Thursday - 2018 july 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 190079
Published : 18/10/2017 19:6

مہدویت:

ہماری عبادت و عزاداری میں وارث حسین(ع) کی شرکت؟

جی ہاں! ہماری عزاداری بھی ہمیں آپ(ع) سے نزدیک نہ کر سکی،اور عزاداری کی بدولت عصر حاضر کے دشمنوں کے خلاف کوئی انتقامی جذبہ پیدا نہیں ہوا۔ آپ(ع) کا مطالبہ ہے کہ آپ(ع) کے تذکرہ کی مجلسوں سے آپ(ع) کے اور دین خدا کے دشمنوں کے خلاف رضا کار شیعہ تیار ہوں لیکن ہماری ذاکری اور مجالس سامراج کیلئے کوئی خطرہ نہیں ہے۔

ولایت پورٹل:ایک شیعہ کی اہم ذمہ داری یہ ہے کہ وہ ہمیشہ اپنے وقت کے امام کو یاد رکھیں،لیکن ہمارا حال ہی الگ ہے ہم اپنی عبادتوں میں بھی آپ(امام زمانہ علیہ السلام) سے جدا رہے، اگر عزاداری کی بھی تو آپ(ع) کو یعنی خون حسین(ع) اور خون اہلبیت(ع) کے حقیقی منتقم کو بھولے رہے،عزاداری یعنی قاتلان حسین(ع) اور قاتلان اہلبیت(ع) کے انتقام کا مقدس جذبہ دل میں ہونا۔ حقیقی کینہ اور واقعی عزاداری یہ ہے کہ اس کے ذریعہ دشمنو ں سے انتقام کے جذبہ کو تحریک و تقویت ملے ۔مقدس انتقام کی روح و جان یہ ہے کہ عزادار منتقم حقیقی کی تمنا اور تلا ش میں رہے،ہم برسوں سے عزاداری کر رہے ہیں لیکن آپ(ع) کی نصرت، امداد اور ظہور کی راہ میں حائل موانع ختم کرنے کیلئے ہم نے کوئی اقدام نہیں کیا، نوبت بہ اینجار سید کہ بعض نامی گرامی انجمنیں جو اپنی عزائی خدمات کے سبب بہت مشہور و معروف ہیں ان کی جانب سے منعقد کسی مجلس میں اگر آپ(ع) کا چاہنے والا مخلص ذاکر، سامعین کو آپ(ع) کی مظلومیت کی یاد دلاتا ہے اور اس کے لئے طاغوتی طا قتوں سے مقابلہ کی بات کرتا ہے تو ان انجمنو ں کے سر پر ستوں اور عہدیداروں کو ناگوارگذرتا ہے اورکہتے ہیں کہ:سیاسی باتیں کیوں کر رہے ہو آپ صرف مجلس پڑھئے اور بس۔لوگوں کو مجلس اور گریہ کے علاوہ کسی چیز کی ضرورت نہیں ہے۔
جی ہاں! ہماری عزاداری بھی ہمیں آپ(ع) سے نزدیک نہ کر سکی،اور عزاداری کی بدولت عصر حاضر کے دشمنوں کے خلاف کوئی انتقامی جذبہ پیدا نہیں ہوا۔ آپ(ع) کا مطالبہ ہے کہ آپ(ع) کے تذکرہ کی مجلسوں سے آپ(ع) کے اور دین خدا کے دشمنوں کے خلاف رضا کار شیعہ تیار ہوں لیکن ہماری ذاکری اور مجالس سامراج کیلئے کوئی خطرہ نہیں ہے اور ان مجالس سے ان کی صحت پر کوئی فرق نہیں پڑتا،آپ کے دشمنوں کے لئے ہماری مجالس قطعاً مضر نہیں ہیں۔آپ کو یاد ہوگا کہ جب ایران کے خلاف پورا سامراج جنگ کررہا تھا تب انھیں مجالس سے رضاکار آمادہ ہوکر حق کی حمایت اور باطل کے خلاف صف بستہ ہوتے تھے۔ آج دشمنوں نے فوجی محاذ کے بجائے ثقافتی محاذ کھول دیا ہے جو زیادہ خطرناک ہے ۔ فوجی محاذ کے کچھ پیشرو اور سیاسی افراد بھی سب کچھ بھول بھال کر زندگی کے پیچ و خم میں الجھ چکے ہیں اور شاید کافی تعداد اس ثقافتی جنگ میں مجروح اور دشمن کے ہاتھوں اسیر ہوچکی ہے۔
اگر ہم نے قرآن کی تلاوت کی بھی ہے تو اس کے اصل نافذ کرنے والے یعنی آپ(ع) کو بھول گئے  ہیں حالانکہ پیغمبر اسلام(ص) نے فرمایا کہ آپ(ع) اور قرآن قیامت تک ساتھ ساتھ رہیں گے۔«انھما لن یفترقا حتیٰ یردا علیّ الحوض»۔(۱) بے شک یہ دونوں ہر گز ہر گز جدا نہ ہوں گے یہاں تک کہ حوض کوثر پہ میرے پاس آجائیں ۔
ایک عمر گذر چکی ہے اور ہم قرآن کو تنہا،معلم اورنافذ کر نے والے کے بغیر اپنائے ہوئے اس کی تلا وت کررہے ہیں۔
مھر امام باید ورنہ چہ سود ای فیضؔ        قرآن بہ سبعہ خواندن در چھاردہ روایت۔(۲)
ترجمہ:اے فیضؔ امام(ع) کی محبت درکار ہے ورنہ چودہ روایتوں کے اعتبار سے سات طرح قرأت کا کیا فائدہ؟                                                  
ہم اہلبیت(ع) سے محبت کرتے ہیں ان کی محفلوں اور مجالس میں شرکت بھی کرتے ہیں لیکن ان کے اکلوتے موجود فرزند کی تنہائی و مظلومیت سے غافل ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔وسائل الشیعہ: ج ۲۷،ص  ۳۳۔
۲۔شوق مہدی: فیض کا شانی، ص ۱۰۷۔


 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 july 19