Saturday - 2018 مئی 26
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 83494
Published : 15/9/2015 20:5

مشترکہ جامع ایکشن پلان پر عمل درآمد میں چین کا کردار اہم: جواد ظریف

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے مشترکہ جامع ایکشن پلان پر عمل درآمد میں چین کے کردار کو اہم قرار دیا ہے۔
اسنا خبر رساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق محمد جواد ظریف نے پیر کی شام کو چین کے دارالحکومت بیجنگ پہنچنے پر نامہ نگاروں سے گفتگو کرتے ہوئے ایران اور گروپ پانچ جمع ایک کے ایٹمی مذاکرات میں چین کے کردار کو اہم قرار دیا اور کہا کہ چین کو مشترکہ جامع ایکشن پلان پر عمل درآمد کے سلسلے میں بھی اپنا کردار ادا کرنا چاہئے-
 ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ وہ چینی حکام کے ساتھ ہونے والی ملاقاتوں میں اس سلسلے میں بات چیت کریں گے- انہوں نے کہا کہ چین کے ساتھ اسلامی جمہوریہ ایران کے وسیع سیاسی و اقتصادی تعلقات ہیں اور علاقائی اور بین الاقوامی تعلقات میں بھی دونوں ممالک مشترکہ نظریات کے حامل ہیں-
 ان کا کہنا تھا کہ تہران اور بیجنگ کو مشترکہ مفادات اور چیلنجوں کا سامنا ہے- انہوں نے انتہا پسندی، فرقہ پرستی اور دہشت گردی کے خطرات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ تہران اور بیجنگ ان خطرات سے مقابلے کے سلسلے میں مشترکہ موقف رکھتے ہیں- 
محمد جواد ظریف نے کہا کہ ایران اور چین کا تعاون بنیادی اور اساسی نوعیت کا ہے- انہوں نے شاہراہ ریشم کے عظیم منصوبے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ منصوبہ دو طرفہ دلچسپی کا منصوبہ ہے اور وسطی ایشیا کے ذریعہ چین سے خلیج فارس تک کی رابطہ شاہراہوں کی تعمیر کے  اس منصوبے میں مشترکہ طور پر کام کیا جاسکتا ہے- 
ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف بیجنگ میں قیام کے دوران اپنے چینی ہم منصب کے علاوہ چین کے وزیر اعظم  اور دیگر اعلی حکام سے بھی ملاقات کریں گے- وزیر خارجہ محمد جواد ظریف چین کا دورہ مکمل کرکے بنگلہ دیش کا دورہ کریں گے-


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Saturday - 2018 مئی 26