سه شنبه - 2019 مارس 26
ہندستان میں نمائندہ ولی فقیہ کا دفتر
Languages
Delicious facebook RSS ارسال به دوستان نسخه چاپی  ذخیره خروجی XML خروجی متنی خروجی PDF
کد خبر : 72009
تاریخ انتشار : 30/3/2015 17:43
تعداد بازدید : 19

کشمیر: طوفانی بارشیں، دس افراد مٹی کے تودوں میں دفن

ہندوستان کے زیر انتظام کشمیر میں شدید بارشوں کے نتیجے میں سیلاب اور زمین کھسکنے کےواقعات سامنے آرہے ہیں۔
سری نگر سے موصولہ اطلاعات کے مطابق دس افراد زمین کھسکنے کی وجہ سے مٹی کے تودوں تلے دفن ہوگئے ہیں۔ پولیس کے مطابق چدورا علاقے سے سیکڑوں لوگوں کو محفوظ مقامات پر پہنچا دیا گیا ہے جہاں شدید بارشوں اور زمین کھسکنے کی وجہ سے کم از کم چار گھر پہاڑ سے گرنے والے مٹی کے تودوں تلے دب گئے ہیں۔ چدورا کا علاقہ حالیہ سیلابوں اور شدید بارشوں سے بری طرح متاثر ہوا ہے۔ گذشتہ ستمبر میں اسی علاقے میں شدید سیلاب میں سیکڑوں افراد جاں بحق ہوگئے تھے۔ بتایا جاتا ہے اس علاقے میں زمین کھسکنے کے واقعے میں دس سے بارہ افراد مٹی میں دب گئے ہیں۔ چدورا علاقے کے آئی جی پولیس نے صحافیوں سے گفتگو میں کہا ہے کہ دو سو سینتیس خاندانوں کو محفوظ مقامات پر پہنچا دیا گیا ہے اور ان خاندانوں میں زیادہ تر کا تعلق چدورا سے ہے۔ چدورا کا علاقہ سری نگر سے پندرہ کلومیٹر کے فاصلے پر مغرب میں واقع ہے۔ ریاستی حکومت نے جہلم ندی میں طغنیانی کے پیش نظر اس ندی کے کناروں پر بسنے والے افراد کو وارننگ دی تھی کہ وہ جلد از جلد محفوظ مقامات پر منتقل ہوجائیں۔ حکومت نے سری نگر میں ریلیف کیمپ بھی لگائے ہیں۔ جہلم ندی کی سطح خطرناک حد تک بڑھ چکی ہے۔ گذشتہ برس کے بھیانک سیلابوں کے بعد حکومت پر الزام لگائے گئے تھے کہ اس نے سیلابوں کے خطروں سے نمٹنے کے لئے پیشگی انتظامات نہیں کئے تھے۔ دوہزار چودہ کے سیلاب میں تقریبا تین سو افراد جاں بحق اور دسیوں ہزار افراد بے گھر ہوگئے تھے۔ سیلاب سے تقریبا سولہ ارب ڈالر کا نقصان ہوا تھا۔ پریس ٹرسٹ آف انڈیا کے مطابق اسکول بند کردیئے گئے ہیں اور اسکولوں اور یونیورسٹیوں کے امتحانات ملتوی کردیئے گئے ہیں۔


نظر شما



نمایش غیر عمومی
تصویر امنیتی :