Wed - 2018 August 15
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 191890
Published : 3/2/2018 18:7

ناشکری کا انجام

حضرت علی علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں: جو شخص کسی چھوٹی مصیبت پر صبر نہ کرے اور ناشکری کا مظاہرہ کرے تو ہوسکتا ہے کہ خدا اسے کسی بڑی مصیبت میں گرفتار کردے۔

ولایت پورٹل: قارئین کرام! ممکن ہے ہم فقر اور تنگدستی کے باعث خدا کی بارگاہ میں شکوہ کریں،خدا نہ کریں کسی لا علاج مرض یا کسی شدید مشکل میں گرفتار ہوجائیں کہ جس کے سامنے ہماری قدیم مشکل ہی  ہمیں بھلی لگنے لگے۔
سعدی شیرازی ایک واقعہ نقل کرتے ہیں کہ ایک شخص کے پاس جوراب اور جوتے  نہیں تھے،لہذا وہ نالہ و فریاد کررہا تھا اور نوحہ کناں بارگاہ خدا میں کہہ رہا تھا: خدایا! تونے ہماری  یہ کیا حالت بنا رکھی ہے اگر تیرے پاس ہمیں دینے کو نہیں تھا تو ہمیں پیدا کیوں کیا؟ چنانچہ ایک دن اس نے ایک شخص کو دیکھا جس کے دونوں پیر نہیں تھے،وہ یہ منظر دیکھ کر سجدہ میں گرپڑا اور کہا:خدایا مجھ سے غلطی ہوگئی،تیرے امور میں دخالت کی کوشش کی،! میرے پاس جوتے نہیں ،جوراب نہیں یا عید کے دن کچھ دیگر چیزیں نہیں تو کیا ہوا لیکن میرے پاس بہت سی  ایسی چیزیں ہیں جو دوسروں کے پاس نہیں ہیں۔
مولائے متقیان علیہ السلام نے نہج البلاغہ میں فرمایا: «مَنْ عَظَّمَ صِغَارَ الْمَصَائِبِ ابْتَلَاهُ اللَّهُ بِکبَارِهَا»۔(1) جو شخص کسی چھوٹی مصیبت پر صبر نہ کرے اور ناشکری کا مظاہرہ کرے تو ہوسکتا ہے کہ خدا اسے کسی بڑی مصیبت میں گرفتار کردے۔
اس دنیا میں موجود مشکلات سے کسی کو انکار نہیں ہے لیکن ہمیں خدا سے گلہ و شکوہ نہیں کرنا چاہیئے خدا سے منھ نہ موڑیں،اہل بیت(ع) سے اعراض نہ کریں جو کچھ ہمارے پاس ہے ہم اس کا شکریہ ادا کریں،«لأَزیدَنَّکم»۔(2) تاکہ اس کی نعمتیں ہم پر زیادہ ہوجائیں۔
ہمیں یہ فکر کرنی چاہیئے کہ جو کچھ ہمیں اب تک خدا نے دیا ہے کیا ہم نے اس کا شکریہ ادا کیا ہے تاکہ اس سے دوسری نعمتوں  مطالبہ کرسکیں؟
واقعاً یہ ایک بڑا خطرہ ہے ،اگر کوئی چھوٹی چھوٹی پریشانیوں کو بڑھا چڑھا کر پیش کرے تو خدا بھی اسے بڑی مشکلات میں گرفتار کردیتا ہے لہذا ہمیں اپنی موجودہ حالت کو غنیمت جاننا چاہیئے۔
اس کے لئے ہم ایک مثال سے استفادہ کرسکتےہیں: آپ فرض کیجئے! صبح ۱۰ بجے ہاسپیٹل کے وارڈ میں ایک ڈاکٹر داخل ہوتا ہے اور اس کے ساتھ نرسوں اور ہسپتال کے دیگر کارکنوں کا پورا عملہ موجود ہے اور اس وارڈ میں ۱۰ مریض بیڈ پر لیٹے ہوئےہیں اب ڈاکٹر کہنا شروع کرتا ہے کہ: اس مریض کو یہ کھانا دیا جائے،اس کو یہ ،فلاں مریض کو یہ چیز ہرگز نہ دی جائے لیکن اُس مریض کو اگر یہ چیز دی جائے تو اس کی حالت جلدی سدھر سکتی ہے۔اس کو آج بلکل کھانا نہ دیا جائے اور اسے تھوڑا۔سب مریض اس ڈاکٹر کی باتیں غور سے سن رہے ہیں اور ان میں سے کوئی بھی اعتراض نہیں کرتا،بلکہ اس کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔(3)
پس ہمیں بھی اپنے کو ایک مریض کی جگہ رکھ کر سوچنا چاہیئے جس طرح ایک ڈاکٹر اپنے مریض کے لئے جو تجویز کرتا ہے وہ اس کی بھلائی کا خواہاں ہے اسی طرح ہمیں خدا پر اعتراض کرنے کے بجائے اس کا شکریہ ادا کرنا چاہیئے اور اس کے دیئے اور نہ دیئے پر شکر کرنا چاہیئے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
1۔شرح نہج البلاغه،ج20،ص98۔
2۔ابراهیم:7۔
3۔بیانات آیت الله مجتهدی تهرانی سے اقتباس۔

 



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 August 15