Wed - 2018 Nov 14
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 191342
Published : 4/1/2018 19:27

سید حسن نصر اللہ:

خاک میں ملیں ایران کے خلاف امریکا، سعودی عرب اور اسرائیل کی امیدیں ؛ قدس کے خلاف ٹرمپ کا فیصلہ اسرائیل کے اختتام کا آغاز

حزب اللہ لبنان کے جنرل سکریٹری سید حسن نصر اللہ نے المیادین ٹی وی چینل پر علاقہ کے مسائل اور ایران کے حالیہ وقائع کے بارے میں دو گھنٹہ سے زیادہ کی گفتگو کی جسے آج المیادین اور المنار چینل پر نشر کیا گیا۔

ولایت پورٹل: سید حسن نصر اللہ نے کہا: جو واقعات آجکل ایران میں رونما ہو رہے ہیں وہ سیاسی نہیں ہیں اور یہ بات بآسانی قابل فہم ہے نیز ۲۰۰۹ میں الیکشن کے بعد پیش آنے والے واقعات سے بالکل بھی قابل قیاس نہیں ہیں۔ انہون نے کہا: مشکل، ایران کے نظام میں نہیں ہے بلکہ مشکل کچھ بینکوں اور بینکنگ اداروں کے دیوالیہ کی وجہ سے ہے۔ انہوں مزید کہا کہ ایران کے ذمہ دار افراد موجودہ بحران کو پرسکون طریقہ سے نپٹاتے ہوئے مظاہرہ و اعتراض کرنے والوں اور افراتفری مچانے والوں سے الگ الگ انداز میں پیش آ رہے ہیں۔
سید حسن نصر اللہ نے ایرانی وقائع کی طرف اسلام دشمن عناصر کی للچائی ہوئی نگاہوں کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا: ٹرمپ، نتینیاہو اور سعودی اعلیٰ عہدیداروں کی امیدیں خاک میں مل گئیں۔
حزب اللہ کے جنرل سکریٹری نے فلسطین کے حوالہ سے کہا: ٹرمپ کے ذریعہ قدس کو صہیونی حکومت اسرائیل کا دار الحکومت اعلان کرنا، اسرائیل کے اختتام کا آغاز ہے۔ نیز انہوں نے امریکی صدر کے ایران مخالف اقدامات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: ٹرمپ کے ان تمام اقدامات کی وجہ یہ ہے کہ ایران فلسطینی مقاومت اور مسئلہ قدس کی حمایت کرتا ہے۔
اپنی گفتگو کے دوسرے حصہ میں سید حسن نصر اللہ نے کہا: داعش سے جنگ کرنا اسرائیل سے جنگ کرنے سے زیادہ سخت ہے، جس نے عراق اور شام میں داعش کو شکست دی ہے وہ اسرائیل کو بآسانی شکست دے سکتا ہے، اگر داعش کو امریکہ کی حمایت حاصل نہ ہوتی تو ہم اسے شام میں اور جلدی شکست دے سکتے تھے۔ انہوں نے تاکید کی کہ حزب اللہ اسرائیل کی کمزوریوں سے اچھی طرح واقف ہے اور اسرائیل کو شکست دینے کے لئے لاکھوں راکٹوں اور میزائلوں کی ضرورت نہیں ہے اور اسرائیلی بھی اس بات کو اچھی طرح سمجھتے ہیں۔
سید سے سوال کیا گیا کہ کیا اس بات کا امکان پایا جاتا ہے کہ مستقبل میں کبھی حزب اللہ اسرائیل کو قانونی ملک تسلیم کرلے؟ تو انہوں نے جواب میں کہا: اگر پوری دنیا بھی اسرائیل کو قانونی ملک کا درجہ دیدے تو ہم ہرگز اس غاصب حکومت کو قانونی ملک کی حیثیت سے تسلیم نہیں کریں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارس نیوز



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Nov 14