Tuesday - 2018 Sep 25
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 85997
Published : 26/10/2015 13:36

افغانستان کے صوبہ جوزجان میں جنرل دوستم اور طالبان کے درمیان شدید لڑائی

طالبان گروہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ افغانستان کے نائب صدر جنرل عبدالرشید دوستم کی قیادت میں، صوبہ جوزجان میں افغان سیکورٹی فورسز کے ساتھ اس گروہ کی لڑائی جاری ہے-

ہماری پشتو سروس کی رپورٹ کے مطابق طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے اتوار کو اس بات کا دعوی کیا ہے کہ طالبان گروہ نے شمالی افغانستان کے صوبہ جوزجان کے خوماب علاقے میں جنرل دوستم کی فوج کے ٹھکانوں پر حملے کئے ہیں جس کے نتیجے میں انتیس افغان فوجی ہلاک اور زخمی ہوگئے- 

طالبان کے ترجمان نے کہا کہ ہلاک ہونے والوں میں جنرل دوستم کی فوج کے پانچ کمانڈر بھی شامل ہیں جبکہ طالبان کے بھی سات افراد مارے گئے ہیں-

اس سے قبل ذبیح اللہ مجاہد نے خوماب کے علاقے میں جنرل دوستم کی فوج کے اکتیس افراد کی ہلاکت کی خبر دی تھی- ایک اور خبر میں طالبان کے ترجمان نے کہا ہے کہ اس گروہ نے صوبہ فاریاب کے علاقے غورماچ میں جنرل دوستم کی فوج کو محاصرے میں لے لیا ہے-
یہ ایسی حالت میں ہے کہ افغانستان کی وزارت دفاع کے ترجمان نے ہفتے کے روز اعلان کیا ہے کہ اس ملک کی فوج نے صوبہ فاریاب کے غورماچ علاقے کو طالبان کے قبضے سے آزاد کرالیا ہے-    
خیال رہے کہ طالبان جنگجووں نے ایک ماہ قبل افغانستان کے ضلع قندوز پر قبضہ کرلیا تھا اور افغان فورسز تین ہفتوں کی مسلسل کوششوں کے بعد قندوز سے طالبان کا مکمل کنٹرول ختم کرنے میں کامیاب ہوئی تھیں۔
رواں سال میں اب تک طالبان کے حملوں میں سیکڑوں افغان سیکیورٹی اہلکار ہلاک اور ہزاروں زخمی ہوچکے ہیں۔


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Tuesday - 2018 Sep 25