Saturday - 2018 Dec 15
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 195773
Published : 14/10/2018 9:21

بن سلمان کی بادشاہت شروع ہونے سے پہلے ہی ختم

اگر بن سلمان ولی عہد بننے کے سولہ مہینوں میں اس طرح کی گھناؤنی حرکت کر سکتا ہے تو بادشاہ بننے کے بعد کیا کچھ کرے گا۔

ولایت پورٹل:عربی زبان  کی ویب سائٹ نے 21نے ’’ٹرمپ اور بادشاہ کا بچہ‘‘ کے عنوان سے ایک رپورٹ پیش  کی ہے جس میں اس نے آل سعود مخالف صحافی جمال خاشقجی کے ترکی  میں اس ملک کے قونصل خانہ میں لاپتہ ہونے کے بارے میں لکھتے ہوئے  تحریر کیا ہے کہ اگر بن سلمان ولی عہد بننے کے سولہ مہینوں میں اس طرح کی گھناؤنی حرکت کر سکتا ہے تو بادشاہ بننے کے بعد کیا کچھ کرے گا،رپورٹ میں مزید آیا ہے کہ اس نے ایسے شخص کے قتل کا حکم دیا ہے جو کسی زمانے میں سعود ی عرب کے خفیہ ادارے کے سربراہ ترکی الفصیل کا دست راست تھا لہذا ظاہر سی بات ہے کہ اس کے پاس کہنے کو بہت کچھ تھا لیکن جمال یہ بھی نہیں سوچ رہے تھے کہ ان کے ساتھ ایسا سلوک کیا جائے گا تبھی تو خود چل کر قونصل خانہ میں گئے تھے،ان کے قتل کا حکم کوئی پاگل ہی دے سکتا ہے جس نے ایک لمحہ کے لیے بھی نہیں سوچا کہ اس کے نتائج کیا ہوں گے کیوں کہ اگر یہ قتل ثابت ہوجاتا ہے کہ تو امریکی صدر ٹرمپ کسی بھی صور ت میں بن سلمان کو تحت سلطنت پر  نہیں بیٹھنے دے گا،اگر چہ بن سلمان نے ایسا پہلی بار نہیں کیا بلکہ سعودی عرب میں آئے دن مخالفین کا گلہ دبا دیا جاتا ہے۔



آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 Dec 15