Sunday - 2018 June 24
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192005
Published : 10/2/2018 18:37

غلو اور اس کا نتیجہ

دین میں غلو کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ ایک جانب ایک انسان کے مقام و مرتبہ کو خدائی کے مرتبہ تک بڑھا دیا جاتا ہے اور دوسری جانب غلو سے خدا کا مقام و مرتبہ گھٹ کر لباس انسانی میں نظر آنے لگتا ہے اور غلو کرنے والا خداوند عالم کے لئے جسمانی صفات کا قائل ہوجاتا ہے۔
ولایت پورٹل: تاریخ مذہب میں ایسے لوگ اور گروہ بھی پائے جاتے ہیں کہ جنہوں نے انبیاء اور اولیاء الٰہی کے بارے میں غلو سے کام لیا ہے اسی لئے ان کو غالی کہا جاتا ہے۔
لغت میں غلو حد سے تجاوز کرنے کو کہا جاتا ہے یعنی کسی شخص یا چیز کے بارے میں اس کی، لیاقت سے زیادہ تعریف و توصیف کرنا۔
در حقیقت غلو لغوی اعتبار سے کسی شخص یا چیز کی تعریف میں مبالغہ آرائی کو کہا جاتا ہے اور شرعی اصطلاح میں انبیاء یا اولیاء الٰہی کے بارے میں حد سے زیادہ بڑھ جانے اور انہیں خدا یا رب ماننے کو غلو کہا جاتا ہے۔
قرآن مجیدمیں اہل کتاب کو جناب عیسیٰ(ع) کے بارے میں غلو کرنے سے ڈراتے ہوئے ارشاد ہوتا:«یااھل الکتاب لاتغلوا فی دینکم ولاتغولوا علی اللہ الا الحق انما المسیح عسی بن مریم رسول اللہ و کلمته»۔(۱)
نیز سورہ مائدہ کی ۷۷ ویں آیت کا بھی یہی مضمون ہے کہ اہل کتاب کی مبالغہ آرائی اور غلو یہی تھا کہ وہ حضرت عیسیٰ(ع) کی الوہیت کا عقیدہ رکھتے تھے جیسا کہ دوسرے مقام پر ارشاد ہے:«لقد کفر الذین قالوا ان اللہ ھو المسیح بن مریم»۔(۲)
ترجمہ: یقیناً وہ کافر ہوگئے ہیں کہ جو کہتے ہیں کہ اللہ وہی عیسیٰ بن مریم ہیں۔
جبکہ حضرت عیسیٰ(ع) خداوند عالم کے دوسرے پیغمبروں کی طرح ایک پیغمبر اور رسول خدا تھے اور ان کے اندر خدائی کا کوئی وجود نہیں تھا،جیسا کہ ایک اور مقام پر ارشاد ہوتا ہے:«ماالمسیح بن مریم الا رسول قد خلت من قبله الرسل»۔(۳)
ترجمہ: عیسیٰ بن مریم رسول کے علاوہ اور کچھ نہیں تھے جن سے پہلے بھی بہت سے رسول آئے ہیں ۔
دین میں غلو کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ ایک جانب ایک انسان کے مقام و مرتبہ کو خدائی کے مرتبہ تک بڑھا دیا جاتا ہے اور دوسری جانب غلو سے خدا کا مقام و مرتبہ گھٹ کر لباس انسانی میں نظر آنے لگتا ہے اور غلو کرنے والا خداوند عالم کے لئے جسمانی صفات کا قائل ہوجاتا ہے اسی لئے خداوند عالم نے اہل کتاب کو سب سے پہلے خداوند عالم کے بارے میں ناحق بات کہنے سے ڈرایا ہے:«لا تقولوا علی اللہ الاالحق» خدا کے بارے میں حق کے علاوہ اور کچھ نہ کہو ۔اس کے بعد جناب عیسیٰ(ع) کے بارے میں خدائی سے متعلق ان کے عقیدہ کو باطل قرار دیتے ہوئے یہ ارشاد فرمایا ہے:«انماالمسیح عسی بن مریم رسول اللہ و کلمته»۔بیشک عیسیٰ(ع) اللہ کے رسول اور اس کا کلمہ ہیں۔
اس بناء پر غلو کا نتیجہ تجسیم اور تشبیہ بھی ہے ، اگرچہ اس کے برعکس نظریہ کلی نہیں ہے یعنی تشبیہ و تجسیم کے قائل ہونے کا لازمہ غلو نہیں ہے، البتہ حلول یا اتحاد ( خالق و مخلوق ) کے نظریہ کا لازمہ غلو ہے کیونکہ انسانی جسم میں خداوند عالم کا حلول یا کسی شخص اور خدا کے ایک جسم میں متحد ہوجانے کا لازمہ یہ ہے کہ وہ شخص خدا کے منصب کا مالک ہو عام طور سے لوگوں کے بارے میں غلو حلول یا اتحاد کے ذریعہ ہی کیا جاتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔سورۂ نساء: ۷۱۔
۲۔سورہ مائدہ: ۷۲۔
۳۔سورہ مائدہ: ۷۵۔





آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 June 24