Monday - 2018 Sep 24
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 190127
Published : 21/10/2017 17:54

ماں کا احترام کیوں؟

حضرت امام محمد باقر علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں کہ:اگر کوئی شخص یہ چاہتا ہے کہ اس کی عمر طولانی ہو اس کی روزی میں برکت ہو اسے اپنے والدین کے ساتھ نیکی کرنی چاہیئے۔


ولایت پورٹل:قارئین کرام!والدین اللہ کی عظیم نعمت ہیں لیکن ان میں بھی والدہ خصوصی احترام کی مستحق ہیں اب سوال یہ ہے کہ کیوں ہم والدہ کی طرف خصوصی توجہ دیں اور والد کی نسبت ان کا زیادہ احترام کریں؟
اس سوال کا جواب ایک روایت میں بیان ہوا ہے:ایک شخص رسول خدا(ص) کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا:یارسول اللہ(ص)! میں کس کے ساتھ نیکی کروں؟حضرت نے فرمایا:اپنی ماں کے ساتھ،اس شخص نے پھر سوال کیا:اللہ کے رسول(ص) میں کس کے ساتھ نیکی کروں؟آپ نے فرمایا:اپنی ماں کے ساتھ نیکی کرو،غرض اس شخص نے اسی سوال کو ۴ مرتبہ دہرایا تو چوتھی مرتبہ سرکار نے فرمایا:اپنے والد کے ساتھ نیکی کرو!۔(۱)
یہ روایت اس امر کی طرف واضح اشارہ ہے کہ کیوں رسول اللہ(ص) نے ۳ مرتبہ والدہ کی خدمت اور ان کے ساتھ نیکی کی تاکید فرمائی ہے۔
ایک دوسری روایت میں وارد ہوا ہے کہ ایک جوان جہاد میں شرکت کرنا چاہتا تھا لہذا وہ رسول خدا(ص) کی خدمت میں اجازت لینے کے لئے شرفیاب ہوا،حضرت نے اس سے فرمایا:کیا تمہاری ماں زندہ ہے؟اس نے عرض کیا:ہاں یا رسول اللہ(ص)،تو آپ نے ارشاد فرمایا:تم اپنی ماں کے پاس رہ کر ان کی خدمت کرو چونکہ جنت ماں کے پیروں کے نیچے ہے۔(۲)
ہم یہاں پر بھی دیکھتے ہیں کہ سرکار رسالتمآب(ص) نے جہاد میں شرکت کرنے کے بجائے جوان کو والدہ کی خدمت کی تاکید فرمائی ہے،آپ نے اس جوان کو یہ سمجھایا ہے کہ اگر جہاد میں شرکت کرنے کی سعادت نصیب نہ ہوسکے تو ماں کی خدمت کو جہاد فی سبیل اللہ سے کم شمار نہ کیا جائے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
[1]. «جَاءَ رَجُلٌ إِلَى النَّبِيِّ ص فَقَالَ يَا رَسُولَ اللَّهِ مَنْ‏ أَبَرُّ قَالَ أُمَّكَ قَالَ ثُمَّ مَنْ قَالَ‏ أُمَّكَ قَالَ ثُمَّ مَنْ قَالَ أُمَّكَ قَالَ ثُمَّ مَنْ قَالَ أَبَاكَ.»كلينى، محمد بن يعقوب بن اسحاق، الكافی‏ ،تاريخ وفات مؤلف: 329 ق‏، محقق / مصحح: غفارى على اكبر و آخوندى، محمد، موضوع: كتب اربعه‏، زبان: عربى‏، تعداد جلد: 8، ناشر: دار الكتب الإسلامية، مكان چاپ: تهران‏، ج2، ص 159.
[2]. «الک والدة؟»، قال: «نعم»، قال: فالزمها فانّ الجنّه تحت قدمها»  محمدمهدی النراقی، جامع السعادات ، جلد : 2  صفحه : 276.

ترجمہ:سجاد ربانی


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Sep 24