Thursday - 2018 Nov 15
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 73892
Published : 29/4/2015 17:48

خطے کو درپیش دہشت گردی کے مقابلے پر تاکید

اسلامی جمہوریہ ایران اور شام کے وزرائے دفاع نے علاقے میں دہشت گردی کے ٹھوس اور ہمہ گیر مقابلے پر زور دیا ہے- ہمارے نمائندے کی رپورٹ کے مطابق ایران کے وزیر دفاع جنرل حسین دہقان نے منگل کے روز تہران میں شام کے وزیر دفاع جنرل فہد جاسم الفریج سے ملاقات میں شام کے بحران کی طرف اشارہ کرتے ہوئے ملت شام پر مسلط کردہ تکفیری اور صیہونی جنگ کو امریکہ اور صیہونی حکومت کی مشترکہ اسٹریٹجی قرار دیا اور کہا کہ اس جنگ کا مقصد صیہونی حکومت کے لیے مستقل سیکورٹی فراہم کرنا، اسلامی ممالک کو کمزور اور تقسیم کرنا، مشرق وسطی کے نقشے کو تبدیل کرنا، اسلامی بیداری کی لہر کا مقابلہ کرنا اور آخرکار علاقے پر مکمل تسلط حاصل کرنا ہے- انھوں نے تشدد پسندی اور دہشت گردی کے ناسور کا مقابلہ کرنے کے لیے ایک طاقتور علاقائی اتحاد کے قیام کو ضروری قرار دیا اور کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران اس ناسور کو ختم کرنے کے لیے ہمیشہ شامی قوم اور حکومت کے ساتھ کھڑا ہو گا- ایرانی وزیر دفاع نے مزاحمتی محاذ کی فرنٹ لائن پر ہونے کی حیثیت سے شام کی اہمیت اور کردار کے پیش نظر کہا کہ اسلامی ممالک کی جانب سے شام کی حمایت علاقے میں امن و استحکام کی تقویت کا باعث بنے گی- جنرل حسین دہقان نے یمن پر سعودی عرب کے حملے اور عراق میں دہشت گردانہ حملوں کو امریکہ اور صیہونی کی مشترکہ اسٹریٹجی سے ہم آہنگ قرار دیا اور کہا کہ بلاشبہ یہ مذموم سازش تیار کرنے والے، علاقے کی قوموں کی مزاحمت و استقامت اور دہشت گردی کے خلاف، بعض حکومتوں کے اتحاد سے اپنے مذموم مقاصد حاصل نہیں کر سکیں گے- شام کے وزیر دفاع جنرل فہد جاسم الفریج نے بھی اس ملاقات میں ایران کی قوم اور حکومت کی قدردانی کرتے ہوئے اسلامی جمہوریہ ایران کو مزاحمت کا اصلی ستون اور مرکز قرار دیا اور کہا کہ اگر اسلامی جمہوریہ ایران کی حمایت نہ ہوتی تو یہ عظیم کامیابیاں حاصل نہیں ہو سکتی تھیں- انھوں نے ایران اور شام کے تعلقات کو اسٹریٹجک بتایا اور کہا کہ یہ ہمیشہ فروغ پاتے رہے ہیں، انہوں نے کہا کہ ایران، شام، عراق اور لبنان میں مزاحمت کے محاذ نے دشمنوں کے تمام غیر انسانی منصوبوں کو ناکام بنا دیا ہے-


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Thursday - 2018 Nov 15