Sunday - 2018 Sep 23
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 193553
Published : 3/5/2018 16:52

نہج البلاغہ میں اللہ سے انس کی لذت

حدیث قدسی میں خداوند عالم کا ارشاد ہے: «اَنَا جَلیسُ مَنْ ذَکَرَنی؛ میں اس کا ہم نشین ہوں جو مجھے یاد کرتا ہے۔جسمانی لذت اور روحانی لذت کے درمیان زمین و آسمان اور حیوان و انسان جتنا فاصلہ ہے چنانچہ ایک عارف نے فرمایا: اگر بادشاہ اور شہزادے یہ درک کرلیتے کہ مناجات اور یاد خدا میں کتنی لذت ہیں تو وہ سب تخت و تاج کو ٹھوکر مار کر مناجات میں مشغول ہوجاتے۔

ولایت پورٹل: انسان کی خصوصیات میں سے ایک خصوصیت یہ ہے کہ اسے لذت کی ضرورت ہوتی ہے اس کا جسم بھی لذت طلب ہے اور اس کی روح بھی،لیکن فرق یہ ہے کہ جسمانی لذات ہر ایک کے لئے ہیں اور ان کا ادراک جلد ہی ہوجاتا ہے لیکن روحانی و معنوی لذتیں ایسی نہیں ہیں یہ ہر ایک کے حصہ میں نہیں آتیں، بلکہ ان کے لئے کچھ خاص شرائط اور مقدمات کی ضرورت ہوتی ہے اور جب ایک تسلسل کے ساتھ انجام پائے تو روحانی لذات حاصل ہوتی ہیں اور یقیناً ان لذتوں کو کسی بھی مادی لذت سے مقائسہ نہیں کیا جاسکتا۔
چنانچہ حدیث قدسی میں خداوند عالم کا ارشاد ہے: «اَنَا جَلیسُ مَنْ ذَکَرَنی؛ میں اس کا ہم نشین ہوں جو مجھے یاد کرتا ہے۔جسمانی لذت اور روحانی لذت کے درمیان زمین و آسمان اور حیوان و انسان جتنا فاصلہ ہے چنانچہ ایک عارف نے فرمایا: اگر بادشاہ اور شہزادے یہ درک کرلیتے کہ مناجات اور یاد خدا میں کتنی لذت ہیں تو وہ سب تخت و تاج کو ٹھوکر مار کر مناجات میں مشغول ہوجاتے۔
قارئین کرام! آئیے ہم نہج البلاغہ کے شفاف آئینہ میں اس انس کی لذت سے آشنا ہونے کی کوشش کرتے ہیں چنانچہ امیرالعارفین علی بن ابی طالب علیہ السلام فرماتے ہیں:’’اَللّٰھُمَّ اِنَّکَ اٰنِسُ الْاٰنِسِیْنَ لِاَوْلِیَائِکَ وَاَحْضَرُھُمْ بِالْکِفَایَۃِ لِلْمُتَوَکِّلِیْنَ عَلَیْکَ۔ تُشَاھِدُھُمْ فِیْ سَرَائِرِھِمْ وَتَطَّلِعُ عَلَیْھِمْ فِیْ ضَمَائِرِھِمْ وَتَعْلَمُ مَبْلَغَ بَصَائِرِھِمْ فَاَسْرَارُھُمْ لَکَ مَکْشُوْفَۃٌ وَقُلُوْبُھُمْ اِلَیْکَ مَلْھُوْفَہٌ اِنْ اَوْحَشَتْھُمُ الْغُرْبَۃُ اٰنَسَھُمْ ذِکْرُکَ وَاِنْ صُبَّتْ عَلَیْھِمُ الْمَصَائِبُ لَجَأُوْااِلٰی الْاِسْتِجَارَۃِ بِکَ‘‘۔(۱)
ائے اللہ! تو اپنے دوستوں کے لئے تمام انس رکھنے والوں سے زیادہ انیس و قریب ہے اور جو تجھ پر بھروسہ رکھنے والے ہیں ،ان کی حاجت روائی کے لئے ان سب سے زیادہ آمادہ اور پیش پیش ہے۔ تو ان کی باطنی کیفیتوں کو دیکھتا اور ان کے دل کی گہرائیوں میں پوشیدہ بھیدوں کو جانتا ہے اور ان کی معرفتوں اور بصیرتوں کی رسائی کی حد سے باخبر ہے۔ ان کے راز تیرے سامنے آشکار اور ان کے دل تیرے فراق میں بیتاب و فریاد کناں ہیں۔اگر تنہائی سے ان کا جی گھبراتا ہے تو تیرا ذکر ان کا مونس بن جاتا ہے اور اگر مصیبتیں آن پر آپڑتی ہیں تو وہ تیرے دامن میں پناہ حاصل کرلیتے ہیں۔
اور ایک دوسرے مقام پر فرماتے ہیں:’’وَاِنَّ لِلذِّکْرِلَاَھْلٌ اَخَذُوْہُ مِنَ الدُّنْیَا بَدَلاً ‘‘۔(۲)
ترجمہ:بے شک یاد خدا نے کچھ ایسے شائستہ افراد پائے ہیں جنھوں نے اس کا دنیا کی تمام نعمتوں کے بدلے میں انتخاب کرلیا ہے۔
ایک دوسرے خطبہ میں امام مہدی موعود عجل اللہ تعالیٰ فرجہ کی بشارت دیتے ہوئے آخر کلام میں آخری زمانہ کے ایک ایسے گروہ کا تذکرہ کرتے ہیں جن میں شجاعت وحکمت اور عبادت ایک ساتھ جمع ہوگئی ہے۔ چنانچہ آپ فرماتے ہیں:’’ثُمَّ لَیُشْحَذَّنَ فِیْھَا قَوْمٌ شَحْذَالْقَیْنِ النَّصْلَ تُجْلٰی بِالتَّنْزِیْلِ اَبْصَارُھُمْ وَیُرْمٰی بِالتَّفْسِیْرِ فِیْ مَسَامِعِھِمْ وَیُغْبَقُوْنَ کَأْسَ الْحِکْمَۃِ بَعْدَ الصَّبُوْحِ‘‘۔(۳)
ترجمہ: اس وقت ایک قوم (کو حق کی سان پر) اس طرح تیز کیاجائے گا جس طرح لوہار تیر کی باڑ تیز کرتا ہے ۔قرآن کے ذریعہ پردہ ہٹا کر ان کی آنکھوں میں جلا پیدا کردی جائے گی اور ان کے کانوں میں اس کی تفسیر اور معنی القاء کئے جائیں گے اور صبح و شام حکمت کے چھلکتے ہوئے ساغر پلائے جائیں گے۔اور وہ بادۂ معرفت سے سرشار ہوجائیں گے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔خطبہ؍ ۲۲۵۔
۲۔خطبہ ؍۲۲۰۔
۳۔خطبہ ؍۱۵۰۔




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2018 Sep 23