Sunday - 2019 January 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 193737
Published : 14/5/2018 16:47

قیامت کا فلسفہ

قیامت کا ایک فلسفہ یہ بھی ہے کہ صالحین اور بدکار نیز مؤمنین و کافرین کے بارے میں عدل الٰہی کا مکمل نفاذ ہوجائے کیونکہ دنیا میں تمام انسانوں کے مخلوط ہونے اورباہم زندگی گذارنے کی بناء پر عدل الٰہی کے مطابق جزا و سزا کے قانون پر مکمل عمل ناممکن ہے،اس بناء پر ایک ایسی جگہ کا وجود ضروری ہے کہ جہاں پروردگار عالم کے قانون جزا و سزا کے نفاذ کا مکمل امکان پایا جاتا ہو۔
ولایت پورٹل: قیامت، اللہ تعالیٰ کی رحمت، حکمت اور اس کی عدالت کی تجلی کا مقام ہے اس بارے میں قرآن مجید میں یہ ارشاد ہوتا ہے:{کَتَبَ عَلَی نَفْسِہِ الرَّحْمَۃَ لَیَجْمَعَنَّکُمْ إِلَی یَوْمِ الْقِیَامَۃِ لاَرَیْبَ فِیہِ}۔(۱)
ترجمہ:اس نے اپنے اوپر رحمت کو لکھ لیا ہے یقیناً وہ تمہیں روز قیامت ایک جگہ جمع کرے گا، جس میں کوئی شک نہیں ہے۔
رحمت، پروردگار عالم کے صفات کمالیہ میں ہے جس کا مفہوم یہ ہے کہ پروردگار عالم مخلوقات کی ضرورتوں کا پورا کرنے والا ہے اور ان میں سے ہر ایک کو اس منزل کمال کی طرف رہنمائی کرکے اس کے مناسب و شائستہ مقام تک پہنچاتا ہے۔(۲)انسانی زندگی کی خصوصیات واضح طور پر انسان کی ابدی زندگی کی صلاحیتوں پر دلالت کرتی ہیں۔لہٰذا ایک ایسی جگہ ہونا ضروری ہے کہ جہاں انسان ابدی زندگی گذار سکے۔
قیامت حکمت الٰہیہ کے عین مطابق بھی ہے کیونکہ یہ دنیا کہ جو مسلسل حرکت اور تغیر میں ہے اگر یہ اس نقطہ تک نہ پہنچے کہ جہاں قرار و ثبات ہو تو یہ دنیا اپنی آخری غرض و غایت اور منزل تک نہیں پہنچے گی اور حکیم مطلق خدا سے بے مقصد کام انجام پانا محال ہے۔جیسا کہ ارشاد ہوتا ہے:{أَفَحَسِبْتُمْ أَنَّمَا خَلَقْنَاکُمْ عَبَثًا وَأَنَّکُمْ إِلَیْنَا لاَتُرْجَعُونَ}۔(۳)
ترجمہ: کیا تم نے یہ گمان کرلیا ہے کہ ہم نے تم کو بیکار پیدا کیا ہے اور تم ہماری طرف پلٹا کر نہیں لائے جاؤگے۔
دوسرے مقام پر یہ بیان کرنے کے بعد کہ آسمان اور زمین اور جو کچھ ان کے درمیان ہے خدا نے ان سب کو فضول پیدا نہیں کیا ہے قیامت کا تذکرہ کرنے کے بعد یہ ارشاد فرماتا ہے:{إِنَّ یَوْمَ الْفَصْلِ مِیقَاتُہُمْ أَجْمَعِینَ}۔(۴)
قیامت کا ایک اور فلسفہ یہ ہے کہ صالحین اور بدکار نیز مؤمنین و کافرین کے بارے میں عدل الٰہی کا مکمل نفاذ ہوجائے کیونکہ دنیا میں تمام انسانوں کے مخلوط ہونے اورباہم زندگی گذارنے کی بناء پر عدل الٰہی کے مطابق جزا و سزا کے قانون پر مکمل عمل ناممکن ہے،اس بناء پر ایک ایسی جگہ کا وجود ضروری ہے کہ جہاں پروردگار عالم کے قانون جزا و سزا کے نفاذ کا مکمل امکان پایا جاتا ہو اس بارے میں قرآن مجید فرماتا ہے:{أَمْ نَجْعَلُ الَّذِینَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ کَالْمُفْسِدِینَ فِی الْأَرْضِ أَمْ نَجْعَلُ الْمُتَّقِینَ کَالْفُجَّارِ}۔(۵)
ترجمہ:کیا ہم مؤمنین و صالحین کو روئے زمین پر فساد پھیلانے والوں اور پرہیزگاروں کو فاجروں کے برابر قرار دیں گے؟
نیز ارشادہوتا ہے:{أَفَنَجْعَلُ الْمُسْلِمِینَ کَالْمُجْرِمِین مَا لَکُمْ کَیْفَ تَحْکُمُونَ}۔(۶)
ترجمہ:کیا ہم سر تسلیم خم کرنے والوں کو مجرمین کے برابر قرار دیں گے تمہیں کیا ہو گیا ہے کیا فیصلہ کرتے ہو؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔انعام:۱۲        
۲۔المیزان ج ۷، ص ۲۵
۳۔مؤمنون: ۱۱۵
۴۔دخان: ۴۰
۵۔سورہ ص: ۲۸                 
۶۔قلم : ۳۵



 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Sunday - 2019 January 20