Wed - 2018 Sep 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 191322
Published : 3/1/2018 19:36

امام مہدی(عج) اور طولانی عمر

مسلمانوں کے عقیدہ کے مطابق جناب خضر جو کہ جناب موسیٰ (ع) کے دور سے زندہ تھے آج بھی بقید حیات ہیں اور قیامت آنے تک زندہ رہیں گے تو کیا خداوند عالم اپنی آخری حجت اور مستضعفین عالم کی امید کو طولانی عمر عطا نہیں کرسکتا؟۔


ولایت پورٹل: امام زمانہ (عج)کے وجود شریف کے بارے میں شک کرنے والوں میں سے بعض حضرات نے آپ(عج) کی طول عمر کو بہانہ بنایا ہے وہ کہتے ہیں کہ:«سنت یہی ہے کہ انسانوں کی عمر محدود ہوتی ہے اور سو سال سے زیادہ عمر تاریخ میں نادر ہے بہر حال کسی کی عمر ابدی و دائمی نہیں ہے»۔(۱)
یہ شبہہ انتہائی ہلکا اور بے بنیاد ہے اس لئے کہ اولا ً تو عقلی اعتبار سے طولانی عمر ممکن ہے دوسری جانب خدا کی قدرت لا متناہی ہے لہذا اس رو سے بھی امام زمانہ (عج)کی طویل عمر میں عقلاً کوئی زحمت نہیں ہے۔
دوسرے یہ کہ تاریخ میں ایسے بہت سے افراد گذرے ہیں جن کی عمر بہت زیادہ تھی اور انہیں«معمرین» کے نام سے یاد کیا جا تاہے۔ جناب نوح(ع) کے بارے میں قرآن اعلان کرتا ہے کہ:«انہوں نے اپنی قوم کے درمیان نو سوپچاس برس گذارے»۔{فَلَبِثَ فِیہِمْ أَلْفَ سَنَۃٍ إِلاَّ خَمْسِینَ عَامًا}۔(۲)اس آیہ کریمہ کے ظاہری معنی سے معلوم ہوتا ہے کہ نو سوپچاس سال حضرت نوح(ع) کی مدت نبوت تھی نہ کہ مدت حیات۔ اور ابن قتیبہ کی کتاب«معارف» میں مذکور ہے کہ جناب آدم(ع) کی عمر ایک ہزار سال اور آپ کے فرزند شیث کی عمر نو سو بارہ سال تھی۔ ایک قول کے مطابق لقمان بن عاد کی عمر تین ہزارپانچ سو سال اور دوسرے قول کے مطابق سات ہزار برس تھی۔(۳)ابن خلدون کے قول کے مطابق شداد نو سو سال تک زندہ رہا اور اس نے تین سو سال کی مدت میں عدن کے بیابانوں میں شہر ارم تعمیر کیا۔(۴)
تیسرے یہ کہ مسلمانوں کے عقیدہ کے مطابق جناب خضر جو کہ جناب موسیٰ (ع) کے دور سے زندہ تھے آج بھی بقید حیات ہیں اور قیامت آنے تک زندہ رہیں گے۔(۵)جناب عیسیٰ(ع) کے بارے میں بھی یہی عقیدہ ہے چنانچہ معتبر روایات کے مطابق حضرت عیسیٰ(ع) امام زمانہ(عجل)کے ظہور کے وقت آسمان سے نازل ہو کر امام زمانہ(عج)کی اقتداء میں نماز پڑھیں گے۔(۶)
چوتھے یہ کہ آج سائنس اور جدید تحقیقات نے ثابت کر دیا ہے کہ اگر انسان حیات کے لئے مناسب حالات مکمل طریقہ سے فرا ہم کرتا رہے اور حیات کو نقصان پہونچانے والے عوامل سے پرہیزکرتا رہے تو طویل عمرحاصل کر سکتا ہے۔ علمی اور سائنسی لحاظ سے عمر کی محدودیت کا سبب یہ نہیں ہے کہ انسانی وجود طویل عمر کا متقاضی نہیں ہے بلکہ محدود عمر کی وجہ ہے کہ طبیعی زندگی کے ضروری اسباب و عوامل میں خلل واقع ہوتا رہتا ہے اور یہ اسباب و عوامل صحیح طرح حاصل نہیں ہو پاتے لہٰذا انسان اگرحفظان صحت کے اصولوں کا لحاظ رکھتے ہوئے بقاء حیات کے لئے ضروری حالات فراہم کرکے حیات کو نقصان پہونچانے والے عوامل اورآفات سے پرہیزکرے تو وہ طویل عمر کا مالک ہو سکتا ہے۔(۷)
لہٰذا امام زمانہ (عج)کی طویل عمر کامسئلہ عقلی، دینی، تاریخی اور علمی اعتبار سے مکمل طور پرتوجیہ و تفسیر کے قابل ہے ایک محقق اور منصف مزاج انسان کے لئے اس بارے میں شک و شبہہ روانہیں ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔احمد امین، ظہر الاسلام، ج۴،ص ۱۱۷ تا ۱۱۸۔
۲۔ سورہ عنکبوت: ۱۴۔
۳۔الفصول العشرۃ فی الغیبۃ ،تالیف شیخ مفید(رح) فصل ششم (جلد سوم از مصنفات شیخ مفید)معمرین کے سلسلہ میں مزید معلومات کے لئے شیخ صدوق کی کتاب کمال الدین کی طرف رجوع فرمائیں۔    
۴۔مقدمہ ابن خلدون،ص۱۴۔
۵۔الاصابۃ ،ابن حجر، ج۲،ص۲۹۳، ۲۹۴۔
۶۔سنن ابن ماجہ،ج۲،کتاب الفتن،باب۳۳،المھدی ،سید صدر الدین صدر، ص۲۲۷ ، ۲۲۸۔
۷۔ ملاحظہ فرمائیں:مجلۃ المقططف،ج۳،ص ۵۹ ۔





آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Sep 19