Thursday - 2018 Nov 15
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 190315
Published : 31/10/2017 19:1

امام حسین(ع) اخلاص و عمل کی اعلیٰ ترین مثال

پیغمبر اکرم(ص) کے بعد امت کے لئے آئمہ معصومین(ع) اسوہ اور نمونہ عمل ہیں لہذا امام حسین(ع) انھیں عملی نمونوں میں سے ایک ہیں۔ چنانچہ آپ نے خود سلیمان بن صرد خزاعی اور مسیب وغیرہ کے جواب میں تحریر فرمایا:«فلکم فی اسوة؛میں تمہارے لئے نمونہ عمل اور اسوہ ہوں،اسیوجہ سے شیعوں کو حضرت امام حسین علیہ السلام کے خصوصیات و اوصاف سے دوسروں کی نسبت زیادہ آشنا ہونا چاہیئے۔


ولایت پورٹل:خداوندعالم نے راہ ہدایت و صراط مستقیم پر چل کر سعادت و کمال کی منزل مقصود تک پہونچنے کے لئے قوانین اور آسمانی کتابوں کے علاوہ  کچھ آئیڈیل اور عملی نمونوں کو بھی بھیجا ہے تاکہ لوگ ان کی اقتداء کرتے ہوئے حقیقت و سچائی تک آسانی پہونچ جائیں،چنانچہ تمام انبیاء علیہم السلام  ہمارے لئے وہ عملی نمونے ہیں جن کی اقتداء کرکے ہم منزل مقصود و کمال تک پہونچ سکتے ہیں اور ان میں سب سے اہم ہمارے نبی (ص) ہیں چنانچہ آپ کے لئے قرآن مجید میں ارشاد ہوتا ہے: «ولکم فی رسول الله اسوة حسنة»[1] تمہارے لئے اللہ کے رسول نمونہ عمل و بہترین اسوہ ہیں۔
پیغمبر اکرم(ص) کے بعد امت کے لئے آئمہ معصومین(ع) اسوہ اور نمونہ عمل ہیں لہذا امام حسین(ع) انھیں عملی نمونوں میں سے ایک ہیں۔ چنانچہ آپ نے خود سلیمان بن صرد خزاعی اور مسیب وغیرہ کے جواب میں تحریر فرمایا:«فلکم فی اسوة؛[2] میں تمہارے لئے نمونہ عمل اور اسوہ ہوں،اسیوجہ سے شیعوں کو حضرت امام حسین علیہ السلام کے خصوصیات و اوصاف سے دوسروں کی نسبت زیادہ آشنا ہونا چاہیئے۔
امام حسین(ع) اور رضائے الہی
خداوند عالم کی بارگاہ میں صرف وہ عمل قابل قبول ہے کہ جو خلوص نیت اور رضائے الہی کے لئے انجام پایا ہو،اسی وجہ سے قرآن کریم میں تمام اعمال خلوص دل اور قصد قربت کی قید کے ساتھ بیان ہوئے ہیں چنانچہ جہاد کے متعلق ارشاد ہوتا ہے:«و الذین جاهدوا فی سبیل الله»؛[3] وہ افراد کے جو اللہ کی راہ میں جہاد کرتے ہیں۔
لہذا امام حسین(ع) کی سب سے اہم خصوصیت یہ ہے  کہ آپ کی پوری زندگی ،آپ کا کردار،رفتار رضائے خدا کے سانچے میں ڈھلا ہوا نظر آتا ہے،آپ کی پوری زندگی میں جو کچھ بھی ہے ،جو عمل بھی ہے وہ اللہ کی رضا کی خاطر ہے،یا دوسرے الفاظ میں اس طرح رقم کیا جائے  کہ آپ اللہ کے حکم کے سامنے سراپا تسلیم تھے آپ حقیقی معنی میں اللہ کے محبوب بندے تھے چنانچہ آپ کا ارشاد گرامی ہے:«اللهم انک تعلم انه لم یکن ما کان منا تنافسا فی سلطان، ولا التماسا من فضول الحطام ولکن لنری المعالم من دینک ونظهر الاصلاح فی بلادک و یا من المظلومون من عبادک و یعمل بفرائضک و سنتک و احکامک؛[4]
خدایا! تو بہتر جانتا ہے کہ جو کچھ ہم نے کیا وہ  حکومت و سلطنت اور اس بے قیمت دنیا کے حصول کے لئے نہیں ہے،بلکہ صرف اس وجہ سے تھا کہ میں تیرے دین کا پرچم پوری دنیا میں لہراتا ہوا دیکھنا چاہتا ہوں ،اور چاہتا ہوں کے تیرے تمام شہروں میں اصلاح آشکارا کردوں،،تیرے مظلوم بندے امن و سلامتی کا احساس کریں،تیرے واجبات و مستحبات و احکام پر عمل کیا جائے۔
اور جب حضرت اپنے نانا رسول خدا(ص) کی قبر اطہر پر الواداع کے لئے گئے ہیں تو اللہ کی بارگاہ میں عرض کیا:«اللهم انی احب المعروف و انکر المنکر وانا اسئلک یا ذالجلال[5] و الاکرام بحق القبر ومن فیه الا اخترت من امری هذا ما هو لک رضا ولرسولک فیه رضی؛[6]
ترجمہ:خدایا! حقیقتاً میں معروف کو چاہتا ہوں اور منکر سے بیزار ہوں،اے خدائے بزرگ !اس قبر اور صاحب قبر کا واسطہ ! میرے لئے اس قیام میں جو کچھ تیری اور تیرے رسول کی رضا ہو وہ کرامت فرما۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
[1]احزاب/21.
[2]محمدباقر مجلسی، بحارالانوار (بیروت، دار احیاء التراث العربی)، ج 44، ص 381.
[3] بقره/20 و 218.
 [4] موسوعة میزان الحکمۃ،ص 276.
[5] موسوعة میزان الحکمۃ،ص 276.
[6] موسوعة میزان الحکمۃ،ص 287؛بحار، ج 44، ص 328؛فرهنگ سخنان امام حسین علیه السلام (همان) ص 385؛مقتل الحسین، خوارزمی، ج 1، ص 186.

 



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Nov 15