Wed - 2018 Dec 12
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 196847
Published : 6/12/2018 15:34

آپ کا دوست کون؟

اہل بیت علیہم السلام سے منقول روایات میں اس امر کی طرف خصوصی طور پر اشارات ملتے ہیں۔کہ انسان قیامت کے دن ان افراد کے ساتھ محشور ہوگا اور اٹھایا جائے گا کہ جن کے ساتھ وہ اس دنیا میں رہتا تھا،جن کے ساتھ اس کے تعلقات اور روابط تھے، لہذا ہمیں کسی سے دوستی کرنے سے پہلے اور کسی سے تعلقات بڑھانے سے پہلے نہایت احتیاط کرنا چاہیئے کہ ہم کس سے دوستی کرنے جارہے ہیں اور کس کی طرف ہم نے تعلقات کا ہاتھ بڑھایا ہے۔

ولایت پورٹل: کسی شخص سے دوستی اور اس سے رابطہ اور تعلقات اس حد تک اہمیت کے حامل ہیں کہ یہ انسان کی سعادت کا سبب بھی بن سکتے ہیں اور بدبختی کا بھی۔چنانچہ کسی کا دوست بننے سے پہلے یا کسی کو اپنا دوست بنانے سے پہلے یہ جان لینا بہت ضروری ہے کہ وہ کس شخص سے تعلقات بڑھا رہا ہے؟ چنانچہ اہل بیت علیہم السلام سے منقول روایات میں اس امر کی طرف خصوصی طور پر اشارات ملتے ہیں۔کہ انسان قیامت کے دن ان افراد کے ساتھ محشور ہوگا اور اٹھایا جائے گا کہ جن کے ساتھ وہ اس دنیا میں رہتا تھا،جن کے ساتھ اس کے تعلقات اور روابط تھے، لہذا ہمیں کسی سے دوستی کرنے سے پہلے اور کسی سے تعلقات بڑھانے سے پہلے نہایت احتیاط کرنا چاہیئے کہ ہم کس سے دوستی کرنے جارہے ہیں اور کس کی طرف ہم نے تعلقات کا ہاتھ بڑھایا ہے۔
چنانچہ ایک روایت میں وارد ہوا ہے کہ ایک عرب کا دیہاتی پیغمبر اکرم(ص) کی خدمت میں شرفیاب ہوا اور عرض کی: یا رسول خدا(ص) قیامت کب برپا ہوگی؟ ابھی حضرت اس کے سوال کا جواب بھی نہ دینے پائے تھے کہ نماز کا وقت ہوگیا اور مسجد سے بلال کی صدائے اذان آنے لگی،پیغمبر اکرم(ص) نماز کے لئے تشریف لے گئے اور نماز پڑھ کر فارغ ہوئے تو فرمایا:’’وہ شخص کہاں ہے جو قیامت کے متعلق دریافت کررہا تھا؟اس دیہاتی نے جواب دیا: یا رسول اللہ(ص) میں ہوں۔
حضرت نے فرمایا:تم نے قیامت کے لئے کیا انتظام کررکھا ہے؟
عرض کیا: یا رسول اللہ(ص)! خدا کی قسم!میرے پاس بس یہی مختصر سی نماز اور روزہ ہیں اور ساتھ میں یہ کہ میں اللہ اور اس کے پیغمبر سے محبت کرتا ہوں اور بس!
رسول خدا(ص) نے فرمایا: قیامت کے دن ہر شخص اس کے ساتھ محشور ہوگا جس سے دنیا میں اس کی دوستی ہوگی۔
اور خطیب بغدادی نے اپنی مشہور کتاب تاریخ بغداد میں رسول خدا(ص) سے ایک دوسری روایت نقل کی ہے جس میں آپ(ص) کا ارشاد ہے:’’جو شخص کسی قوم کے کردار کی وجہ سے اس سے محبت کرتا ہوگا وہ قیامت کے دن اسی کے ساتھ اٹھایا جائے گا اور اس کا حساب و کتاب بھی اسی قوم کے جیسا ہوگا اگرچہ اس کا کردار اس قوم کے لوگوں جیسا نہ ہو‘‘۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منابع:
1۔الکافی، ج 2، ص 126 - 127
2۔تاریخ بغداد، ج 5، ص 405




آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Dec 12