Monday - 2019 January 21
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 193860
Published : 20/5/2018 11:36

افطار کے آداب(2)

امام جعفر صادق علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں:’’ جو مؤمن اپنے کسی مؤمن بھائی کو رمضان میں افطار کرائے خداوند عالم اسے اللہ کی راہ میں 30 غلام آزاد کرنے کا ثواب عطا فرماتا ہے اور ہر افطار کرنے والے کے عوض اس کی ایک دعا بھی مستجاب ہوتی ہے۔
ولایت پورٹل: قارئین کرام! رمضان المبارک کا ہر لمحہ اور ہر گھڑی انسان کے لئے بہت قیمتی ہوتی ہے چونکہ اس مہینہ میں وہ ہر لمحہ اپنے پروردگار کے لطف و رحمت کی آغوش میں رہتا ہے لہذا اس مبارک مہینہ  کے ان گذرتے ہوئے پلوں سے بھر پور استفادہ کرنے کے لئے ہمیں کچھ آداب کی ضرورت ہے:
افطار
یعنی وہ گھڑی اور وہ لمحہ جس میں روزہ دار پورے دن اپنے کو مبطلات سے بچا کر رکھنے کے بعد اب اپنے خدا کی نعمتوں سے بھرے دسترخوان پر بیٹھ کر چند لقمہ کھاکر اپنے کو عبادت،شب بیداری اور سحر خیزی کے لئے آمادہ کرتا ہے۔ لہذا یہ وقت نہایت اہمیت اور فضیلت کا وقت ہے اور اس کے لئے بہت سے آداب نقل ہوئے ہیں چنانچہ ان میں سے ہم بعض کا تذکرہ ذیل میں کررہے ہیں:
۱۔نماز مغرب کے بعد افطار کرنا
حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام سے نقل ہوا ہے کہ روزہ دار کے لئے مستحب ہے کہ اگر اس میں سکت اور طاقت پائی جائے تو وہ نماز مغرب کے بعد افطار کرے۔( وسائل 10/150)
اگرچہ بعض روایات میں کچھ لوگوں کو نماز مغرب سے پہلے ہی روزہ افطار کرلینا چاہیئے تفصیل کے لئے یہ لنک ملاحظہ فرمائیں:

2.دعا پڑھنا
افطار کرنے کے آداب میں سے ایک یہ بھی ہے کہ جب روزہ دار افطار کے لئے لقمہ اٹھائے دعا پڑھے چنانچہ بہت سی دعائیں منقول ہوئی ہیں لیکن امام رضا علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں کہ یہ دعا پڑھی جائے: اللهم لک صمنا بتوفیقک و علی رزقک افطرنا بامرک فتقبله منا و اغفر لنا انک انت الغفور الرحیم
لہذا جو شخص یہ دعا پڑھتا ہے تو اگر اس کے روزہ میں  کوئی کمی یا نقص رہ گئی ہو تو خدا اسے بخش دیتا ہے۔( بحار الانوار 93/312)
۳۔لاالہ الا اللہ پڑھنا
حضرت امام جعفر صادق(ع) نے ارشاد فرمایا:جو شخص اپنے روزہ کو صالح کلام اور صالح عمل کے ساتھ اختتام کو پہونچائے خدا اس کا روزہ قبول کرتا ہے۔
سوال کیا گیا: فرزند رسول(ص)! کلام صالح کیا ہے؟ فرمایا:کلمہ لا الہ الا اللہ کی شہادت اور اپنے مال سے فطرہ نکالنا عمل صالح کا مصداق ہے۔( امالی صدوق 34)
۴۔ان چیزوں سے افطار کرنا
۱۔کھجور
۲پانی
۳۔دودھ
۵۔افطار کرتے وقت سورہ قدر کی تلاوت کرنا
حضرت امام زین العابدین(ع) کا ارشاد ہے: جو شخص افطارکرنے اور سحری کھانے سے پہلے سورہ قدر(إِنَّا أَنزَلْنَاهُ فِي لَيْلَةِ الْقَدْرِ ) پڑھے اسے کا ثواب اس شخص کے مانند ہے کہ جو اللہ کی راہ میں اپنے خون میں میں غلطاں ہوگیا ہو(یعنی شہید ہوا ہو)۔ ( وسائل 10 / 149)
۶۔بسم اللہ الرحمین الرحیم پڑھنا اور دعا مانگنا
حضرت امام موسیٰ کاظم علیہ السلام اپنے آبائے طاہرین(ع) سے نقل فرماتے ہیں :روزہ دار کے لئے افطار کے وقت ایک دعا کرنا مستحب ہے پس جب تم پہلا لقمہ اٹھاؤ تو  کہو: بسم الله یا واسع المغفره اغفر لی.
نیز آپ ایک دوسری روایت میں فرماتے ہیں کہ جو شخص افطار کے وقت بسم الله الرحمن الرحیم پڑھے اللہ تعالٰی اس کے تمام گناہوں کو بخش دیتا ہے۔
مؤمنین کو افطار کرانے کی فضیلت
اس مبارک مہینہ میں جس طرح خود افطار کرنا باعث ثواب ہے اسی طرح اپنے دیگر مؤمنین بھائیوں کو اپنے دسترخوان پر افطار کروانا بھی ثواب ہے چنانچہ امام جعفر صادق علیہ السلام ارشاد فرماتے ہیں:’’ جو مؤمن اپنے کسی مؤمن بھائی کو رمضان میں افطار کرائے خداوند عالم اسے اللہ کی راہ میں 30 غلام آزاد کرنے کا ثواب عطا فرماتا ہے اور ہر افطار کرنے والے کے عوض اس کی ایک دعا بھی مستجاب ہوتی ہے‘‘۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2019 January 21