Wed - 2018 Nov 14
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192496
Published : 9/3/2018 6:56

ہم قاتلوں کو خوش آمدید نہیں کہتےجیسے نعروں سے لندن میں بن سلمان کا استقبال

سعودی ولیعہد محمد بن سلمان کے دورہ برطانیہ کے خلاف لندن میں وزارت عظمی کے دفتر کے باہر بڑی تعداد میں لوگوں نے مظاہرہ کیا۔

431.jpg
ولایت پورٹل:احتجاجی مظاہرے کے شرکا نے آل سعود حکومت کے لئے برطانوی حکومت کی حمایتوں کی مذمت کرتے ہوئے کہاکہ برطانوی عوام اپنی حکومت کے برخلاف یمن پر مسلط کی گئی جنگ میں بے گناہ انسانوں کے قتل اور وہاں ہونے والے جرائم پر اپنی آنکھیں بند نہیں  رکھ سکتے۔ مظاہرین اپنے ہاتھوں میں ایسے پلی کارڈ اٹھائے ہوئے تھے جن پرلکھا تھا کہ سعودی عرب کو ہتھیاروں فروخت بند کی جائے اور یمن پر جارحیت بند کی جائے۔ مظاہرین کے ہاتھوں میں موجود پلی کارڈ پر بن سلمان کا نام جنگی مجرم کے طور پر لکھا تھا۔ مظاہرین مطالبہ کررہے تھے کہ بن سلمان پر مقدمہ چلایا جائے،برطانیہ کی حزب اختلاف کی جماعت لیبر پارٹی نے بھی جنگ یمن میں برطانوی حکومت کی کارکردگی پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ دوہزار پندرہ کے بعد سے سعودی عرب کے لئے برطانوی ہتھیاروں کی فروخت میں بے تحاشا اضافہ ہوا ہے اور برطانیہ سعودی عرب کے لئے فوجی مشیر کے طور پر کام کررہا ہے۔ برطانوی لیبر پارٹی کے سربراہ جرمی کوربین نے سعودی ولیعہد محمد بن سلمان کے دورہ لندن کے موقع پر یمن کی جنگ میں سعودی عرب کے لئے برطانوی حکومت کی حمایت کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اب تک چھے لاکھ یمنی بچے سعودی حملوں اور یمن میں قحط و بھوک مری کی وجہ سے اپنی جان سے ہاتھ دھو چکے ہیں،انہوں نے  کہا کہ یمن میں جنگ جلد سے جلد بند ہونی چاہئے - برطانوی دارالعوام میں تقریر کرتے ہوئے جرمی کوربین نے دہشت گرد گروہوں اور سعودی حکومت کے درمیان رابطوں کا ذکرکرتے ہوئے کہا کہ برطانوی حکومت گذشتہ ایک سال سے دہشت گردوں کے لئے سعودی حکومت کی حمایت سے متعلق رپورٹوں کو چھپا کر رکھے ہوئے ہے اور انہیں  عام کرنے کی اجازت نہیں دے رہی ہے،برطانوی وزیراعظم تھریسا مئے نے بھی پارلیمنٹ میں حزب اختلاف کے لیڈر جرمی کوربین کے سخت بیان کا جواب دیتے ہوئے یمن میں سعودی عرب کی وحشیانہ جنگ اور جارحیت کی ایک بار پھر حمایت کی اور دعوی کیا کہ سعودی جنگ کو اقوام متحدہ کی حمایت حاصل کی ہے۔
سحر





آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Nov 14