Tuesday - 2018 Dec 11
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192093
Published : 15/2/2018 17:38

اسلامی ثقافت معاشرہ کی خوش نصیبی کی ضمانت ہے: رہبر انقلاب

اسلامی تمدن کے سامنے یورپ کی ہر چیز کا رنگ پھیکا پڑ گیا اور یہ سلسلہ چوتھی، پانچویں اور چھٹی صدی ہجری میں یونہی جاری رہا۔ البتہ اس کے بعد، کچھ عرصہ کے لئے اسلامی تمدن میں تنزلی واقع ہوگئی یہاں تک کہ نشأت ثانیہ کا آغاز ہوگیا اس کے بعد سے مغربی تمدن نے پھر سے رونق حاصل کرنی شروع کردی۔ لیکن مغربی تمدن، اسلامی تمدن کے غلبہ کے بعد تمام برسوں میں اسلامی تمدن سے ہی فیض حاصل کرتا رہا اور اپنی ضرورتوں کو اسی سے پورا کرتا رہا۔

ولایت پورٹل: حضرت آیت اللہ العظمیٰ خامنہ ای مدظلہ العالی اسلامی تہذیب و ثقافت اور جب سے اس نے وجود پایا ہے ادوار تاریخ سے اب تک کے حالات اور مسافت کی طرف تفصیل سے روشنی ڈالتے ہوئے یوں بیان کیا:
اسلامی ثقافت بہت ہی گرانقدر ثقافت ہے کہ جس میں ایک معاشرے اور انسانی مجموعہ کے لئے بہت اعلیٰ قدر ثقافتی اقدار موجود ہیں جو ایک معاشرے کو قرار واقعی سربلندی خوش نصیبی، عزت واقتدار اور ترقی کی منزلوں پر گامزن ہونے کی ضمانت فراہم کرتی ہیں۔(۱)
یہ ایک حقیقت ہے کہ اسلامی تمدن کے سامنے یورپ کی ہر چیز کا رنگ پھیکا پڑ گیا اور یہ سلسلہ چوتھی، پانچویں اور چھٹی صدی ہجری میں یونہی جاری رہا۔ البتہ اس کے بعد، کچھ عرصہ کے لئے اسلامی تمدن میں تنزلی واقع ہوگئی یہاں تک کہ نشأت ثانیہ کا آغاز ہوگیا اس کے بعد سے مغربی تمدن نے پھر سے رونق حاصل کرنی شروع کردی۔ لیکن مغربی تمدن، اسلامی تمدن کے غلبہ کے بعد تمام برسوں میں اسلامی تمدن سے ہی فیض حاصل کرتا رہا اور اپنی ضرورتوں کو اسی سے پورا کرتا رہا۔(۲)
اور آج اسلامی تمدن ہے جو دنیا میں عظیم تبدیلیوں کا منشاء قرار پایا ہے،اسلامی ثقافت نے یورپی روشن خیالوں کے افکار کو للکارتے ہوئے مغرب میں لہرانے  والے لیرل ڈیموکریسی کو بھی شک و تردید کے گھیرے میں لا کھڑا کیا ہے۔ مسلمانوں کے ایک ارب سے زیادہ عظیم معاشرے میں اسلامی تہذیب و ثقافت استقلال و خود مختاریت پر مبنی جذبے کی تبلیغ و حوصلہ افزائی کرتی ہے اور سوق الجیشی و حکمت عملی نیز زمین دوز ذرائع و ذخائر منجملہ تیل کے ذخیرے کے عنوان سے دنیا کے اس حساس ترین علاقہ میں اس چیز نے کچھ زیادہ ہی شدّت حاصل کرلی ہے۔ اسلامی ثقافت نے اس عظیم معاشرے کو حیات دوبارہ کی فکر میں ڈال دیا ہے۔(۳)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔عالمی اولمپک میں شامل کھلاڑیوں سے خطاب:۲۵ستمبر۲۰۰۲ء۔
۲۔سپاہ پاسداران کے کمانڈروں سے خطاب:۲۰ستمبر۱۹۹۴ء۔
۳۔صوبہ سیستان ،بلوچستان کے عوام سے خطاب:۲۵فروری۲۰۰۳ء۔


 




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Dec 11