Sunday - 2018 Nov 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192498
Published : 9/3/2018 7:22

مغربی ممالک میں مسلمان خواتین کو درپیش مسائل(ایک تجزیہ)

ایسا لگ رہا ہے کہ اسلام اور مغرب کے درمیان فاصلہ دن بدن بڑھ رہا ہے اور عدم اطمینان کی دیوار نے ان دونوں کو ایک دوسرے سے علیحدہ کردیا ہے۔

432.jpg
ولایت پورٹل:مغرب کی دنیا میں عالم اسلام کو پوری طرح خارجی، تاریخ کے کونے میں واقع مغربی ماڈرنزم کے مد مقابل سمجھا جاتا ہے،حالانکہ دنیائے اسلام میں مغرب کی دنیا ایک جھوٹی فریبی، سامراج پسند اور تمام مسائل کا جڑ ہے،ہمارے نبی پاک کے زمانے میں، مسلمان خواتین بہت سارے بڑے مسائل اور چیلنجز پر غالب آتی تھیں،پیغمر ﷺ کے خاندان کی خواتین اپنی سیاسی، معاشی اور معاشرتی زندگی میں کافی فعال تھیں،وہ ان سب کے علاوہ ایک جنگ سے لڑ رہی تھیں جو کہ اسلام سے پہلے خواتین کے مقام کے بارے میں لوگوں کی نگاہ تھی، جو خواتین کو ایک چیز کی طرح سمجھتے تھے۔ انہوں نے اسلام کے بعد ہی اپنا اصلی مقام پا لیا لیکن آج کل کے دور میں بہت سارے ترقی یافتہ ممالک میں بھی یہ چیز دیکھنے کو نہیں ملتی،اج کل مغربی ممالک میں رہنے والی خواتین بہت سارے مسائل کا سامنا کر رہی ہیں جیسے کہ اسٹڈیز یا جاب، روزمرہ کے کام یا مذہبی اعمال میں،پہلا چیلنج خاص کر فرانس میں، حجاب ہے، یہ چند سینٹی میٹر کا کپڑا، مغربی معاشرے سے برداشت نہیں ہوتا،فرانس جبکہ سیکولر ملک ہے، اور بنیادی طور پر عیسائی ہے، اس میں اگر کوئی عیسائی خاتون حجاب میں رہتی ہے اس کا بہت اچھے سے احترام کرتے ہیں لیکن مسلمان خاتون اگر حجاب اوڑھ لے، اس کا سامنا احترام سے نہیں ہوگا،اسٹڈیز کے حوالے سے، حجاب ان کی تعلیم میں رکاوٹ بنا دیا گیا ہےحجاب کے ساتھ پڑھائی کرنا ایک انتہائی دشوار کام ہے،یہ بات کہ حجاب کا زمانہ گزر چکا ہے اور فرانس جیسے ممالک میں اس کے لئے کوئی گنجائش نہیں، یہ باتیں اب مسلمان روشن خیالوں اور مغربی مسلمانوں میں  بھی پروان چڑھ رہی ہے۔ لیکن اگر آسمانی کتابوں کی طرف دیکھا جائے تو حجاب عیسائیوں کے لئے بھی واجب ہے،میں چاہتا ہوں کہ تم لوگ یہ جان لو کہ ہر آدمی کے سر کا تاج عیسیٰ ہیں اور ہر خاتون کے سر کا تاج اس کا شوہر ہے اور عیسیٰ کے سر کا تاج خدا ہے۔۔۔۔ مرد کے لئے ضروری نہیں کہ اپنا سر ڈھک دے کیونکہ وہ خدا کی عظمت و جلال کا ترجمان ہوتا ہے لیکن عورت، مرد کے جلال کی ترجمان ہوتی ہے۔ اور مرد عورت سے پیدا نہیں ہوا، بلکہ عورت مرد سے پیدا ہوئی، اور مرد عورت کے لئے پیدا نہیں ہوا، بلکہ عورت مرد کے لئے پیدا کی گئی ہے،اسی لئے اور فرشتوں کی وجہ سے عورت کو چاہئے کہ اپنا سر ڈھک دے تا کہ پتہ چلے کہ وہ کسی کے تحتِ فرمان ہے۔ ( Corinthians 3 / 16).قرآن میں فرمایا گیا ہے کہ “مومنہ خواتین سے کہہ دیجیے کہ اپنی آنکھیں نیچھے رکھیں اور اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کریں اور اپنے زیورات اور ان کی جگہ کو آشکار نہ کریں (جیسے کہ گردن اور چھاتی) (سوره نور – آیہ 31)دین کی راہ میں سختیاں اٹھانے والی پہلی خواتین یہ ہیں: فرعون کی زوجہ حضرت آسیہ، جو کہ حضرت موسیٰ کے پیغام پر ایمان کی وجہ سے تشدد کا نشانہ بنیں اور آخر کار مار دی گئیں،حضرت فاطمہ الزہراء سلام اللہ علیہا پیغمبر اسلامﷺ کی سب سے قریبی اور پیاری صاحبزادی، اسلام کے اصولوں کے دفاع کی راہ میں شہید کردی گئی۔ حضرت زینب کبریٰ امام علی اور فاطمہ الزہراء کی بیٹی اور امام حسین کی بہن جن کا کردار اور کارکردگی عقائد اور اصولوں کے دفاع کی راہ میں زبان زد عام و خاص ہے،ہمارا خدا پر ایمان اور ان مثالی خواتین کا کردار ہمیں یہ درس دیتا ہے کہ اپنے عقائد اور ایمان کی حفاظت کے لئے اگر لڑنا پڑے تو ہم لڑنے سے بھی پیچھے نہیں ہٹنے والے۔
Iuvmpress





آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Nov 18