Thursday - 2018 Nov 15
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 190311
Published : 31/10/2017 18:12

خداوندعالم کی ظاہری اور باطنی نعمت

اگر ہم خدا وند عالم کی عطا کردہ تمام نعمتوں کا جائزہ لیں تو ہمیں معلوم ہوگا کہ معصوم امام کا وجود ہی سب سے بڑی نعمت ہے،بلکہ حق تو یہ ہے کہ اس نعمت اور دوسری نعمتوں کے درمیان کوئی موازنہ ہی نہیں ہے کیونکہ اگر انسان کے پاس خداوند عالم کی عطا کی ہوئی تمام نعمتیں ہوں مگر وہ امامت و ولایت کی نعمت سے محروم ہو تو وہ کبھی بھی دنیا و آخرت کی سعادت سے ہمکنار نہیں ہو سکتا ہے۔


ولایت پورٹل:خدا کی نعمتوں کے بارے میں قرآن مجید میں ارشاد ہوتاہے:«وَاَسْبَغَ عَلَیْکُمْ نِعَمَهُ ظَاهِرَۃً وَّبَاطِنَةً»۔(1)
ترجمہ:خدا نے تمہارے لئے تمام ظاہری اور باطنی نعمتوں کو مکمل کردیا ہے۔
قال سألت سیدی موسیٰ بن جعفر علیه السلام عن قول اللّه عزّ وجلّ(وَاَسْبَغَ عَلَیْکُمْ نِعَمَهُ ظَاهِرَۃً وَّ بَاطِنَةً) فقال: النّعمة الظّاهرۃ الامام الظّاهر و الباطنة الامام الغائب فقلت له: ویکون فی الائمّة من یغیبُ؟ قال نعم، یغیب عن ابصار النّاس شخصه ولا یغیب عن قلوب المؤمنین ذکرہ وھو الثّانی عشر منّا»۔(2)
ترجمہ:محمد بن زیاد ازدی کا بیان ہے کہ میں نے اپنے مولا امام موسیٰ کاظم علیہ السلام سے پوچھا کہ اس آیۂ کریمہ : (وَاَسْبَغَ عَلَیْکُمْ نِعَمَهُ ظَاهِرَۃً وَّ بَاطِنَةً) میں ظاہری اور باطنی نعمت سے کیا مراد ہے؟
آپ نے ارشاد فرمایا:ظاہری نعمت سے ظاہر اور حاضر امام مراد ہیں اور باطنی نعمت سے مراد غائب امام ہیں،میں نے آپ(ع) سے پوچھا: کیا اماموں میں کوئی غائب بھی ہوگا؟امام(ع)نے فرمایا:ہاں وہ لوگوں کی نظروں سے غائب ہوگا مگر اس کی یاد لوگوں کے دلوں سے ختم نہیں ہوگی اور وہ ہم میں سے بارہواں امام ہے۔
خداوند عالم اس کی ہر مشکل کو آسان کردے گا اور ہر دشواری کو سہل بنائے گا،اس کیلئے زمین کے تمام خزانے ظاہر ہو جائیں گے اور ہر دور ترین کام نزدیک ہو جائے گا،ان کے ہاتھوں پر ستمگر ذلیل ہوگا اور ہر متکبر شیطان ہلاک ہوگا،جب خداوند عالم ان کو ظاہر کرے گا تو ان کے ذریعہ زمین کو عدل وانصاف سے اسی طرح بھردے گا جس طرح وہ ظلم وجورسے بھری ہوگی۔(3)
خداوند عالم کی نعمتیں بے شمار ہیں جن کی گنتی کسی کے لئے بھی ممکن نہیں ہے جیسا کہ خود پروردگار   کااعلان ہے،اگر ہم انسان کو ہر رخ سے دیکھیں اور اس کے وجود کو دنیا سے لے کر آخرت تک پھیلاہوا دیکھیں تو محسوس ہوگا کہ اس کی ابدی سعادت دنیا میں صحیح اور نیک زندگی کی مرہون منّت ہے۔
اس تصور کے ساتھ اگر ہم خدا وند عالم کی عطا کردہ تمام نعمتوں کا جائزہ لیں تو ہمیں معلوم ہوگا کہ معصوم امام کا وجود ہی سب سے بڑی نعمت ہے،بلکہ حق تو یہ ہے کہ اس نعمت اور دوسری نعمتوں کے درمیان کوئی موازنہ ہی نہیں ہے کیونکہ اگر انسان کے پاس خداوند عالم کی عطا کی ہوئی تمام نعمتیں ہوں مگر وہ امامت و ولایت کی نعمت سے محروم ہو تو وہ کبھی بھی دنیا و آخرت کی سعادت سے ہمکنار نہیں ہو سکتا ہے مگر افسوس یہ ہے کہ اس نعمت سے سرشار لوگ بھی اس کی قدر وقیمت کو بہت کم جانتے ہیں اور اس کا بہت کم شکریہ ادا کرتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
1۔سورہ لقمان:۲۰ ۔  
2۔بحار الانوار،،ج۱۵،ص۱۵۰۔
3۔بحار الانوار،ج ۵۱،ص۱۰۵۔


 
 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Nov 15