد تو مر چکا ہے اور اب وہ کسی قسم کا نفع یا نقصان نہیں پہنچا سکتا، وہ تو صرف ایک پیغام رساں تھا۔(2)یہ بارہویں صدی ہجری میں ایک بار پھر جزیرۃ العرب کے علاقہ نجد میں اموی تفکر کو زندہ کرنا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۔ ابن‏تيميّہ حنبلى، زيارة القبور و الاستنجاد بالمقبور: ص 17، حكم من يأتي إلى قبر نبي أو صالح و يسألہ و يستنجد بہ.
2۔ زينى دحلان مكى شافعى،  الدُرَر السَنيّة في الردّ على الوہابيّة: ص 28 و 29.

 
 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 july 22