Wed - 2018 Dec 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192083
Published : 15/2/2018 15:11

حضرت فاطمہ(س) اور آسمانی کھانا

روایت میں ملتا ہے کہ اہل بیت اطہار(ع) نے اس خوان سے ایک مہنہ تک تناول فرمایا اور یہ ظرف اس وقت مہدی آل محمد(عج) کے پاس ہے جس میں آپ تناول فرماتے ہیں۔
ولایت پورٹل: قارئین کرام! ختمی مرتبت حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وآلہ و سلم کی دختر گرامی حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا کو نماز سے ایک خاص عشق تھا اور جب بھی اپ کو کوئی حاجت پیش آتی آپ مصلٰی پر کھڑی ہوکر نماز ادا کرکے اللہ کی بارگاہ میں توسل کرتی تھیں۔
چنانچہ ایک مرتبہ کی بات ہے کہ بنت پیغمر(ص) کے بیت اقدس میں تین دن سے کھانے کے لئے کچھ نہیں تھا اہل بیت(ع) نے ان دنوں کو بغیر کچھ کھائے گذارا۔
حضرت علی علیہ السلام اپنے گھر میں داخل ہوئے تو دیکھا رسول خدا(ص) تشریف فرما ہیں اور بی بی دو عالم مصلی عبادت پر نماز میں مشغول ہیں اور ان دونوں حضرات کے درمیان ایک کپڑے سے ڈھکا ہوا  برتن رکھا ہوا ہے  جب حضرت فاطمہ سلام اللہ نماز سے فارغ ہوئیں آپ نے اس برتن سے سرپوش ہٹایا تو وہ ظرف روٹی اور بہترین گوشت سے بھرا ہوا تھا۔
امام علی علیہ السلام نے دریافت فرمایا: بی بی یہ آپ کے لئے کہاں سے آیا ہے؟
یا علی! یہ میرے خدا کی جانب سے میرے لئے بھیجا گیا ہے اور خداوند عالم جسے چاہتا ہے بے حساب عطا کرتا ہے ۔
تبھی سرکار رسالتماب(ص) نے علی(ع) کو مخاطب کرتے ہوئے کہا: یا علی کیا میں تمہیں اسی طرح کا ایک اور واقعہ سناؤں؟
امیرالمؤمنین(ع) نے فرمایا: میں آپ پر قربان! بتلائیے!
جناب رسالتمآب (ص) نے فرمایا: یاعلی ! تمہاری مثال زکریا(ع) کی سی ہے کہ وہ جب بھی مریم(س) کے پاس آتے تھے تو ہمیشہ مریم کو محراب عبادت میں پاتے اور ان کے پاس کھانے کا بھرا ظرف رکھا ہوا ہوتا تھا تو زکریا بھی یہی سوال کرتے تھے کہ مریم یہ کھانا تمہارے لئے کہاں سے آیا؟
مریم جواب دیتیں: خداوند عالم کی جانب سے ،اور خدا جس کو چاہتا ہے روزی پہونچاتا ہے۔
روایت میں ملتا ہے کہ اہل بیت اطہار(ع) نے اس خوان سے ایک مہنہ تک تناول فرمایا اور یہ ظرف اس وقت مہدی آل محمد(عج) کے پاس ہے جس میں آپ تناول فرماتے ہیں۔( بحارالانوار، ج 42، ص 31)۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Dec 19