Tuesday - 2018 Oct. 16
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 191868
Published : 1/2/2018 15:34

میانمار میں مسلمانوں کی نسل کشی کے واضح ثبوت موجود ہیں: اقوام متحدہ کی نمائندہ

میانمار کا صوبہ راخین روہنگیا مسلمانوں کا اصلی مسکن ہے کہ جو ۲۰۱۲ سے شدت پسند بدھسٹوں کے نشانے پر ہے،جہاں کے ابھی تک ۱۱ لاکھ لوگ بے گھر ہوچکے ہیں جن میں ۷ لاکھ لوگ صرف بنگلادیش میں آوارگی کی زندگی گذار رہے ہیں۔

ولایت پورٹل: رپورٹ کے مطابق میانمار کے مسائل میں اقوام متحدہ کے شعبہ حقوق بشر کی خصوصی نمائندہ یانگی لی نے آج وضاحت کی ہے کہ میانمار میں مسلمانوں کے خلاف فوج کے جرائیم ناقابل برداشت حد تک بڑھتے جارہے ہیں۔
حقوق بشر کے اس نمائندے نے ساتھ ہی یہ اظہار بھی کیا ہے کہ ہم انٹرنیشنل عدلیہ کے حکم کے منتظر ہیں جب تک عدلیہ اعلان نہ کریں ہم میانمار حکومت کو کوئی نوٹس نہیں دے سکتے۔
حقوق بشر کے نمائندے کے یہ خیالات اس وقت سامنے آئے کہ جب انھوں نے بنگلا دیش میں روہنگیا مسلمانون کے کیمپوں کا دورہ کیا۔
یاد رہے کہ میانمار کا صوبہ راخین روہنگیا مسلمانوں کا  اصلی مسکن ہے کہ جو ۲۰۱۲ سے شدت پسند بدھسٹوں کے نشانے پر ہے،جہاں کے ابھی تک ۱۱ لاکھ لوگ بے گھر  ہوچکے ہیں جن میں ۷ لاکھ لوگ صرف بنگلادیش میں آوارگی کی زندگی گذار رہے ہیں۔


فارس




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Oct. 16