Thursday - 2018 Sep 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 193426
Published : 26/4/2018 5:57

ایٹمی معاہدہ میں نہ ایک جملہ کم ہوگا نہ زیادہ:ایرانی صدر

اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر ڈاکٹر حسن روحانی نے کہا ہے جو ممالک ایٹمی معاہدے میں تبدیلی چاہتے ہیں انہیں جان لینا چاہئے کہ یا تو وہ ایٹمی معاہدے کو موجودہ صورت میں قبول کریں یا پھر پورے معاہدے کو خیر باد کہہ دیں۔

ولایت پورٹل:اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر ڈاکٹر حسن روحانی نے اپنے دورہ مشرقی آذربائیجان کے اختتام پر ایک پریس کانفرنس میں کہا ہے کہ ایٹمی معاہدے میں ایک جملے کا بھی نہ تو اضافہ ہو گا اور نہ ہی کوئی جملہ اس میں سے کم کیا جائے گا،انہوں نے کہا کہ اگر یورپ چاہتا ہے کہ امریکی صدر ٹرمپ ایٹمی معاہدے میں باقی رہیں تو اس کی قیمت خود یورپی ممالک ادا کریں، ڈاکٹر حسن روحانی نے اس بات کا ذکر کرتے ہوئے کہ ایران نے ایٹمی معاہدے کے خاتمے کی صورت میں اپنے لئے نیا اور جامع پروگرام تیار کر رکھا ہے کہا کہ امریکی صدر کو یہ جان لینا چاہئے کہ ایٹمی معاہدے کی ناکامی کی صورت میں ایران پوری برق رفتاری کے ساتھ اپنی پرامن ایٹمی سرگرمیاں دوبارہ شروع کر دے گا،اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ ایٹمی معاہدے میں کوئی بھی تبدیلی قابل قبول نہیں ہے، کہا کہ جو ممالک ایٹمی معاہدے میں تبدیلی چاہتے ہیں انہیں جان لینا چاہئے کہ یا تو وہ ایٹمی معاہدے کو موجودہ صورت میں قبول کریں یا پھر پورے معاہدے کو خیر باد کہہ دیں، ڈاکٹر حسن روحانی نے علاقے میں امریکی  فوجی موجودگی پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ امریکا کی فوجی موجودگی علاقے میں بدامنی کا باعث ہے،انہوں نے کہا کہ عربوں سے ٹرمپ کا یہ کہنا کہ اگر زندہ رہنا چاہتے ہو تو ہمیں پیسے دیں، یہ امت اسلامیہ کی توہین ہے،اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر نے کہا کہ علاقے کی سبھی اقوام کی جان و مال اور عزت و آبرو ایران کے لئے بہت ہی اہم ہے اور ایران نے ہمیشہ علاقے میں صلح و دوستی کا راستہ اپنایا ہے-
سحر





آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Sep 20