Wed - 2018 Sep 19
Languages
دوستوں کو بھیجیں
News ID : 86098
Published : 28/10/2015 9:1

سعودی حکومت کے تخریبی منصوبوں اور دہشت گردی کی حمایت کی مذمت

ایران کے سابق وزیر خارجہ اور رہبر انقلاب اسلامی کے مشیر اعلی ڈاکٹر علی اکبر ولایتی نے اسلامی دنیا میں سعودی حکومت کے تخریبی منصوبوں اور دہشت گردی کی حمایت کے نتائج کی جانب سے خبردار کیا ہے۔

ڈاکٹر علی اکبر ولایتی نے منگل کو روسی صدر کے سابق مشیر سرگئی ایوانف سے ملاقات کے بعد صحافیوں سے گفتگو میں کہا کہ سعودی حکومت امریکا اور مغرب کی طرف سے، اسلامی ملکوں میں دہشت گردی کی حمایت اور تخریبی منصوبوں پر عمل کررہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ہم دیکھ رہے ہیں کہ یمن پر کسی جواز کے بغیر وحشیانہ حملے اور بے گناہ یمنی شہریوں کو خاک و خون میں غلطاں کرنے کا سلسلہ جاری ہے اور امریکا اپنی خاموشی سے عملی طور پر اس کی حمایت کررہا ہے۔

ایران کے سابق وزیر خارجہ علی اکبر ولایتی نے روسی صدر کے سابق مشیر سرگئی ایوانف کے ساتھ میٹنگ میں وسطی ایشیا میں دہشت گردوں کے منصوبوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ان منصوبوں کے سلسلے میں لاتعلق نہیں رہا جاسکتا۔ انھوں نے کہا کہ دہشت گرد وسطی ایشیا میں اپنا اثربڑھانا چاہتے ہیں ۔ انھوں نے کہا کہ اس سلسلے میں ایران، روس اور چین لاتعلق نہیں رہ سکتے۔

ڈاکٹر ولایتی نے کہا کہ منشیات کی اسمگلنگ اور دہشت گردی دونوں ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں ، انہیں ایک دوسرے سے الگ نہیں کیا جاسکتا اور سب کو مل کران دونوں یعنی دہشت گردی اور منشیات کی اسمگلنگ کے خلاف جدوجہد کرنی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ اس علاقے میں دہشت گردی پر سب کی توجہ ہے لیکن اس بات پر بھی توجہ ضروری ہے کہ منشیات کی اسمگلنگ دہشت گردوں کی آمدنی کا ایک بڑا ذریعہ ہے۔

خارجہ امور میں رہبر انقلاب اسلامی کے مشیر ڈاکٹر ولایتی نے کہا کہ امریکا نے افغانستان پر اپنی چڑھائی کا ایک مقصد منشیات کا خاتمہ بتایا تھا لیکن نہ صرف یہ کہ اس نے افغانستان میں منشیات کی پیداوار اور وہاں سے دوسرے ملکوں کے لئے اس کی اسمگلنگ کو روکنے کے لئے کچھ نہیں کیا بلکہ اس کے تسلط کے دور میں افغانستان میں منشیات کی پیداوار اور اسمگلنگ میں اضافہ ہوا ہے۔ 


آپکی رائے



میرا تبصرہ ظاہر نہ کریں
تصویر امنیتی :
Wed - 2018 Sep 19