Tuesday - 2018 Dec 18
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 194825
Published : 4/8/2018 14:53

بچوں کے جھگڑے کو والدین کیسے نپٹائیں؟

یہی بچپن کی لڑائیاں اور طفلی کے جھگڑے ان کے نفسیات پر اتنا بُرا اثر چھوڑتے ہیں کہ ان کی یادیں آخری عمر میں بھی بھلائی نہیں جاتی اور کبھی تو یہ چھوٹے چھوٹے اوربغیر وجہ کے بچوں کے درمیان جھگڑے والدین کے درمیان عظیم جھگڑوں کا پیش خیمہ بن جاتے ہیں لہذا والدین کے لئے ضروری ہے کہ ایک ایسا منطقی اور عادلانہ طریقہ اپنائے کہ جس کے ذریعہ ان کے درمیان موجود جھگڑا جڑ سے ختم ہوجائے۔
ولایت پورٹل: قارئین کرام! کیا آپ نے کوئی ایسے بھائی اور بہن دیکھے ہیں جو آپس میں لڑائی جھگڑا اور تکرار نہ کرتے ہوں؟ شاید بہت ہی کم ایسا دیکھنے کو ملتا ہو کہ بھائی بہن میں کسی بات کو لیکر تکرار اور جھگڑا نہ ہو ۔ بھائیوں اور بہنوں کے درمیان اختلاف عام چیز ہے اور کسی بھی دلیل و وجہ سے جھگڑا و اختلاف ہوسکتا ہے اور خاص طور پر بچپن اور نوجوانی میں لڑائی شروع ہونے کے لئے کسسی خاص دلیل اور وجہ کی ضرورت نہیں ہوتی بلکہ بہت ہی معمولی اور بے اہمیت چیز بھی ان کے درمیان لڑائی کا سبب بن جاتی ہے لیکن جاذب نظر بات یہ ہے کہ یہ جھگڑے جس سرعت کے ساتھ شروع ہوتے ہیں اسی تیزی کے ساتھ ختم بھی ہوجاتے ہیں۔
لیکن یہی بچپن کی لڑائیاں اور طفلی کے جھگڑے ان کے نفسیات پر اتنا بُرا اثر چھوڑتے ہیں کہ ان کی یادیں آخری عمر میں بھی بھلائی نہیں جاتی اور کبھی تو یہ چھوٹے چھوٹے اوربغیر وجہ کے بچوں کے درمیان جھگڑے والدین کے درمیان عظیم جھگڑوں کا پیش خیمہ بن جاتے ہیں لہذا والدین کے لئے ضروری ہے کہ وہ ہمیشہ ہوشیار رہیں کہ کہیں بچوں کے درمیان ایک معمولی سا اختلاف ان کے معصوم اور پاک رابطہ کو مسموم نہ بنا دے لہذا ایسے مواقع پر والدین کی اہم ذمہ داری یہ ہے کہ وہ جتنی جلدی ہوسکے ایک ایسا منطقی اور عادلانہ طریقہ اپنائے کہ جس کے ذریعہ ان کے درمیان موجود جھگڑا جڑ سے ختم ہوجائے۔




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Dec 18