Friday - 2018 july 20
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 84097
Published : 26/9/2015 18:43

سانحہ منی میں آل سعود کی نا اہلی ثابت ہوگئی ہے، علامہ جاوید اکبر ساقی

ممتاز اہلسنت عالم دین اور تحریک وحدت اسلامی پاکستان کے سربراہ علامہ جاوید اکبر ساقی نے سعودی حکام پر حج کے انتظامات کے حوالے سے لاپرواہی برتنے کا الزام عائد کیا ہے۔
اسلام آباد میں فارس نیوز ایجنسی کے نمائندے سے بات چیت کرتے ہوئے علامہ جاوید اکبر ساقی کا کہنا تھا کہ اگر سعودی حکومت اسلامی ملکوں پر لشکر کشی کے بجائے حج کے انتظامات پر توجہ دیتی تو حجاج بیت اللہ الحرام کی جانوں کو خطرہ لاحق نہ ہوتا۔ 
انہوں نے کہا کہ کرین گرنے کا واقعہ اور منی کا سانحہ آل سعود کی نااہلی کو ثابت کرنے کے لئے کافی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسلامی ممالک آل سعودی کے جرائم کی حمایت کرنے کے بجائے مسلمانوں کے عظیم ترین اجتماع میں شریک حاجیوں کی جان و مال کے تحفظ کے لئے آگے آئیں۔
علامہ جاوید اکبر ساقی نے کہا کہ سعودی حکام سیاسی مصحلت کی وجہ سے خود کو خادم الحرمین کہتے لیکن حرم شریف کے زائرین کی سہولتوں کے لئے کوئی کام نہیں کرتے اور ان کی یہ لاپراوہی ہر سال حج کے موقع واضح ہوجاتی ہے۔
انہوں نے اس جانب اشارہ کرتے ہوئے کہ حرمین شریفین کو آل سعود سے خطرہ لاحق ہے، یہ بات زور دیکر کہی کہ مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ کسی ایک ملک یا قوم کی نہیں بلکہ پوری امت مسلمہ کی ملکیت ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ آل سعودی کو سانحہ منی پر نہ صرف معافی مانگنی چاہیے بلکہ حج کے انتظامات کو اسلامی ملکوں کے نمائندوں کے سپرد کردینا چاہیے۔ 
پاکستان کے جید اہلسنت عالم علام جاوید اکبر ساقی نے کہا کہ حج کے انتظامات کے حوالے سے آل سعود کی نااہلی پوری طرح واضح ہوگئی ہے بنا برایں اسلامی ملکوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ ایسے حادثات کی روک تھام کے لیے قدم آگے بڑھاہیں۔ 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Friday - 2018 july 20