Monday - 2018 Sep 24
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 80469
Published : 9/8/2015 18:58

ایران کی ایٹمی سرگرمیاں تجارتی بنیادوں پر استوار

اسلامی جمہوریہ ایران کے ایٹمی توانائی کے ادارے کے سربراہ نے کہا ہے کہ ایران کی ایٹمی سرگرمیاں تجارتی بنیادوں پر استوار ہیں۔ ہمارے نمائندے کی رپورٹ کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران کے ایٹمی توانائی کے ادارے کے سربراہ علی اکبر صالحی نے اتوار کے دن ایران کے ایٹمی معاہدے کے موضوع پر ہونے والے ایک اجلاس میں کہا کہ ایران کی ایٹمی سرگرمیاں تجارتی بنیادوں پر استوار ہیں۔ علی اکبر صالحی نے کہا کہ ویانا ایٹمی معاہدے سے قبل ایران پر پابندیاں تھیں، ایران کے ساتھ کسی بھی طرح کا ایٹمی تعاون نہیں کیا جاتا تھا اور ایران نے پرامن ایٹمی ٹیکنالوجی میں جس قدر ترقی کی ہے وہ ایرانی ماہرین اور سائنس دانوں کی محنتوں کا نتیجہ ہے۔ علی اکبر صالحی نے ایران کی بعض ایٹمی سرگرمیاں محدود ہونے پر کی جانے والی بعض تنقیدوں کے جواب میں کہا کہ ویانا ایٹمی معاہدے کے بعد کہا جا رہا ہے کہ بعض شعبوں میں ایران کی پرامن ایٹمی سرگرمیاں محدود یا سست روی کا شکار ہو گئی ہیں لیکن ایرانی قوم کو اس بات کا یقین رکھنا چاہئے کہ ریڈ لائنز کے اندر رہتے ہوئے اس طرح کام کیا گیا کہ پابندیاں ختم ہو جائیں۔ اسلامی جمہوریہ ایران کے ایٹمی توانائی کے ادارے کے سربراہ علی اکبر صالحی نے یہ بات زور دے کر کہی کہ یورپی ممالک کہتے تھے کہ ایران کو فوجی مقاصد کے لئے ایٹمی سرگرمیوں سے اجتناب کرنا چاہئے اور انہوں نے اپنی تشویشوں کو دور کرنے کے لئے ایران پر پابندیاں لگائی ہیں حالانکہ ایران نے بارہا کہا ہے کہ اس کی ایٹمی سرگرمیاں نہ تو پہلے کبھی فوجی مقاصد کے لئے تھیں اور نہ ہی اب ہیں۔ 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Monday - 2018 Sep 24