Wed - 2018 Nov 14
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 73162
Published : 18/4/2015 21:32

دہشت گردی سے مقابلہ ترجیحات میں شامل کیا جائے

اسلامی جمہوریہ ایران کے صدر نے کہا ہے کہ دہشت گردی کے علل و اسباب کا مقابلہ، ترجیحات میں شامل ہونا چاہئے سحر عالمی نیٹ ورک کی رپورٹ کے مطابق ڈاکٹر حسن روحانی نے کہا ہے کہ دہشت گردی کی جڑوں کو ختم کرنے، عدم واقفیت کی بناپر جوانوں کی ان گروہوں میں شمولیت کی روک تھام کے سلسلے میں مشترکہ طور پر قدم اٹھانے کی ضرورت ہے۔ ڈاکٹر حسن روحانی نے ہفتے کے روز آسٹریلیا کی وزیر خارجہ "جیولی ایزابل بشپ" سے تہران میں ملاقات کے دوران کہا کہ دہشت گردی، علاقے اور بشریت کے لئے بہت بڑا خطرہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام حکومتوں اور قوموں کو چاہئے کہ دہشت گردی اور بے گناہ انسانوں پر ہونے والے ظلم و ستم کے مقابلے میں بروقت اور یکساں ردعمل ظاہر کریں ۔صدر مملکت نے جو ایران کی قومی سلامتی کی اعلی کونسل کے سربراہ بھی ہیں مختلف مسائل کے حل کے لئے سیاسی اور منطقی بات چیت پرزوردیا اور کہا کہ یمن کے بحران کی راہ حل بھی سیاسی ہے۔ ڈاکٹر حسن روحانی نے اس بات پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہ یمن کے مسئلے کے حل کے لئے عالمی برادری میں کوئی معقول تحرک نظر نہیں آرہا ہے کہا کہ اس وقت یمن کے لئے حتی دوائیں اور غذائی اشیاء بھی ارسال کرنے میں بہت زیادہ دشواریا ں پیش آرہی ہیں۔ ڈاکٹر روحانی نے ایران اور گروپ پانچ جمع ایک کے درمیان، جامع ایٹمی سمجھوتہ کے بارے میں کہا کہ ایران اپنی پرامن ایٹمی سرگرمیاں آئی اے ای اے کے زیر نگرای انجام دے رہا ہے اور اس میں کوئی شک نہیں کہ اگر حتمی سمجھوتہ ہوجاتا ہے تو یہ ایران، گروپ پانچ جمع ایک کے ممالک اور پورے علاقے بلکہ پوری دنیا کے فائدے میں ہوگا۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Nov 14