Sunday - 2018 Nov 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 192530
Published : 10/3/2018 20:31

فاطمہ(س) کے نور سے فرشتوں کی آنکھیں خیرہ ہوجاتی تھیں: رہبر انقلاب

خداوندعالم نے اپنی کنیز خاص فاطمہ زہراء(س) کا امتحان لیا خدا کی بارگاہ حساب و کتاب کی بارگاہ ہے، اس نے جو کچھ دیا ہے وہ حساب و کتاب کے ساتھ دیا ہے وہ اپنی اس خاص کنیز کے درگذر، ایثار، معرفت، راہ خدا میں شہید ہونے اور الٰہی مقاصد کے لئے جان دینے کو جانتا تھا لہٰذا اس نے فاطمہ زہراء(س) کو اپنے فیوضات کا مرکز قرار دیا ہے۔

ولایت پورٹل: آپ حضرات ملاحظہ کریں کہ فاطمہ زہراء(س) ان فضائل سے کس سن میں آراستہ ہوگئی تھیں؟ یہ ساری درخشندگی آپ(س) نے عمر کی کتنی مدت میں حاصل کرلی تھی؟ مختصر عمر میں (بنابراختلاف) اٹھارہ سال، بیس سال، پچیس سال میں یہ فضائل ایسے ہی حاصل نہیں کئے جاسکتے:« اِمْتَحَنَکِ اللّٰهُ الَّذِیْ خَلَقَکِ قَبْلَ اَنْ یَخْلُقَکِ فَوَجَدَکِ لِمَا   اِمْتَحَنکِ صَابِرَۃً»۔(۱)
ترجمہ:خداوندعالم نے اپنی کنیز خاص فاطمہ زہراء(س) کا امتحان لیا خدا کی بارگاہ حساب و کتاب کی بارگاہ ہے، اس نے جو کچھ دیا ہے وہ حساب و کتاب کے ساتھ دیا ہے وہ اپنی اس خاص کنیز کے درگذر، ایثار، معرفت، راہ خدا میں شہید ہونے اور الٰہی مقاصد کے لئے جان دینے کو جانتا تھا لہٰذا اس نے فاطمہ زہراء(س) کو اپنے فیوضات کا مرکز قرار دیا ہے۔
میں نے ایک روایت میں پڑھا ہے:فاطمہ زہراء(س) کا نور اتنا ہے کہ جس سے ملأ اعلیٰ کے کروبیاں (فرشتوں) کی آنکھیں خیرہ ہوجاتی ہیں:«زَھَرَ نُورُھَا لِمَلَآئِکَةِ السَّمَاء»۔(۲)
آپ کا نور آسمان والوں کے لئے چمکتا ہے، اس نور سے ہم نے کیا فائدہ اٹھایا؟ اس درخشاں ستارے کی روشنی میں ہم خدا کی طرف بڑھیں کہ یہی راہِ بندگی ہے، یہی سیدھا راستہ ہے اور فاطمہ(س) نے اسے طے کیا ہے اور ان بلند مدارج پر فائز ہوئی ہیں۔ اگر آپ حضرات غور کریں تو خدا نے ان کے جوہر کو بھی بلند کیا ہے، اس کی دلیل یہ ہے کہ خدا جانتا تھا کہ یہ ذات، عالم مادہ اور عالم ناسوت۔(۳) میں بہترین طریقہ سے کامیاب ہوگی:«اِمْتَحَنَکِ اللّٰهُ الّذِیْ خَلَقَکِ قَبْلَ اَنْ یَخْلُقَکِ فَوَجَدَکِ لِمَا اِمْتَحَنَکِ صَابِرَۃً....»۔ قضیہ یہ ہے کہ اگر خداوند عالم اپنا لطف اس جوہر سے مخصوص کرتا ہے تو اس کا حصہ آپ سے اس لئے مربوط ہے۔ وہ جانتا ہے کہ یہ کس طرح امتحان سے عہدہ برآ ہوںگی ورنہ بہت سے لوگوں کا خمیر اچھا تھا لیکن سب اس  سے عہدہ برآ نہیں ہوسکے۔ فاطمہ زہراء(س) کی زندگی کا یہ حصہ وہ ہے جس کی ضرورت ہمیں اپنی نجات کے لئے ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔روضۃ المتقین فی شرح من لایحضرہ الفقیہ، ج۵ص۲۲۳۔اس خدا نے، جس نے تمہیں پیدا کیا ہے، تمہیں پیدا کرنے سے پہلے تمہارا امتحان لے لیا ہے پس آزمائش پر صبر کرو۔
۲۔بحارالانوار، ج۴۳ص۱۷۳، ان کا نور آسمان والوں کے لئے ایسا ہے جیسا اہل زمین کے لئے ستاروں کا نور۔
۳۔ عالم مادہ۔

 




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Nov 18