Thursday - 2018 Dec 13
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 196852
Published : 6/12/2018 17:2

فکر قرآنی:

’’وَ كانَ مِنَ الْكافِرينَ‘‘کا مطلب؟کیا شیطان ابتداء ہی سے کافر تھا؟

اس آیت میں لفظ ’’کان‘‘ آیا ہے لہذا جن لوگوں نے اس آیت کا ترجمہ یہ کیا ہے’’ اور شیطان کافر ہوگیا‘‘ تو انہوں نے اسے’’کان‘‘ ’’صار‘‘ کے معنٰی میں لیا ہے جس کا مطلب یہ ہے کہ پہلے وہ اپنی عبادات و ریاضات کی وجہ سے ملائکہ کی صفوں تک پہونچنے میں کامیاب ہوگیا تھا لیکن جیسے ہی اس نے آدم علیہ السلام کے سامنے سجدہ کرنے سے انکار کردیا وہ کافر بن گیا چونکہ آدم علیہ السلام کو سجدہ درحقیت خدا کو سجدہ تھا چونکہ اسی نے تو سجدہ کرنے کا حکم دیا تھا۔لیکن جن لوگوں نے اس آیت کا ترجمہ یہ کیا کہ’’ اور وہ تو تھا ہی کافروں میں سے‘‘ تو انہوں نے یہ ترجمہ اس وجہ سے کیا ہے چونکہ ،شیطان کے اس انکار نے اس کی ماہیت اور حقیقت کو گویا اس طرح تبدیل کردیا اور اتنا پکا کافر بن گیا جیسے وہ کبھی ایمان لایا ہی نہیں تھا۔

ولایت پورٹل: قرآن مجید ابلیس کے بارے میں فرماتا ہے: وَ كانَ مِنَ الْكافِرينَ۔قرآن مجید کا ترجمہ کرنے والے اس آیت کا دو طرح سے ترجمہ کرتے ہیں:
۱۔اور شیطان تو تھا ہی کافروں میں سے۔
۲۔اور شیطان کافر ہوگیا۔
اب سوال یہ ہے کہ اگر شیطان کافر تھا تو اسے ملائکہ کی صفوں میں جگہ کیسے ملی؟ اور اگر پہلے کافر نہیں تھا تو کیا صرف آدم علیہ السلام کو سجدہ نہ کرنے کے جرم میں وہ کافر بن گیا۔
قارئین کرام! اس شبہ کا صحیح جواب پانے کے لئے ہمیں ایک بار ان آیات کی طرف توجہ کرنا ہوگی جو فرشتوں کا آدم علیہ السلام کو سجدہ کرنے کے بارے میں ہیں۔
چنانچہ جب اللہ نے آدم علیہ السلام کی تخلیق فرمائی اور ان کا تعارف زمین پر اپنے خلیفہ کے طور پر کروایا:’’ وَ إِذْ قالَ رَبُّکَ لِلْمَلائِکَةِ إِنِّي جاعِلٌ فِي الْأَرْضِ خَليفَةً‘‘۔(سورہ البقرۃ:۳۰)۔ اور جب تیرے رب نے ملائکہ سے کہا کہ میں زمین پر ایک خلیفہ بنانے والا ہوں۔ تو فرشتوں نے سوال کیا کہ پروردگارا! اگر تیرا مقصد اپنی بندگی اور اطاعت ہے تو ہم ہیں۔ہمیں تیرا خلیفہ ہونا چاہیئے۔ لیکن قدرت خدا کو کچھ اور ہی منظور تھا لہذا اسی بنیاد پر فرشتوں کا امتحان ہونا قرار پایا۔
پھر خداوند عالم نے فرشتوں سے فرمایا اگر تم سچ کہتے ہو (کہ تم خلافت کے زیادہ حقدار ہو) تو مجھے ان اشیاء اور موجودات کے نام بتاؤ جنہیں دیکھ رہے ہو اور ان کے اسرار اور کیفیات کو بیان کرو لیکن فرشتے جو اتنا علم نہ رکھتے تھے اس امتحان میں پیچھے رہ گئے لہذا جواب میں کہنے لگے خداوندا: تیری ذات پاک ہے۔ ہمیں اس کے سوا جو تو نے ہمیں تعلیم دیا ہے (سکھایا ہے) اور مزید کچھ علم نہیں ہے۔ بے شک تو بڑا علم والا اور بڑی حکمت والا ہے۔ (سورہ بقرہ:۳۲)۔
جب فرشتوں نے جناب آدم(ع) کے علم کا اعتراف کرلیا تو حکم ہوا’’اسْجُدُوا لِآدَمَ فَسَجَدُوا إِلاَّ إِبْليسَ أَبى وَ اسْتَكْبَرَ وَ كانَ مِنَ الْكافِرينَ (سورہ البقره :34)آدم کو سجدہ کرو پس سب سجدہ میں گرگئے لیکن ابلیس نے انکار کیا اور تکبر برتا وہ تو تھا ہی کافروں میں سے۔
اب اس تمہید کے بعد ہم اس آیت کی طرف آتے ہیں، اس آیت میں لفظ ’’کان‘‘ آیا ہے لہذا جن لوگوں نے اس آیت کا ترجمہ یہ کیا ہے’’ اور شیطان کافر ہوگیا‘‘ تو انہوں نے اسے’’کان‘‘ ’’صار‘‘ کے معنٰی میں لیا ہے جس کا مطلب یہ ہے کہ پہلے وہ اپنی عبادات و ریاضات کی وجہ سے ملائکہ کی صفوں تک پہونچنے میں کامیاب ہوگیا تھا لیکن جیسے ہی اس نے آدم علیہ السلام کے سامنے سجدہ کرنے سے انکار کردیا وہ کافر بن گیا چونکہ آدم علیہ السلام کو سجدہ درحقیت خدا کو سجدہ تھا چونکہ اسی نے تو سجدہ کرنے کا حکم دیا تھا۔
لیکن جن لوگوں نے اس آیت کا ترجمہ یہ کیا کہ’’ اور وہ تو تھا ہی کافروں میں سے‘‘ تو انہوں نے یہ ترجمہ اس وجہ سے کیا ہے چونکہ ،شیطان کے اس انکار نے اس کی ماہیت اور حقیقت کو گویا اس طرح تبدیل کردیا اور اتنا پکا کافر بن گیا جیسے وہ کبھی ایمان لایا ہی نہیں تھا۔

 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Dec 13