Friday - 2018 Oct. 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 194824
Published : 4/8/2018 19:0

اسلام میں دوسروں کے ساتھ بھلائی

سلام کی نظر میں دوسروں کے ساتھ احسان اور ان کی مدد و خدمت کرنے کی کوئی حد معین نہیں ہے۔بلکہ احسان و ہمدردی کا دائرہ انسانوں سے گذر کر حیوانات کے ساتھ ہمدردی کو بھی شامل ہوتا ہے۔اپنے ہم نوعوں کے ساتھ احسان کرنا صرف مسلمانوں سے بھی مخصوص عمل نہیں ہے بلکہ چاہے وہ مسلمان ہوں یا غیر مسلمان ہمدردی اور احسان سب کے ساتھ کیا جاسکتا ہے۔

ولایت پورٹل: قارئین کرام! اسلام کی نظر میں دوسروں کے ساتھ احسان اور ان کی مدد و خدمت کرنے کی کوئی حد معین نہیں ہے۔بلکہ احسان و ہمدردی کا دائرہ انسانوں سے گذر کر حیوانات کے ساتھ ہمدردی کو بھی شامل ہوتا ہے۔اپنے ہم نوعوں کے ساتھ احسان کرنا صرف مسلمانوں سے بھی مخصوص عمل نہیں ہے بلکہ چاہے وہ مسلمان ہوں یا غیر مسلمان ہمدردی اور احسان سب کے ساتھ کیا جاسکتا ہے۔چنانچہ رسول اکرم(ص) سے سوال کیا گیا یا رسول اللہ!اللہ کے نزدیک سب سے محبوب بندہ کون ہے؟آپ نے فرمایا:’’وہ شخص جو دوسروں کو زیادہ فائدہ پہونچائے‘‘۔(۱)
اسی طرح حضرت ختمی مرتبت(ص) کے فرامین میں ہمیں پڑھنے کو ملتا ہے:’’اللہ تعالٰی کی نظر میں سب سے افضل و برتر عمل سوختہ و تشنہ دلوں کو ٹھنڈک پہونچانا اور بھوکوں کو سیر کرنا۔اس ذات کی قسم جس کے قبضہ میں محمد کی جان ہے وہ شخص مجھ پر قطعی ایمان نہیں لایا جو خود تو شکم سیر سوئے اور اس کا مسلمان بھائی یا اس کا پڑوسی بھوکا رہے‘‘۔(۲)
یہ حقیقت کہ اسلام دوسروں کی خدمت اور ان کے ساتھ احسان اور نیکی کی تاکید کرتا ہے اور یہ تاکیدات رہنمایان دین کے کلام میں متعدد تعبیرات اور پیرائے میں ہمیں دیکھنے کو ملتی ہے جیسا کہ صادق آل محمد حضرت امام صادق علیہ السلام سے نقل ہوا ہے فرمایا:’’تین کام ایسے ہیں جو شخص بھی ان میں سے کوئی ایک انجام دیدے اللہ تعالٰی اس کے لئے جنت کو واجب قراردیتا ہے۔۱۔تنگدستی میں بخشش اور سخاوت کرنا۔۲۔ہر انسان کے ساتھ کشادہ روئی اور اخلاق کے ساتھ پیش آنا۔۳۔حقوق الناس کا خیال رکھنا‘‘۔(۳)
اور اسی حقیقت کو امام علیہ السلام اللہ تعالٰی کے کلام سے لیتے ہوئے اس طرح فرماتے ہیں:’’مخلوق میری عیال اور ان کے رزق کی ذمہ داری مجھ پر ہے،پس میرے نزدیک سب سے محبوب بندہ وہ ہے جو ان کی ضرورتوں کو پورا کرنے کی کوشش کرے اور ان کی نسبت دوسروں سے زیادہ مہربان ہو‘‘۔(۴)
قارئین! آپ نے ملاحظہ فرمایا کہ یہاں بھی کہیں مسلمان کا ذکر نہیں ہوا بلکہ لفظ’’مخلوق‘‘ کا استعمال ہوا ہے کہ جس کا اطلاق صرف انسان ہی نہیں بلکہ غیر انسان پر بھی ہوتا ہے۔
مذکورہ بالا چیز احسان کا ایک طریقہ اور مدد کا ایک راستہ تھی جبکہ اسلام نے اجتماعی خدمتیں اور امداد کے لئے نفسیاتی اور سائکلوجیکل مدد پر بھی توجہ دلائی ہے جیسا کہ ’’دوسروں کو خوشی پہونچنا اور ان کے دل کو شاد کرنا ‘‘وغیرہ کو بطور نمونہ بیان کیا جاسکتا ہے یہاں تک کہ احادیث کی کتب میں مکمل ایک باب قائم کیا گیا ہے:’’باب ادخال السرور علی المؤمنین‘‘وارد ہوا ہے چنانچہ انہیں ابواب میں یہ حدیث ملتی ہے کہ اللہ کے رسول(ص) نے فرمایا:’’بتحقیق! اللہ کے نزدیک سب سے محبوب عمل مؤمنین کو خوش کرنا ہے‘‘۔(۵)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حوالہ جات:
۱۔اصول كافی، باب«الاهتمام بامور المسلمین»، ح 7۔
۲۔شیخ عباس قمی، سفینة البحار، ج 1، ماده «جوع»۔
۳۔شیخ حرّ عاملی، وسائل الشیعه، ج 6، ص 107۔
۴۔اصول كافی، ج 2، باب «السعی فی حاجة المؤمن»، حدیث 10۔
۵۔سابق حوالہ ج 2، باب ادخال السّرور، حدیث 4۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 Oct. 19