Wed - 2018 Oct. 17
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 76915
Published : 12/6/2015 21:30

بحرین: شیخ علی سلمان کی رہائی کے لئے مظاہرے

بحرین میں شاہی حکومت کے خلاف احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے اور جمعرات کو بھی لوگوں نے سڑکوں پر نکل کر احتجاجی مظاہرے کئے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق بحرین میں جمعیت الوفاق کےسربراہ شیخ علی سلمان کے بارے میں حتمی عدالتی فیصلے کی تاریخ نزدیک آتے ہی ملک بھر میں وسیع پیمانے پر مظاہروں کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے۔ اس سلسلے میں جمعرات کو بھی مظاہرے کئے گئے جس میں مظاہرین نے شیخ علی سلمان کی گرفتاری کے خلاف نعرے لگائے- منامہ میں ہونے والے مظاہرے میں لوگوں نے شیخ علی سلمان کے ساتھ اظہار یکجہتی اور ان کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا- مظاہرین نے شیخ علی سلمان کے خلاف چلنے والے مقدمے کو بحرینی عوام کے خلاف مقدمہ قرار دیا- بحرینی عوام نے شیخ علی سلمان کی رہائی کے علاوہ کسی اور فیصلے کو قبول کرنے سے انکار کردیا اور کہا کہ شیخ علی سلمان پر عائد سرکاری الزامات سیاسی اور بے بنیاد ہیں- ادھر بحرین کے وکلا اور ماہرین قانون کی بعض تنظیموں نے شیخ علی سلمان کے خلاف مقدمے کو محض سیاسی اقدام بتاتے ہوئے اسے منصفانہ مقدمے کے بین الاقوامی اصولوں کے منافی قرار دیا ہے- قابل ذکر ہے کہ بحرینی عدالتوں نے گزشتہ سال بحرین کے سیاسی کارکنوں کو مجموعی طور پر گیارہ ہزار سال قید کی سزا سنائی تھی- دریں اثنا جمعیت الوفاق نے اپنی سالانہ رپورٹ میں اعلان کیا ہے کہ بحرینی پولیس نے دوہزار چودہ میں ایک ہزار سات سو اکتالیس سیاسی کارکنوں کو گرفتار کیا ہے- گرفتار ہونے والے ان افراد میں دوسو پینتالیس بچے اور اکتیس خواتین شامل ہیں جبکہ گرفتاری کے آٹھ سو بارہ معاملات میں عوام کے گھروں پر حملہ کیا گیا- اس رپورٹ کے مطابق جیلوں میں قیدیوں کے ساتھ بدسلوکی اور ایذارسانی کے تین سو نوے واقعات ہوئے جبکہ چوہتر واقعات ایسے بھی رونما ہوئے جن میں قیدی، علاج معالجے سے بھی محروم تھے- علاوہ ازیں مظاہرین کے خلاف جنگی اور چھّرے والی گولیوں کا آزادانہ استعمال بھی کیا گیا ہے- تین سو نوے بحرینی چھّرے والی گولیاں جبکہ بعض دیگر جنگی گولیاں لگنے سے زخمی ہوئے ہیں-دوہزار گیارہ سے اب تک چار ہزار بحرینی شہری آل خلیفہ حکومت کے فوجیوں کے حملوں میں زخمی ہوچکے ہیں-


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Oct. 17